Panama Papers

The Panama Papers are 11.5 million leaked documents that detail financial and attorney–client information for more than 214,488 offshore entities.  The documents, which belonged to the Panamanian law firm and corporate service provider Mossack Fonseca, were leaked in 2015 by an anonymous source, some dating back to the 1970s. The leaked documents contain personal financial information about wealthy individuals and public officials that had previously been kept private. While offshore business entities are legal, reporters found that some of the Mossack Fonseca shell corporations were used for illegal purposes, including fraud, tax evasion, and evading international sanctions.

“John Doe”, the whistleblower who leaked the documents to German journalist Bastian Obermayer from the newspaper Süddeutsche Zeitung (SZ), remains anonymous, even to the journalists on the investigation. “My life is in danger”, he told them.  In a May 6 statement, John Doe cited income inequality as the reason for his action, and said he leaked the documents “simply because I understood enough about their contents to realise the scale of the injustices they described”. He added that he has never worked for any government or intelligence agency. He expressed willingness to help prosecutors if immune to prosecution. After SZ verified that the statement did come from the Panama Papers source, the International Consortium of Investigative Journalists (ICIJ) posted the full document on its website.
Because of the amount of data, SZ asked the ICIJ for help. Journalists from 107 media organizations in 80 countries analyzed documents detailing the operations of the law firm. After more than a year of analysis, the first news stories were published on April 3, 2016, along with 150 of the documents themselves. The project represents an important milestone in the use of data journalism software tools and mobile collaboration. The documents were quickly dubbed the Panama Papers. The Panamanian government strongly objects to the name; so do other entities in Panama and elsewhere. Some media outlets covering the story have used the name “Mossack Fonseca papers”.

 

In addition to the much-covered business dealings of British prime minister David Cameron and Icelandic prime minister Sigmundur Davíð Gunnlaugsson, the leaked documents also contain identity information about the shareholders and directors of 214,000 shell companies set up by Mossack Fonseca, as well as some of their financial transactions. Much of this information does not show anything more than prudent financial management. It is generally not against the law (in and of itself) to own an offshore shell company, although offshore shell companies may sometimes be used for illegalities.
The journalists on the investigative team found business transactions by many important figures in world politics, sports and art, and many of these transactions are quite legal. Since the data is incomplete, questions remain in many other cases; still others seem to clearly indicate ethical if not legal impropriety. Some disclosures – tax avoidance in very poor countries by very wealthy entities and individuals for example – lead to questions on moral grounds. According to The Namibian for instance, a shell company registered to Beny Steinmetz, Octea, owes more than $700,000 US in property taxes to the city of Koidu in Sierra Leone, and is $150 million in the red, even though its exports were more than twice that in an average month 2012–2015. Steinmetz himself has personal worth of $6 billion. Other offshore shell company transactions described in the documents do seem to have broken exchange laws, violated trade sanctions or stemmed from political corruption, according to ICIJ reporters. For example:
Uruguay has arrested five people and charged them with money-laundering through Mossack Fonseca shell companies for a Mexican drug cartel. Ouestaf, an ICIJ partner in the investigation, reported that it had discovered new evidence that Karim Wade received payments from DP World (DP). He and his long-time friend were convicted of this in a trial that the United Nations and Amnesty International said was unfair and violated the defendants’ rights. The Ouestaf article does not address the conduct of the trial, but does say that Ouestaf journalists found Mossack Fonseca documents showing payments to Wade via a DP subsidiary and a shell company registered to the friend. Named in the leak were 12 current or former world leaders, 128 other public officials and politicians, and hundreds of other members of the elites of over 200 countries.Customers may open offshore accounts for any number of reasons, some of which are entirely legal but ethically questionable. A Canadian lawyer based in Dubai noted, for example, that businesses might wish to avoid falling under Islamic inheritance jurisprudence if an owner dies. Businesses in some countries may wish to hold some of their funds in dollars also, said a Brazilian lawyer. Estate planning is another example of legal tax avoidance.

American film-maker Stanley Kubrick had an estimated personal worth of $20 million when he died in 1999, much of it invested in the 18th-century English manor he bought in 1978. He lived in that manor the rest of his life, filming scenes from The Shining, Full Metal Jacket and Eyes Wide Shut there as well. Three holding companies set up by Mossack Fonseca now own the property, and are in turn held by trusts set up for his children and grandchildren. Since Kubrick was an American living in Britain, his estate would otherwise have had to pay taxes to both governments and might have been forced to sell the property to have the liquid assets to do so. Kubrick is buried on the grounds along with one of his daughters and the rest of his family still lives there.

Source : Wikipedia

Advertisements

انفارمیشن اور میڈیا وار : آخر روس چاہتا کیا ہے؟

روس پر الزام ہے کہ اس نے گذشتہ سال ڈیمو کریٹ پارٹی کی ای میلز افشا کر کے اور سوشل میڈیا کے ذریعے امریکی صدارتی انتخابات میں مداخلت کی۔ حالیہ برس یورپ کے کئی ملکوں میں انتخابات ہو رہے ہیں۔ ایسے میں فرانس، جرمنی اور دوسرے ملکوں کے رہنماؤں کو تشویش ہے کہ کہیں ان کے ساتھ بھی امریکہ جیسا حال نہ ہو۔ یورپ بھر کو فکر ہے کہ روس ریاستی اداروں پر سائبر حملوں، ‘جعلی خبریں’ پھیلانے اور مخالف دھڑوں کی فنڈنگ سے نتائج پر اثر انداز ہو سکتا ہے۔ یہ خطرہ کس قدر حقیقی ہے اور یہ کیا شکل اختیار کر سکتا ہے؟ کیا اس سوال کا جواب روس کے چیف آف جنرل سٹاف والیری گیراسیموف کے اس بیان میں مل سکتا ہے جو انھوں نے 2013 میں دیا تھا؟ ‘غیرفوجی ذرائع کی مدد سے سیاسی اور دفاعی اہداف کا حصول بڑھ رہا ہے، اور بسا اوقات اس کا اثر ہتھیاروں سے بڑھ کر ہوتا ہے۔’

انفارمیشن کی جنگ میں نیا کیا ہے؟

انفارمیشن یا معلومات کی جنگ کوئی نئی بات نہیں ہے۔ لیکن تنازعات پر تحقیق کے ادارے کے کیر جائلز کہتے ہیں کہ روس کی جانب سے اس جنگ میں نئے ہتھکنڈے اختیار کیے گئے ہیں۔ ‘پہلی اور دوسری چیچن جنگ میں اور جارجیا کے خلاف 2008 کی جنگ میں روس کو معلوم ہوا کہ وہ آپریشنل یا سٹریٹیجک لحاظ سے عالمی رائے عامہ اور اپنے دشمنوں کے نقطۂ نظر کو تبدیل نہیں کر سکتا، اس لیے اس نے انفارمیشن کی جنگ میں بڑی پیمانے پر تبدیلیاں کیں۔ ‘جارجیا کی جنگ میں اسے معلوم ہوا کہ عالمی رائے عامہ پر اثرانداز ہونے کے لیے اور انٹرنیٹ سے صحیح طور پر فائدہ اٹھانے کے لیے بہت بڑے پیمانے پر بھرتیوں کی ضرورت ہے تاکہ ماہرینِ لسانیات، صحافیوں، اور کسی بھی ایسے شخص کو بھرتی کیا جائے جو باہر کے ملکوں کے شہریوں سے براہِ راست بات کر سکے۔’

یورپ میں کئی سائبر حملوں کا الزام روس سے تعلق رکھنے والے گروہوں پر لگایا گیا ہے۔ 2015 میں فرانس کے ٹی وی 5 موند پر سائبر حملہ ہوا اور اس کے سسٹم تقریباً تباہ کر دیے گئے۔ اسی سال روس کے APT 28 نامی ہیکنگ گروپ نے جرمنی کی پارلیمان کے ایوانِ زیریں کا بڑے پیمانے پر ڈیٹا چوری کر کے افشا کر دیا۔ جرمنی میں داخلی انٹیلی جنس کے سربراہ نے کہا ہے کہ ستمبر 2017 کے جرمن انتخابات کو روسی سائبر حملے کا خطرہ ہے۔ ان انتخابات میں انگیلا میرکل چوتھی بار کامیابی حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ اکتوبر 2016 میں بلغاریہ میں ایک سائبر حملہ ہوا جس کو اس کے صدر نے جنوب مشرقی یورپ کا شدید ترین حملہ قرار دیا۔ اس سے قبل ایسٹونیا پر ڈی ڈی ایس حملہ ہوا جسے وزارتِ دفاع کے ترجمان نے نائن الیون کے مترادف قرار دیا۔

مخالف دھڑوں کی پشت پناہی

روس کی سینیئر سیاسی شخصیات طویل مدت سے یورپ میں یورپی یونین مخالف دھڑوں سے تعلقات رکھتی چلی آئی ہیں۔ 2014 میں فرانس میں مرین لی پین کے کٹر دائیں بازو کے دھڑے نیشنل فرنٹ کو ایک روسی بینک نے 90 لاکھ یورو کا قرض دیا۔ اب جب کہ فرانس میں صدارتی انتخابات صرف ایک ماہ دور ہیں، گذشتہ ہفتے لی پین نے روسی صدر پوتن سے ملاقات کی۔ ادھر فروری میں جرمنی کے کٹر دائیں بازو کی جماعت ‘جرمنی کے لیے متبادل’ (اے ایف ڈی) کے سربراہ نے ماسکو میں صدر پوتن کے قریبی سمجھے جانے والے ارکانِ پارلیمان سے ملاقاتیں کی۔ معاملہ صرف دائیں بازو تک محدود نہیں ہے۔ فرانس اور جرمنی دونوں میں کٹر بائیں بازو والے دھڑوں کے بارے میں بھی کہا جاتا ہے کہ ان کے روس سے روابط ہیں۔

جعلی خبریں

دشمن کو گمراہ کرنے کے لیے جان بوجھ کر غلط اطلاعات فراہم کرنا کوئی نئی بات نہیں ہے۔ لیکن جو چیز نئی ہے وہ ‘جعلی’ خبریں ہیں۔ یہ غلط اور گمراہ کن خبریں چھوٹی ویب سائٹوں یا اخباروں کی جانب سے نشر کی جاتی ہیں جن کا دعویٰ ہوتا ہے کہ وہ ‘جُھوٹے’ مین سٹریم میڈیا کے متبادل کے طور پر درست خبریں فراہم کر رہے ہیں۔ امریکی انتخابات کے دوران ایسی خبریں خاص طور پر پھیلائی گئیں، لیکن یورپی ملکوں میں بھی یہ عام ہیں۔ جب روسی فوجوں نے 2014 میں کرائمیا پر حملہ کیا تو یوکرین کے رہنماؤں کو فاشسٹ قرار دے کر مداخلت کی توجیہ فراہم کی گئی۔ اٹلی میں ریفرینڈم سے چند ہفتے قبل روس کے سرکاری ٹی وی رشیا ٹوڈے نے روم کے ایک چوک پر ہونے والا جلسہ فیس بک لائیو کے ذریعے نشر کیا۔ اس ریفرینڈم کے نتیجے میں وزیرِ اعظم میتیو رینزی کو اپنے عہدے سے ہاتھ دھونا پڑے۔

رشیا ٹوڈے نے کہا: ‘اطالوی وزیرِ اعظم کے خلاف روم میں زبردست احتجاج۔’ حالانکہ یہ جلسہ رینزی کے حق میں تھا۔ جرمنی میں ایک 13 سالہ لڑکی نے دعویٰ کیا کہ اسے کچھ لوگوں نے ریپ کیا ہے۔ روسی سرکاری ٹیلی ویژن نے یہ خبر اٹھا لی اور اسے بار بار نشر کرتا رہا۔ جرمنی میں چانسلر میرکل کے خلاف مظاہرے شروع ہو گئے۔ بعد میں پتہ چلا کہ یہ خبر جھوٹی تھی۔ یورپی یونین کو اس بات پر اتنی تشویش ہے کہ اس نے ماہرین کا ایک یونٹ تشکیل دیا ہے جسے یہ ٹاسک سونپا گیا ہے کہ وہ ‘روس کی مسلسل ڈس انفارمیشن کی مہم’ کا توڑ نکالے۔

کیا واقعی یہ سب کچھ روس کر رہا ہے؟

روس اس کی تردید کرتا ہے۔ صدر ولادی میر پوتن کہتے ہیں کہ امریکی انٹیلی جنس کی جانب سے روسی مداخلت کے الزامات مضحکہ خیز اور غیرذمہ دارانہ ہیں۔ وزیرِ خارجہ سرگے لاوروف نے تو یہ تک کہا ہے کہ یہ سب کچھ سی آئی اے کروا کر اس کا الزام روسی ہیکروں پر دھر دیتی ہے۔ لیکن کیر جائلز کہتے ہیں: ‘روس اب اپنے نقشِ قدم چھپانے میں بھی زیادہ دلچسپی نہیں دکھا رہا۔’ وہ کہتے ہیں کہ روس کی امریکی انتخابات میں مداخلت کسی حد تک کھلم کھلا تھی اور اس نے کئی درجن مغربی صحافیوں کو سینٹ پیٹرزبرگ کے مشہورِ زمانہ ٹرول فارم کا دورہ بھی کروایا تھا۔

یورپی یونین کے ایک عہدہ دار نے بی بی سی کو بتایا کہ ‘لازمی نہیں ہے کہ ہر چیز کریملن ہی سے آتی ہو۔ لیکن ایک ایسا نظام بنا دیا گیا ہے جہاں مختلف حصے تقریباً خود مختارانہ انداز میں کام کر رہے ہیں۔’ اس کے علاوہ ایسے عناصر بھی ہیں جو مالی فائدے کی خاطر ہیکنگ کرتے ہیں۔ تاہم یہ بات معنی خیز ہے کہ پروپیگنڈا کرنے والے صحافیوں کو نوازا جاتا ہے۔ چنانچہ کرائمیا کے روس کے ساتھ الحاق کی خبریں نشر کرنے والے 300 صحافیوں کو تمغے دیے گئے تھے۔

روس آخر چاہتا کیا ہے؟

بعض ماہرین کے نزدیک اس کا جواب آسان ہے، مزید طاقت۔ کارنیگی ماسکو سینٹر کے آندرے کولیسنیکوف کہتے ہیں کہ صدر پوتن اور ان کے حامیوں نے ‘مغرب کا تاثر بطور دشمن بنا رکھا ہے۔ ان کا مقصد عالمی رہنما بننا ہے، اپنی شرائط پر۔’ دوسری جانب ماریا لپ مین کہتی ہیں کہ ویسے تو روس میں مغرب مخالف تاثر حکومت نے قائم کر رکھا ہے، لیکن اس کے ساتھ ہی روس کے بطور ‘محصور قلعے’ کا تاثر بالکل بے بنیاد بھی نہیں ہے۔ وہ امریکہ اور یورپی یونین کی جانب سے روس پر عائد پابندیوں کے بارے میں کہتی ہیں کہ ان کا مقصد ‘روسی معیشت کو سزا دینا ہے۔’

سٹاک ہوم یونیورسٹی کے گونزالو پوزو مارٹن کہتے ہیں کہ روس میں پابندیوں کی کاٹ محسوس ہونے لگی ہے اور ساتھ ہی تیل کی کم ہوتی ہوئی قیمتوں نے روسی معیشت کو مزید متاثر کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ روس یورپ کے دائیں بازو کے لیے نرم گوشہ اس لیے پیدا کر رہا ہے کہ اسے پابندیوں کے خلاف لیورج کے طور پر استعمال کیا جا سکے۔ تاہم ان کا یہ بھی خیال ہے کہ روس چاہتا ہے کہ یورپی یونین زیادہ نرم ہو اور اس کا جھکاؤ مغرب کی جانب کم ہو۔ اس سے نہ صرف روس کے اثر و رسوخ میں اضافہ ہو گا بلکہ ‘اس سے روس کو اپنے سابق سوویت پڑوسیوں کے ساتھ معاملات میں نسبتاً کھلی چھٹی مل جائے گی۔’

بیکی برینفرڈ

بی بی سی نیوز

کیا پاکستان اور روس کا نیا اتحاد بن رہا ہے؟

چند روز قبل روس کے ڈپٹی چیف آف جنرل اسٹاف کرنل جنرل اسراکوف سرگی یوریوچ نے شمالی و جنوبی وزیرستان کا دورہ کیا تھا اور ان کا استقبال کور کمانڈر پشاور لیفٹیننٹ جنرل نذیر احمد نے کیا تاہم تجزیہ کار اس دورے کو پاک روس دوستی میں ہونے والی پیش رفت کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔ لیکن اگر دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کی تاریخ کو مدنظر رکھا جائے تو روسی فوجی وفد کے حالیہ دورہ پاکستان سے کوئی نتیجہ اخذ کرنا قبل از وقت ہو گا۔ افغانستان میں تعینات رہنے والے پاکستان کے سابق ملٹری اتاشی بریگیڈیئر (ر) سعد محمد نے اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ ایک دلچسپ اور غیر معمولی پیش رفت ہے، دونوں ملکوں کے درمیان عسکری تعلقات تیزی سے آگے بڑھ رہے ہیں تاہم وہ اس سطح پر نہیں پہنچے کہ ہم اسے ایک اتحاد کہہ سکیں‘۔

بریگیڈیئر سعد نے 1980 کی دہائی میں پاکستان اور روس کے درمیان رہنے والی ’پراکسی وار‘ کا بھی تذکرہ کیا جب دونوں ممالک افغانستان کی جنگ میں شریک تھے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور روس کے درمیان تعلقات میں نیا موڑ 2014 میں آیا جب روس کے وزیردفاع سرگئی شوئیگو نے نومبر میں پاکستان کا دورہ کیا تھا اور پاکستان کے ساتھ دفاعی تعاون کا معاہدہ کیا تھا۔ پاکستان اور روس کے درمیان بڑھتے ہوئے دفاعی تعاون کے حوالے سے بات کرتے ہوئے بریگیڈیئر سعد نے کہا کہ ’گزشتہ برس ہونے والی مشترکہ مشقیں دونوں ملکوں کے مشترکہ مفادات کی تازہ مثال ہے جبکہ اس کے علاوہ دونوں ملکوں کی بحری افواج نے 2014 اور 2015 میں عریبین مون سون مشقوں میں بھی حصہ لیا تھا‘۔

خیال رہے کہ گزشتہ برس ستمبر میں ہونے والی فوجی مشقوں میں پاکستان اور روس کے تقریباً 200 فوجیوں نے شرکت کی تھی، ان مشقوں کو ’دروزبھا 2016‘ کا نام دیا گیا تھا جس کا اردو ترجمہ ’دوستی‘ ہے جبکہ ان مشقوں میں پاکستان اور روس کے اسپیشل فورسز نے قریبی تعاون کا مظاہرہ کیا تھا۔ اس کے علاوہ رواں برس فروری میں ہونے والی ’امن 2017‘ بحری مشقوں میں روس کا سب سے بڑا اینٹی سب میرین جنگی جہاز ’سیورمورسک‘ بھی پاکستان آیا تھا جبکہ 2015 میں پاکستان نے روس سے ایم آئی 35 گراؤنڈ اٹیک ہیلی کاپٹرز کی خریداری کی بھی تصدیق کی تھی۔

بریگیڈیئر سعد نے اس بات کی بھی نشاندہی کی کہ اگر پاکستان اور روس کے درمیان کوئی اتحاد ہوا بھی تو وہ چین کے بغیر نہیں ہو گا کیوں کہ چین دونوں ملکوں کا مشترکہ دوست ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’پاکستان اور روس کے درمیان اتحاد کا تصور ان کے مشترکہ دوست چین کے بغیر ممکن نہیں‘۔ بریگیڈیئر سعد نے تو یہاں تک بھہ کہہ دیا کہ اس ممکنہ اتحاد میں ترکی بھی دلچسپی لے رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ’ترکی بھی اس گروپ کا حصہ بننے کا خواہاں ہے اور درحقیقت مجھے یہ معلوم ہے کہ ترک صدر طیب اردگان نے اس معاملے میں اپنی خواہش ظاہر کی ہے‘۔ بریگیڈیئر سعد کا کہنا تھا کہ ’یہ ترکی، روس، چین اور پاکستان کے درمیان چار فریقی اتحاد ہو گا جبکہ اس حوالے سے امریکا میں بہت زیادہ بے چینی ہے اور ہم اس معاملے پر امریکا کے خدشات کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا کیوں کہ وہ اس وقت افغانستان میں موجود ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں روس کی بڑھتی ہوئی دلچسپی کی وجہ خطے میں امریکا اور روس کے درمیان جاری رسا کشی ہو سکتی ہے۔ بریگیڈیئر سعد نے یاد دہانی کرائی کہ ’ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ 2016 میں افغانستان میں مفاہمتی عمل کو آگے بڑھانے کے لیے چین، پاکستان، امریکا اور افغانستان پر مشتمل چار فریقی اتحاد موجود تھا لیکن اس کے باوجود روس نے اس اتحاد سے خطرہ محسوس کرتے ہوئے افغانستان کے معاملے پر علیحدہ سے مذاکرات شروع کیے‘۔

انہوں نے کہا کہ ’جس طرح امریکا افغانستان کو اپنے زیر اثر رکھنا چاہتا ہے روس بھی افغانستان پر اپنا اثر و رسوخ بڑھانا چاہتا ہے اور پاکستان کو افغان طالبان سے ڈیلنگ کا تجربہ حاصل ہے‘۔ آخر میں بریگیڈیئر سعد نے کہا کہ ’پاکستان کی افغانستان اور طالبان کے حوالے سے تاریخ اور چین کے ساتھ دوستی روس کی پاکستان میں دلچسپی کی دو اہم وجوہات ہیں‘۔

روسی سفیر کو قتل کرنے والا ترک پولیس اہلکار کون تھا ؟

 1219_russia-3

مولود مرت التنتاش نے ترکی میں تعینات روس کے سفیر آندرے کرلوف کو ہلاک کرنے کے بعد چند سیکنڈز کے لیے ٹوٹی پھوٹی عربی میں کچھ جملوں بلند آواز میں کہے۔ انھوں نے ‘اللہ اکبر’ کا نعرہ بھی لگایا۔ پھر ترک زبان میں کہا: ‘شام کو مت بھولو، حلب کو مت بھولو۔ وہ تمام جو اس ظلم میں ملوث ہیں ان کا احتساب ہوگا۔’

انقرہ کا پولیس اہلکار

اس کی شناخت وزیرداخلہ سلیمان سوئیلو نے 22 سالہ پولیس اہلکار کے طور پر کی۔ ان کا کہنا تھا کہ التنتاش کی پیدائش 24 جون 1994 کو سوکے قصبے میں ہوئی، جو مغربی ترکی کے صوبہ آیدین میں واقع ہے، اور اس نے شمالی شہر ازمیر میں واقع پولیس کالج سے تربیت حاصل کی تھی۔ وہ ڈھائی سال سے انقرہ کی بلوہ پولیس میں کام کر رہا تھا اور حملے کے وقت بظاہر چھٹیوں پر تھا۔ تفتیش کا اس پہلو کا جائزہ لے رہے ہیں اس کا یہ عمل مغربی حلب میں تباہی کا ردعمل تھا یا وہ روس کے ساتھ تعلقات کو خراب کرنے کے کسی بڑے منصوبے کا حصہ تھا۔

غیرمصدقہ اطلاعات کے مطابق وہ نومبر میں ترکی میں ناکام بغاوت میں ملوث ہونے کے باعث کئی ہفتے ملازمت سے برطرف رہا تھا۔ حکومت نواز میڈیا میں ایک ایسی دستاویز دکھائی جا رہی ہے جس میں بغاوت کے فورا بعد وہ تین دن کے لیے رخصت پر چلا گیا تھا۔ التنتاش نے پیر کو حملے سے پہلے قریب ہی واقع ایک ہوٹل میں قیام کیا تھا جہاں اس نے شیو کی اور ٹائی سوٹ پہنا۔ نمائش میں وہ اپنا سرکاری پولیس کا شناختی کارڈ دکھا کر داخل ہوا تھا۔

مقامی وقت کے مطابق سات بج کر پانچ منٹ پر حملے سے قبل اسے سفارتکار کے پیچھے کھڑا دیکھا جا سکتا تھا۔ اس نے 11 گولیاں چلائی، نو سفارتکار پر اور دو ہوا میں۔ سفارتکار پر گولیاں چلانے کے بعد اس نے ہتھیار نہیں پھینکے اور 15 منٹ تک پولیس اور اس کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا جس کے نتیجے میں اسے ہلاک کر دیا گیا۔ اس کے فورا بعد اس کے آبائی شہر سوکے میں اس کے والد، والدہ اور بہن کو پوچھ گچھ کے لیے حراست میں لے لیا گیا۔ انقرہ کے میئر ملیح گوکچک کا کہنا تھا کہ التنتاش کا تعلق مبلغ فتح اللہ گولن سے ہوسکتا ہے تاہم گولن تحریک نے اس حملے کی مذمت کی اور حملہ آور کے ساتھ کسی بھی قسم کے تعلق کی تردید کی۔

میخائل گورباچوف : جنھوں نے ایک سلطنت کھو دی

سابق سوویت رہنما میخائل گورباچوف نے مغرب پر ‘روس کو اشتعال دلانے’ کا الزام عائد کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ سنہ 1991 سوویت یونین میں ‘دھوکہ بازی’ کی وجہ سے ٹوٹا تھا۔ ان خیالات کا اظہار سوویت یونین کے بکھرنے کے 25 سال بعد ماسکو میں بی بی سی کے سٹیو روزنبرگ کے ساتھ انٹرویو میں کیا۔

85 سالہ میخائل گورباچوف خاصے عرصے سے علیل ہیں تاہم ان کی حس مزاح اب بھی جوان ہے۔ جب ہماری ملاقات ہوئی تو انھوں نے اپنی چھڑی کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا ‘دیکھو، اب مجھے زمین پر چلنے کے لیے تین ٹانگوں کی ضرورت پڑتی ہے۔’ میخائل گوباچوف نے اس لمحے کے بارے میں بات کرنے کی ہامی بھری جس نے دنیا تبدیل کر دی، وہ دن جب سپر پاور سوویت یونین بکھر گیا۔ انھوں نے بتایا:’جو کچھ بھی سوویت یونین میں ہوا وہ میرا ڈراما تھا، اور یہ ڈراما ان سب کے لیے تھا جو سوویت یونین میں رہتے تھے۔’

 21 دسمبر 1991 کو روسی ٹی وی پر خبریں ایک ڈرامائی اعلان کے ساتھ شروع ہوئیں: ‘صبح بخیر۔ خبریں‌۔ سوویت یونین اب وجود نہیں رکھتا۔’ اس سے کچھ دن قبل روس، بیلاروس اور یوکرین کے رہنماؤں نے سوویت یونین کو تحلیل کرنے اور آزاد ریاستوں کے کامن ویلتھ فورم کے قیام کے لیے ملاقات کی تھی۔ اب مزید آٹھ سوویت ریاستوں نے اس میں شمولیت کا فیصلہ کر لیا تھا۔ ان تمام نے میخائل گورباچوف کے خلاف مزاحمت کی۔ سوویت رہنما ان تمام ریاستوں کو واحد ریاست کے طور پر یکجا رکھنے میں مشکلات کا سامنا کر رہے تھے۔ گورباچوف نے بتایا: ‘ہمارے پیچھے دھوکہ بازی تھی۔ وہ ایک سگریٹ جلانے کے لیے پورا گھر جلا رہے تھے۔ صرف طاقت کے حصول کے لیے۔ وہ جمہوری طریقے سے یہ حاصل نہیں کر سکتے تھے، چنانچہ انھوں نے جرم کیا۔ یہ بغاوت تھی۔’ 25 دسمبر 1991 کو میخائل گورباچوف نے سوویت یونین کے صدر کے طور استعفے کا اعلان کر دیا۔ کریملن میں آخری بار سوویت پرچم اتارا گیا۔

گورباچوف یاد کرتے ہیں کہ ‘ہم سب خانہ جنگی کی جانب بڑھ رہے تھے اور میں اس سے اجتناب کرنا چاہتا تھا۔ ‘معاشرے میں تقسیم اور ملک میں لڑائی سے، جیسا کہ ہمارے ملک میں تھی، ہتھیاروں، بشمول جوہری ہتھیاروں کی ریل پیل سے بہت سارے لوگ مر سکتے تھے اور بربادی ہو سکتی تھی۔ میں صرف اقتدار سے چپکے رہنے کے لیے ایسا نہیں کر سکتا تھا۔ مستعفی ہونا میری کامیابی تھی۔’ اپنے الوداعی خطاب میں گورباچوف نے دعویٰ کیا تھا کہ ان کے سماجی نظام میں اصلاحات کے پروگرام کے نتیجے میں معاشرے نے ‘آزادی حاصل کر لی ہے۔’ 25 سال بعد میں نے ان سے پوچھا کہ کیا آج روس میں اس آزادی کو خطرہ لاحق ہے؟

انھوں نے جواب دیا: ‘یہ عمل ابھی مکمل نہیں ہوا۔ ہمیں اس کے بارے میں کھل کر بات کرنے کی ضرورت ہے۔ کچھ لوگوں کے نزدیک آزادی تکلیف دہ عمل ہے۔ وہ اس کو اچھا نہیں سمجھتے۔’

میں نے پوچھا: ‘آپ کا مطلب ہے ولادی میر پوتن؟’

جس کے جواب میں گورباچوف نے کہا کہ ‘آپ کو اس کا اندازہ خود لگانا ہو گا کہ میرا مطلب کیا ہے۔ اس سوال کا جواب میں آپ پر چھوڑ دیتا ہوں۔’ بات چیت کے دوران میخائل گورباچوف نے ولادی میر پوتن کو براہ راست تنقید کا نشانہ بنانے سے گریز کیا تاہم اس حوالے سے کئی اشارے دیے کہ ان کے اور صدر پوتن کے درمیان تضادات موجود ہیں۔

‘کیا پوتن نے کبھی آپ سے مشاورت کی؟’ میں نے پوچھا۔

گورباچوف نے کہا کہ ‘وہ پہلے سے ہی سب کچھ جانتے ہیں۔ ہر کوئی اپنے انداز میں کام کرنا چاہتا ہے۔‘

 سابق سوویت رہنما جدید روس کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہیں۔ ‘بیوروکریٹوں نے قومی دولت چوری کی اور کارپوریشنیں بنانا شروع کر دی ہیں۔’ وہ مغرب کو ‘روس کو اشتعال دلانے’ کا الزام بھی عائد کرتے ہیں۔ ‘مجھے یقین ہے کہ مغربی پریس۔۔۔ جس میں آپ بھی شامل ہیں۔۔۔ کو پوتن کو بدنام کرنے اور اس سے چھٹکارا حاصل کرنے کی خاص ہدایات کی جاتی ہیں۔ مادی طور پر نہیں۔ صرف اس لیے وہ ایک طرف ہو جائیں۔ لیکن اس کے جواب میں ان کی مقبولیت 86 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ جلد ہی یہ 120 فیصد ہوجائے گی۔’

گورباچوف کا نومنتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے بارے میں کہنا تھا کہ ‘میں نے ان کی بلند و بالا عمارتیں دیکھی ہیں لیکن مجھے ان سے ملاقات کا موقع نہیں ملا۔ چنانچہ میں ان کے خیالات اور پالیسیوں کو پرکھ نہیں سکتا۔’ ان کا کہنا تھا کہ ‘لیکن یہ دلچسپ صورت حال ہے۔ روس میں ہر کسی کے خیال میں ڈیموکریٹس جیت سکتے تھے، میرا بھی یہی خیال تھا اگرچہ میں نے ایسا کہا نہیں تھا۔’

مغرب میں بہت سارے لوگ میخائل گورباچوف کو ایک ہیرو کے طور پر دیکھتے ہیں، ایک ایسا شخص جس نے مشرقی یورپ کو آزادی دی اور جرمنی کو دوبارہ متحد کیا۔ لیکن ان کے ملک میں بہت سارے لوگ گورباچوف کو ایک ایسا رہنما سمجھتے ہیں جنھوں نے ایک سلطنت کھو دی۔‘

میں نے ان سے پوچھا: ‘کیا آپ سوویت یونین کے زوال کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں؟’ وہ کہتے ہیں: ‘مجھے یہ امر پریشان کرتا ہے کہ روس میں لوگ نہیں سمجھتے کہ مجھے کیا حاصل کرنا تھا اور میں نے دراصل کیا حاصل کیا۔’

‘ملک کے لیے، اور دنیا کے لیے، سماجی نظام نے تعاون اور امن کی راہیں کھولی تھیں۔ مجھے افسوس ہے کہ اس کو اختتام تک نہیں دیکھ سکا۔’ انٹرویو کے اختتام پر میخائل گورباچوف اور میں ان کے پیانو کی طرف بڑھے۔ میں نے پیانو بجایا اور گورباچوف نے اپنے چند پسندیدہ سوویت گیت گائے۔

دنیا ایک نئی سرد جنگ کے دہانے پر؟

روس اور امریکہ کے باہمی تعلقات جس قدر خراب آج کل ہیں، سرد جنگ کے خاتمے کے بعد شاید ہی کبھی ہوئے ہوں۔ حالت یہ ہو چکی ہے کہ امریکی افسران حلب پر روس اور شامی فوجوں کے حملوں کو ‘بربریت’ کہہ رہے ہیں اور روس کو خبردار کر چکے ہیں شام میں جنگی جرائم کا ارتکاب ہو رہا ہے۔ دوسری جانب روسی صدر بھی واشنگٹن اور ماسکو کے تعلقات کی خرابی کا اظہار واضح الفاظ میں کر چکے ہیں۔ ان کا اصرار ہے کہ اوباما انتظامیہ روس سے برابری کی سطح پر بات کرنے کی بجائے اس پر ‘حکم’ چلانا چاہتی ہے۔ اس کے باوجود شام کے معاملے میں روس اور امریکہ ایک دوسرے سے رابطے میں ہیں۔ تند و تیز جملوں کے تبادلے اور الزامات کے باوجود، دونوں یہ جانتے ہیں کہ شام میں جاری ڈرامے کا جو بھی اختتام ہو گا، اس میں دونوں ممالک کو اہم کردار ادا کرنا ہوگا۔ ماسکو جانتا ہے کہ شام کی مستقل جنگ نہ امریکہ کے مفاد میں اور نہ ہی خود روس کے مفاد میں ہے۔

لیکن جب تک دونوں ممالک کے درمیان اعتماد پیدا نہیں ہوتا اور دونوں ایک دوسرے کی بات نہیں سمجھتے، اس وقت تک شام کے معاملے میں دونوں کے درمیان مذاکرات کی بنیادیں مضبوط نہیں ہو سکتیں۔ کسی کو یہ توقع نہ تھی کہ روس اور امریکہ کے تعلقات اتنے بگڑ جائیں گے، بلکہ اکثر لوگ یہ سمجھتے تھے کہ سرد جنگ کے خاتمے سے دونوں کے تعلقات ایک نئے دور میں داخل ہو جائیں گے۔ کچھ عرصے کے لیے روس نے خود کو عالمی معاملات سے پیچھے کر لیا تھا، لیکن اب وہ پورے زور و شور سے عالمی سٹیج پر واپس آ چکا ہے۔ اس کی شدید خواہش ہے کہ وہ ارد گرد کے ممالک میں اپنے کردار کو متسحکم کر لے اور اس تاثر کو غلط ثابت کرے کہ مغرب کے ہاتھوں اس کی سبکی ہوتی رہے گی۔ تو سوال پیدا ہوتا ہے حالات اس نہج تک پہنچے کیسے؟ سرد جنگ کے خاتمے کے بعد روس اور مغرب ایک نئی قسم کے تعلقات قائم کرنے میں کیوں ناکام ہوئے؟ اس کا ذمہ دار کون ہے؟ کیا امریکہ نے اپنی حدود سے تجاوز کیا اور روس کے جذبات کی پرواہ نہیں کی، یا روس ابھی تک سوویت دور کی عظمت کو سینے سے لگائے بیٹھا ہے؟ روس اور امریکہ کے معاملات اتنے خراب کیوں ہو گئے ہیں، اور کیا یہ کہنا درست ہوگا کہ دونوں میں ایک نئی سرد جنگ شروع ہو چکی ہے؟

میں یہاں ان سوالوں کے کوئی مفصل جواب نہیں دوں گا کیونکہ امریکہ اور روس کے تعلقات کی کہانی اتنی پُر پیچ ہے کہ اس موضوع سے انصاف کرنے کے لیے مجھے ٹالسٹائی کے ناول ‘وار اینڈ پِیس’ جتنی ضخیم کتاب لکھنا پڑے گی۔ بہرحال میری کوشش ہو گی کہ کچھ چیزیں آپ کے سامنے رکھوں۔ امریکہ کی جورج ٹاؤن یونیورسٹی سے منسلک تجزیہ کار پال آر پِلر کہتے ہیں کہ اس معاملے میں بنیادی غلطی خود مغرب کی ہے۔ پال آر پِلر کے خیال میں روس اور مغرب کے تعلقات خراب ہونے کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ مغرب نے روس کو ایک ایسے ملک کی حیثیت سے قبول ہی نہیں جو اپنے کاندھے سے اشتراکیت کا طوق اتار چکا تھا۔ ان کے بقول ‘ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ کمیونزم کے خاتمے کے بعد روس کو اقوام کی برادری میں خوش آمدید کہا جاتا، لیکن روس کے اس اقدام کو سراہنے کی بجائے مغرب نے روس کو سوویت یونین کا جانشین سمجھا۔ ایک ایسا ملک جس پر مغرب کبھی بھی اعتماد نہیں کر سکتا۔’

کیا مغرب نے روس کو اپنی برادری میں خوش آمدید نہ کہہ کر غلطی کی؟ آپ چاہیں تو اسے مغرب کا پہلا گناہ کہہ سکتے ہیں۔ اور پھر اس کے بعد نیٹو کا دائرہ اثر بڑھانے کے جوش میں مغرب نے پولینڈ، چیک ریپبلک اور ہنگری جیسے ان ممالک کو اس اتحاد میں شامل کر لیا جہاں قوم پرستی کی روایت بہت قدیم تھی اور یہ ممالک ماسکو کے تسلط کے خلاف ایک عرصے سے جد وجہد کر رہے تھے۔

لیکن نیٹو کا پھیلاؤ ان ممالک تک محدود نہ رہا بلکہ اس میں بلقان کی ان ریاستوں کو بھی شامل کر لیا گیا جن کے بیشتر علاقے سوویت یونین کا حصہ تھے۔ اسی لیے تجزیہ کار کہتے ہیں کہ جب جارجیا اور یوکرین کی مغربی مدار میں شمولیت کی بات ہوتی ہے، اور روس ان ممالک کے راستے میں روڑے اٹکاتا ہے تو ہمیں حیرت نہیں ہونی چاہیے۔

قصہ مختصر یہ کہ روس کو یقین ہے کہ سرد جنگ کے خاتمے کے بعد بھی مغرب نے اس کے ساتھ اچھا سلوک نہیں کیا۔ صاف ظاہر ہے مغرب اس کو اپنی نگاہ سے دیکھتا ہے اور مغرب سمجھتا ہے کہ روس ‘بزور بازو’ اپنے علاقے واپس لینا چاہتا ہے۔ مغرب کا خیال ہے کہ روسی سوچ کے اصل ترجمان صدر ولادی میر پوتن ہیں جن کا کہنا تھا کہ سوویت یونین کا ٹوٹنا 20 ویں صدی کا ‘سب سے بڑا سیاسی حادثہ’ تھا۔ اس حوالے سے امریکی ماہرین اور تجزیہ کاروں کے حلقوں میں بحث جاری ہے کہ روس کا مؤقف درست ہے یا مغرب کا۔ کیا مغرب اور روس کے تعلقات میں سرد مہری کی ذمہ داری مغرب کی اس غلطی کو سمجھنا چاہیے کہ اس نے سرد جنگ کے خاتمے کے بعد روس کو قبول نہیں کیا یا ہمیں اس کی ذمہ داری روس کی حالیہ جارحانہ کارروائیوں پر ڈالنی چاہیے جس میں وہ جارجیا، شام اور یوکرین پر چڑھائی کر چکا ہے۔

برطانوی خفیہ ادارے (ایم آئی 6) کے سابق سربراہ اور اقوام متحدہ میں برطانیہ کے سابق سفیر، سر جون سیورز کا شمار ان لوگوں میں ہوتا ہے جنھوں حالیہ برسوں میں روسی سفارتکاری کا بغور جائزہ لیا ہے۔ وہ سرد جنگ کے خاتمے کے دنوں کی بات نہیں کرتے، بلکہ ان کے خیال میں روس اور مغرب کے تعلقات کو ہمیں حالیہ برسوں کے واقعات کے تناظر میں دیکھنا چاہیے۔ گذشتہ دنوں بی بی سی سے بات کرتے ہوئے سر جون سیورز کا کہنا تھا کہ مغرب نے پچھلے آٹھ سالوں میں روس کے ساتھ سٹریٹیجک تعلقات بنانے پر خاص توجہ نہیں دی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘اگر واشنگٹن اور ماسکو یہ اصول طے کر لیتے کہ انھیں تعلقات کی اس راہ پر کیسے آگے بڑھنا ہے تو شام اور یوکرین جیسے علاقائی مسائل حل کرنا آسان ہو جاتا۔ اگر دونوں یہ تسلیم کر لیتے کہ وہ ایک دوسرے کے قائم کردہ نظاموں کو گرانا نہیں چاہتے، تو آج حالات بہتر ہوتے۔’ میں نے اس سلسلے میں کئی ماہرین سے بات کی اور انھوں نے بھی اوباما انتظامیہ کی سفارتکاری کی اس خرابی کے بارے میں اشارہ کیا کہ اس میں کوئی تنوع نہیں اور اکثر اوقات آپ کو سمجھ نہیں آتی کی امریکہ اصل میں کیا چاہتا ہے۔

ہو سکتا ہے کہ بطور واحد عالمی طاقت، امریکہ کے اثر ورسوخ میں کمی آ رہی ہوں، لیکن کبھی کبھی ایسا لگتا ہے کہ امریکہ کو سمجھ نہیں آ رہی کہ اس کے پاس جو طاقت بچی ہے وہ اسے کیسے استعمال کرے۔ کیا واقعی امریکہ کا جھکاؤ ایشیا کی جانب ہو رہا ہے اور کیا واقعی یورپ اور مشرق وسطیٰ پر اس کی توجہ کم ہوتی جا رہی ہے یا یہ محض دکھاوا ہے؟

کیا امریکہ محض نعرے ہی لگاتا رہے گا یا ان پر عمل کرنے کے لیے اپنی طاقت بھی استعمال کرے گا؟ ہم جانتے ہیں کہ شام کی حد تک تو امریکہ صرف نعرے بازی ہی کرتا رہا ہے۔ اور کیا امریکہ کو واقعی معلوم ہے کہ اس نے ماسکو کے حوالے سے جو پالیسی اپنا رکھی ہے اس کے مضمرات کیا ہوں گے۔ سنہ 2014 میں جب روس نے کرائیمیا کو اپنے علاقے میں شامل کیا تھا تو مسٹر پوتن نے روسی پارلیمان میں تقریر کرتے ہوئے کہا تھا کہ ‘اگر آپ کسی سپرنگ کو اس کی حد سے زیادہ دبائیں گے تو جب یہ واپس پلٹے گا تو آپ کو زخمی کر دے گا۔ یہ بات آپ کو یاد رکھنی چاہیے۔’ مسٹر پوتن کے اس بیان کے جواب میں قومی پالیسی کے موضوعات پر لکھنے والے امریکی جریدے ‘نیشنل انٹرسٹ’ نے اپنے ایک حالیہ شمارے میں لکھا کہ ‘سمجھداری کی بات یہ ہو گی کہ آپ سپرنگ پر دباؤ کو کم دیں اور اگر ایسا نہیں کرتے تو اپنے بچاؤ کا بندوبست ضرور کر لیں۔’ ماضی میں جو بھی غلطیاں ہوئیں اور جو بھی ان غلطیوں کا ذمہ دار تھا، حقیقت یہ ہے کہ روس اور مغرب کے تعلقات خراب ہو چکے ہیں۔ سوال پیدا ہوتا ہے کہ کیا واقعی شام کے مسئلے پر امریکہ اور روس ایک دوسرے سے لڑنے جا رہے ہیں؟ میرا خیال ہے ایسا نہیں ہوگا۔ لیکن کیا ہم ایک نئی سرد جنگ کے دھانے پر کھڑے ہیں؟

پال پِلر کہتے ہیں کہ روس اور امریکہ کے حالیہ خراب تعلقات کے حوالے سے ‘سرد جنگ’ کے الفاظ استعمال کرنا درست نہیں ہوگا۔ ان کے بقول ‘ آج عالمی سطح پر نظریات کی کوئی ایسی جنگ نہیں ہو رہی جو سرد جنگ کے دور میں تھی اور نہ ہی روس اور مغرب کے درمیان جوہری ہتھیاروں کی دوڑ ہو رہی ہے۔

‘جو چیز باقی ہے وہ اثر ورسوخ اور عالمی غلبے کی لڑائی ہے اور اس حوالے سے ہمیں یہ یاد رکھنا چاہیے کہ سوویت یونین کے ٹوٹنے کے بعد روس کمزور ہوا ہے جبکہ امریکہ کی طاقت میں کوئی کمی نہیں آئی ہے اور وہ آج بھی ایک سپر پاور ہے۔’

تو آئندہ ہو گا کیا؟

امریکہ میں صدارتی انتخابات کی مہم زوروں پر ہے اور ہو سکتا ہے کہ روس اس سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کرے۔ اور اس بات کے ثبوت موجود ہیں کہ وہ دنیا کے ان علاقوں میں جہاں تنازعات جاری ہیں، کچھ ایسا کرنے کو کوشش کر رہا ہے جو وائٹ ہاؤس کے نئے مکین کی مشکلات میں اضافہ کر دے۔

امریکہ اب عالمی طاقت نہیں رہا، اس کے بارے میں بھول جائیں

امریکہ کے دورے پر گئے ہوئے پاکستانی وزیرِ اعظم نواز شریف کے خصوصی ایلچی مشاہد حسین سید نے کہا ہے کہ کشمیر کے مسئلے پر اگر پاکستان کی نہیں سنی گئی تو اس کا جھکاؤ روس اور چین کی جانب ہو جائے گا۔ انھوں نے یہ بیان جمعرات کو واشنگٹن میں امریکی تھنک ٹینک اٹلانٹک کونسل کے ایک پروگرام کے دوران دیا۔ مشاہد حسین کا کہنا تھا کہ ‘امریکہ اب عالمی طاقت نہیں ہے۔ اس کی طاقت کم ہو رہی ہے۔ اس کے بارے میں بھول جائیں۔’ انھوں نے کہا کہ روس پہلی بار پاکستان کو ہتھیار فروخت کرنے پر راضی ہو گیا ہے جبکہ چین اس کا انتہائی قریبی دوست ہے اور امریکہ کو اس بدلتے ہوئے علاقائی توازن کو سمجھنا ہوگا۔

مشاہد حسین سید کا یہ بھی کہنا تھا کہ اوباما انتظامیہ کو یہ سمجھنا چاہیے کہ پاکستان کی مدد کے بغیر افغانستان میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔ ایک اور امریکی تھنک ٹینک سمپسن انسٹی ٹیوٹ میں بات کرتے ہوئے ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ کشمیر کا مسئلہ سلجھائے بغیر افغانستان میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔ مشاہد حسین کے مطابق انھیں امریکہ کو بتانا ہے کہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہو رہی ہے اور امریکہ کو اس مسئلے میں ثالثی کرنی چاہیے۔ مشاہد حسین سید اور رکن قومی اسمبلی شزرا منصب ان دنوں کشمیر کا مسئلہ اجاگر کرنے کے لیے امریکہ کا دورہ کر رہے ہیں۔

اسی سلسلے میں ان دونوں نے امریکی محکمہ خارجہ میں حکام سے ملاقاتیں کی ہیں اور کانگریس میں سینیٹروں سے مل رہے ہیں۔ ان خصوصی ایلچیوں کو امریکہ میں ایک سفارتی دباؤ قائم کرنے کی کوشش کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

مشاہد حسین کے ان بیانات پر امریکہ میں یہ سوال بھی اٹھ رہا ہے کہ اگر پاکستان امریکہ کو ایک کمزور ہوتی ہوئی طاقت سمجھ رہا ہے تو پھر کشمیر کے مسئلے میں اس سے مدد کیوں مانگ رہا رہا ہے؟ ادھر امریکہ کا کشمیر کے معاملے پر موقف یہی ہے کہ وہ اسے ایک دو طرفہ معاملے کے طور پر دیکھ رہا ہے اور چاہتا ہے کہ پاکستان اور انڈیا کشیدگی میں کمی کریں۔

برجیش اپادھیائے

بی بی سی اردو ڈاٹ کام، واشنگٹن

ناکام بغاوت کے بعد جنم لینے والا نیا ترکی

برادر اسلامی ملک ترکی میں گزشتہ ماہ جو ناکام فوجی بغاوت کی گئی ذرا غور کیجیے وہ اگر کامیاب ہو جاتی تو آج ترکی کی صورتحال کتنی مختلف ہوتی۔ صدر رجب طیب اردگان اپنے ہی ملک کے کسی قید خانے کی سلاخوں کی پیچھے باغی فوجیوں کی رحم و کرم پر ہوتے جو اُن کے خلاف کرپشن اور بڑے پیمانے پر مالی بدعنوانیوں کے الزامات لگا کر ’’عدنان مندریس‘‘ کی طرح پھانسی پر لٹکانے کی تیاریاں کر رہے ہوتے۔ اُن کی  اپوزیشن بغاوت کا ذمے دارطیب اردگان کی پالیسیوں اور فیصلوں کو ہی قرار دیتے ہوئے مذمتی بیانات جاری کر رہی ہوتی اور اندرونِ خانہ باغی حکمرانوں سے سازباز کرتے ہوئے نئی حکومت میں اپنے لیے کوئی جگہ تلاش کر رہی ہوتی۔ ملک کے بڑے بڑے دانشور، نقاد اور تجزیہ نگار نئے حکمرانوں کے حق میں قصیدے لکھ رہے ہوتے۔ ملک سے باہر بھی کسی ملک کے رہنما کو نئے فوجی حکمرانوں کے خلاف ایک لفظ کہنے کی بھی توفیق نہ  ہوتی۔ امریکا اور اُس کے اتحادی نئی غیرجمہوری حکومت کوخوش آمدید کہتے ہوئے اُسے ہر طرح کی امداد اور تعاون  کا یقین دلا رہے ہوتے۔ طیب اردگان کی اب تک کی ساری کامیابیوں کو ناکام حکمتِ عملی کے طور پر پیش کر رہے ہوتے۔

اُنہیں بنیاد پرست  اسلامی رہنما قرار دے کر مذمتی بیانات جاری کر رہے ہوتے۔ بلکہ اندرونِ خانہ اُنہیں سولی پہ چڑھانے کی سازشیں کر رہے ہوتے، مگر بغاوت کی ناکامی نے آج سارا نقشہ  ہی بدل کر رکھ دیا ہے۔ طیب اردگان ایک مضبوط اورطاقتور حکمران کی حیثیت سے اُبھر کے سامنے آ  چکے ہیں اور آیندہ کسی ممکنہ فوجی بغاوت کے تمام امکانات کاخاتمہ کرنے کے لیے کمربستہ  ہیں۔ فوج کوسول حکومت کے تابع کرنے  کے لیے اُنہوں نے اہم اور ٹھوس اقدامات کر لیے ہیں۔ بغاوت میں ملوث کسی فوجی کو کوئی رعایت دینے کے حق میں وہ دکھائی نہیں دیتے۔ وہ اُنہیں سخت سے سخت سزا دینے  کے لیے قانون بنا رہے ہیں۔ وہ نہیں چاہتے کہ فوج جب چاہے کسی سول حکومت کا دھڑن تختہ کر کے اُس کے صدر یا وزیرِ اعظم کو پھانسی لگا دے اور دنیا تماشہ  دیکھتی رہے۔

ترکی میں اب سے پہلے چار مرتبہ مارشل لاء لگایا جا چکا ہے اور ہماری طرح ایک منتخب وزیرِاعظم کو پھانسی پر بھی لٹکایا جا چکا ہے۔ 1960ء سے لے کر 1993ء تک یہ سلسلہ بزور ِشمشیر چلتا رہا۔ فوجی قیادت جب چاہتی سویلین حکومت کو گھر بھیج کر مارشل لاء لگا دیتی۔ اپنے مغربی آقاؤں کو خوش کرنے کے لیے وہ اسلامی قدروں کو پامال کرتے ہوئے ایسے قوانین کا اجراء کرتی جن سے ترکی کی اپنی انفرادی شناخت اور حیثیت مجروح ہوتی رہی۔ رفتہ رفتہ ترکی امریکا اور مغربی طاقتوں کی ایک کالونی بن کر رہ گیا، لیکن 2002ء سے طیب اردگان کے برسرِ اقتدار آ جانے کے بعد منظر نامہ یکسر بدلنے لگا۔ ترکی ایک جدید اسلامی ترقی یافتہ ملک کی حیثیت سے اُبھر کر سامنے آنے لگا۔ تیسری دنیا کے ملکوں کے معدنی ذخائر اور وسائل پر قابض عالمی چوہدریوں کو اُن کا یہ انداز ایک آنکھ نہیں بھایا اور وہ اُنہیں نشانہ عبرت بنانے کے لیے سازشیں کرنے لگے۔

ایسے ہی مذموم عزائم کی تکمیل کے لیے وہ دیگر اسلامی ممالک میں بھی ہمیشہ غیرجمہوری قوتوں کے سرپرستی کرتے رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جہاں جہاں کسی اسلامی ملک میں جمہوریت فروغ پانے اور پروان چڑھنے لگتی ہے وہ وہاں کی فوجی قیادت کو بغاوت پر اُکساتے رہتے ہیں، لیکن  اِس بار ترکی میں اُن سے بہت بڑی غلطی   ہو گئی۔ وہ ترک افواج کی ساری قیادت کو منظم و متحد نہ کر سکے اور جلدبازی میں ایک ایسا اقدام کر بیٹھے جس کے نتیجے میں اُن کا سارا  منصوبہ دھرا  کا دھرا رہ گیا۔ اُن کے اِس  منصوبے میں آرمی چیف کی  رضامندی شامل نہ تھی جو اُس سازش سے الگ تھلگ رہے۔ عام طور سے جب بھی کوئی ایسا قدم اُٹھایا جاتا ہے تو سب سے پہلے وہاں کے حکمرانوں کوگرفتار کر کے الیکٹرانک میڈیا پر قبضہ کیا جاتا ہے، مگر یہاں یہ دونوں کام نہ کیے جا سکے  اور ترک صدر رجب طیب اردگان کا مزاحمتی پیغام نجی ٹی وی چینلز پر نشر ہو گیا۔

پھر کیا تھا طیب اردگان کے چاہنے والے راتوں رات سڑکوں پر نکل آئے اور بھر پور مزاحمت کر کے بغاوت کو ناکام  بنا دیا۔ نتیجتاً اب وہاں ایک نیا انقلاب رو نما ہو رہا ہے  جو ترک قوم کے تقدیر بدل کر رکھ دے گا۔ رجب طیب اردگان ایک نئے جذبے اور ولولے سے ملک کے اندر بڑی بڑی تبدیلیاں کر رہے ہیں۔ حال ہی میں اُنہوں نے استنبول میں لاکھوں افراد پر مشتمل تاریخ کا سب سے بڑا عوامی اجتماع کر کے ساری دنیا کو یہ دکھا دیا ہے کہ ترک عوام اب کسی غیر جمہوری نظام کو کسی صورت برداشت نہیں کریں  گے  اور استعماری قوتوں کے مہروں کو خود پر مسلط ہونے نہیں دیں گے۔ وہ اپنے فیصلوں کے خود مالک ہیں۔ کوئی اُنہیں ڈکٹیشن نہیں دے سکتا۔

اِس ناکام بغاوت کے بعد ترک حکمران  رجب طیب اردگان پہلے سے زیادہ نڈر، بیباک اور پرعزم لیڈر کے طور پر اُبھرکر سامنے آئے ہیں اور ملک کی ساری ترجیحات اور پالیسیاں بدلنے کاعہدکر لیا ہے۔ اپنے اِس مقصد کے لیے اُنہوں نے سب سے پہلے جو غیرملکی دورہ کیا ہے وہ روس کا دورہ ہے۔ جہاں اُنہوں نے وہاںکے حکمران’’ پوٹن‘‘ سے مل کر نئے تعلقات استوار کرنے کا عندیہ دیا ہے۔ ملک شام میں مداخلت اور ایک روسی طیارہ گرا دینے کی وجہ سے اُن کے ملک اور روس کے درمیان جو اختلافات پیدا ہو گئے تھے اُنہوں نے اُسے دورکرنے کی مثبت اور صائب کوششیں کی ہیں۔ ساتھ ہی اُنہوں نے امریکا اور مغربی طاقتوں کو بھی یہ پیغام پہنچا دیا ہے کہ وہ اب اُن کے اسٹریٹجک پارٹنرکے حیثیت سے مزید کام نہیں کر سکتے۔ ترکی کے حکمرانوں کے خیال میں امریکا اور یورپی ممالک نے حالیہ بحران میں منافقت اور موقعہ پرستی کا مظاہرہ کیا۔ وہ در پردہ 15 جولائی کی رات باغیوں کی سرپرستی کرتے رہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ ترکی کا جھکاؤ ہمیشہ سے یورپ کی طرف ہی رہا لیکن آج یورپ نے اپنا قابلِ اعتماد ساتھی کھو دیا ہے۔

یہ امریکا اور یورپی ممالک کا اپنا وہ رویہ ہے جس کی وجہ سے آج ترکی اُن سے دور ہوتا جا رہا ہے۔ ناکام بغاوت کے فوراً بعد ترک حکومت نے امریکا سے اپنے ایک خود ساختہ جلاوطن لیڈر فتح اللہ گولن کی حوالگی کا مطالبہ کیا جسے امریکا نے مسترد کر دیا۔ اب اگر جناب اردگان نئے اتحاد بنانے کے لیے روس اور چین کی طرف بڑھتے ہیں تو اِس میں وہ سراسر حق بجانب ہیں۔ ترکی 15 سال تک یورپ کے اتحادی کے طور پرکام کرتا رہا لیکن یورپ نے اُسے ایک مشکل وقت میں دھوکا دیا ہے۔

اِس صورتحال میں ایک بات جو کھل کر سامنے آئی ہے کہ ناکام فوجی بغاوت کی کوکھ سے ترکی میں ایک ایسے انقلاب نے جنم لیا ہے جو ترک عوام کے ساتھ اِس سارے خطے کی تقدیر بدل کر رکھ دیگا۔ برادر اسلامی ملک ترکی کے لوگ اپنے اِس دلیر اور بہادر لیڈر کی قیادت میں پہلے ہی ترقی و خوشحالی کے سفر پرگامزن تھے مگر اب 15 جولائی 2016 ء کے بعد سے وہ ایک نئے عزم، حوصلے اور ولولے کے ساتھ عظیم ترکی کی بنیاد رکھنے جا رہے ہیں جو دنیا کی کسی سپر پاور کے آگے سرنگوں نہیں رہے گا۔ (انشاء اللہ)

ڈاکٹر منصور نورانی

اردوغان پوٹن ملاقات : مغرب کے اوسان خطا

ترکی میں 15 جولائی کو ہونے والی ناکام بغاوت کے بعد اس کی اندرونی اور خارجہ سیاست میں انقلاب دیکھنے میں آیا ہے۔ جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی کی گذشتہ دو حکومتوں کے ساتھ امریکہ اور یورپی یونین کے تعلقات کے تناظر میں دیکھا جائے تو ناکام فوجی بغاوت کے بعد طیب اردوغان کا اپنے پہلے غیر ملکی دورے کے لیے روس کا انتخاب اس تبدیلی کی واضح علامت ہے۔ اس تبدیلی کو مغربی رہنما کافی پریشانی سے دیکھ رہے ہیں۔ پناہ گزینوں کے حوالے سے یورپی یونین اور ترکی کا معاہدہ مشکلات کا شکار ہے اور امریکہ پر خود ساختہ جلا وطنی اپنائے ہوئے مبلغ فتح اللہ گولن کی حوالگی کے لیے دباؤ ہے۔ ترکی کا الزام ہے کہ وہ فوجی بغاوت کے ذمہ دار ہیں۔ لیکن منگل کا یہ دورہ مغرب کی جانب سے بحران کے دوران ناکافی حمایت اور روس کی جانب سے فوری حمایت کے ردِ عمل میں کیا جانے والا جلد باز فیصلہ نہیں ہے۔ اس کی تاریخ قدرے پرانی ہے۔

چند سال قبل احمد داؤد اوغلو نے جو اس وقت وزیرِ خارجہ تھے اور بعدازاں وزیرِ اعظم بنے انھوں نے یہ نعرہ بلند کیا تھا کہ ’ہمسائیوں کے ساتھ کوئی مسائل نہیں ہوں گے۔‘ ترکی نے عرب سپرنگ کے بعد تبدیلیوں کی پالیسی اپنائی تھی۔ گذشتہ سال کے اواخر تک ترک قیادت کے تمام ہمسائیوں اور پارٹنرز کے ساتھ مسائل پیدا ہو چکے تھے اور اس کے دوستوں کا حلقہ سکڑتا جا رہا تھا اور اس کی وجہ شام میں جاری کشیدگی اور عراق کے لیے ترک پالیسی کی ناکامی تھی۔ چونکہ شام میں ترکی کے سکیورٹی مفادات اور سرحد کے دونوں طرف کرد عسکریت پسندوں سے تعلقات زبوں حالی کا شکار تھے اس لیے انقرہ کے لیے یہ سٹریٹیجک ضرورت بن گیا تھا کہ وہ حقیقت کے سامنے گھٹنے ٹیکتے ہوئے باوقار طریقے سے پیچھے ہٹ جائے۔ یہ بات ترکی کی روس کے لیے پالیسی پر بھی لاگو ہوتی ہے۔ دونوں کے تعلقات اقتصادی آزادی کی بنیاد پر قائم کیے گئے۔

ترکی کو روس سے پٹرولیم مصنوعات، جوہری توانائی اور ٹیکنالوجی جیسی چیزیں درکار تھیں۔ اس میں روسی مارکیٹوں تک رسائی اور روسی سیاحوں کی آمد بھی شامل تھی۔ جواباً روس کو ترکی کی توانائی کی مارکیٹ اور توانائی کی سپلائی کے لیے اس کی سرزمین چاہیے تھی۔ اس کے علاوہ بحیرۂ قلزم کے علاقے میں سلامتی دونوں کی مشترکہ دلچسپی کا امر تھا۔ اس بات میں کوئی اچنبھا نہیں تھا جب مئی کے وسط میں ترکی نے اپنی پالیسی میں تبدیلی کے اشارے دیے۔ داؤد اوغلو کے جانے کے بعد بن علی یلدرم وزیرِ اعظم بن کر آئے تو اعلان کیا کہ ’اب وقت آ گیا ہے کہ ترکی کے دشمنوں کی تعداد کم کی جائے اور دوستوں کی تعداد بڑھائی جائے۔‘ یہ بات روس اور اسرائیل کے لیے واضح اشارہ تھی۔

طیب اردوغان کی جانب سے معذرت کو اگرچہ پوتن کی ٹیم نے سیاسی طور پر کافی قرار دیا تھا تا ہم روسی وزیرِ خارجہ سرگے لاوروف نے اصرار کیا کہ دونوں ممالک کے تعلقات کی بحالی صرف شام میں جاری بحران کی دلدل سے نکلنے میں تعاون پر منحصر ہے۔ اردوغان ایک وسیع ایجنڈا اور بڑا وفد لے لر سینٹ پیٹرزبرگ گئے ہیں۔ توقع ہے کہ دونوں ممالک گیس لائن منصوبے، جوہری بجلی گھر کی تعمیر اور توانائی کے دیگر ذرائع کے حوالے سے بات کریں گے۔ دونوں ممالک کے مابین سیاحت، اشیاء خورد و نوش اور تعمیرات کی بحالی پر بھی بات کی جائے گی۔ خیال ہے کہ شام کے حوالےسے بھی کچھ معاملات واضح کیے جائیں گے۔

لیکن ناکام فوجی بغاوت کے ہفتوں بعد ہی کیے جانے والے اس علامتی دورے کی اہمیت سے وہ لوگ قطعی غافل نہیں ہیں جو امریکہ اور یورپی یونین میں موجود ترکی پالیسی میں مستقل تبدیلی کے اشارے تلاش کر رہے ہیں۔ آخر کار ترکی ایک اہم نیٹو طاقت ہے اور 15 جولائی کو ہونے والے واقعات کے بعد یہ مزید حساس صورتحال کا شکار ہے اور مغرب کو طیب اردوغان کے سخت گیر رویے سے شکایت بھی ہے۔ شاید طیب اردوغان اور صدر پوتن خوش ہیں کہ فی الوقت مغرب کو حیرت زدہ رہنے دیا جائے اور اس کے پسینے چھوٹتے رہیں۔

مائیکل ساہلن

سٹاک ہوم یونیورسٹی

انسٹیٹیوٹ فار ٹرکش سٹڈیز