What are the Panama Papers?

A huge leak of documents has lifted the lid on how the rich and powerful use tax havens to hide their wealth. The files were leaked from one of the world’s most secretive companies, a Panamanian law firm called Mossack Fonseca.
What are the Panama Papers?
The files show how Mossack Fonseca clients were able to launder money, dodge sanctions and avoid tax. In one case, the company offered an American millionaire fake ownership records to hide money from the authorities. This is in direct breach of international regulations designed to stop money laundering and tax evasion. It is the biggest leak in history, dwarfing the data released by the Wikileaks organisation in 2010. For context, if the amount of data released by Wikileaks was equivalent to the population of San Francisco, the amount of data released in the Panama Papers is the equivalent to that of India. You can find our special report on the revelations here.
Who is in the papers?
There are links to 12 current or former heads of state and government in the data, including dictators accused of looting their own countries. More than 60 relatives and associates of heads of state and other politicians are also implicated. The files also reveal a suspected billion-dollar money laundering ring involving close associates of Russia’s President, Vladimir Putin.  Also mentioned are the brother-in-law of China’s President Xi Jinping; Ukraine President Petro Poroshenko; Argentina President Mauricio Macri; the late father of UK Prime Minister David Cameron and three of the four children of Pakistan’s Prime Minister Nawaz Sharif. The documents show that Iceland’s Prime Minister, Sigmundur Gunnlaugsson, had an undeclared interest linked to his wife’s wealth. He has now resigned. The scandal also touches football’s world governing body, Fifa. Part of the documents suggest that a key member of Fifa’s ethics committee, Uruguayan lawyer Juan Pedro Damiani, and his firm provided legal assistance for at least seven offshore companies linked to a former Fifa vice-president arrested last May as part of the US inquiry into football corruption. The leak has also revealed that more than 500 banks, including their subsidiaries and branches, registered nearly 15,600 shell companies with Mossack Fonseca.  Lenders have denied allegations that they are helping clients to avoid tax by using complicated offshore arrangements. Chart showing the ten banks that requested most offshore companies for clients
How do tax havens work?
Although there are legitimate ways of using tax havens, most of what has been going on is about hiding the true owners of money, the origin of the money and avoiding paying tax on the money. Some of the main allegations centre on the creation of shell companies, that have the outward appearance of being legitimate businesses, but are just empty shells. They do nothing but manage money, while hiding who owns it. One of the media partners involved in the investigation, McClatchy.
What do those involved have to say?
Mossack Fonseca says it has operated beyond reproach for 40 years and never been accused or charged with criminal wrong-doing. Mr Putin’s spokesman Dmitry Peskov said the reports were down to “journalists and members of other organisations actively trying to discredit Putin and this country’s leadership”. Publication of the leaks may be down to “former employees of the State Department, the CIA, other security services,” he said. In an interview with a Swedish television channel, Mr Gunnlaugsson said his business affairs were above board and broke off the interview. Fifa said it is now investigating Mr Damiani, who told Reuters  that he broke off relations with the Fifa member under investigation as soon as the latter had been accused of corruption.
 Who leaked the Panama Papers?
The 11.5m documents were obtained by the German newspaper Sueddeutsche Zeitung and shared with the International Consortium of Investigative Journalists (ICIJ). The ICIJ then worked with journalists from 107 media organisations in 76 countries, including UK newspaper the Guardian, to analyse the documents over a year. The BBC does not know the identity of the source but the firm says it has been the victim of a hack from servers based abroad. In all, the details of 214,000 entities, including companies, trusts and foundations, were leaked. The information in the documents dates back to 1977, and goes up to December last year. Emails make up the largest type of document leaked, but images of contracts and passports were also released.
How can I read the papers?
So far, a searchable archive is not available at the moment. There is a huge amount of data, and much of it reportedly includes personal information (including passport details), and does not necessarily include those suspected of criminal activity. Having said that, there is plenty of information out there. The ICIJ has put together a comprehensive list of the main figures implicated here – you can also search by country. You can sign up on the ICIJ’s website for any major updates on the Panama Papers.

Panama Papers

The Panama Papers are 11.5 million leaked documents that detail financial and attorney–client information for more than 214,488 offshore entities.  The documents, which belonged to the Panamanian law firm and corporate service provider Mossack Fonseca, were leaked in 2015 by an anonymous source, some dating back to the 1970s. The leaked documents contain personal financial information about wealthy individuals and public officials that had previously been kept private. While offshore business entities are legal, reporters found that some of the Mossack Fonseca shell corporations were used for illegal purposes, including fraud, tax evasion, and evading international sanctions.

“John Doe”, the whistleblower who leaked the documents to German journalist Bastian Obermayer from the newspaper Süddeutsche Zeitung (SZ), remains anonymous, even to the journalists on the investigation. “My life is in danger”, he told them.  In a May 6 statement, John Doe cited income inequality as the reason for his action, and said he leaked the documents “simply because I understood enough about their contents to realise the scale of the injustices they described”. He added that he has never worked for any government or intelligence agency. He expressed willingness to help prosecutors if immune to prosecution. After SZ verified that the statement did come from the Panama Papers source, the International Consortium of Investigative Journalists (ICIJ) posted the full document on its website.
Because of the amount of data, SZ asked the ICIJ for help. Journalists from 107 media organizations in 80 countries analyzed documents detailing the operations of the law firm. After more than a year of analysis, the first news stories were published on April 3, 2016, along with 150 of the documents themselves. The project represents an important milestone in the use of data journalism software tools and mobile collaboration. The documents were quickly dubbed the Panama Papers. The Panamanian government strongly objects to the name; so do other entities in Panama and elsewhere. Some media outlets covering the story have used the name “Mossack Fonseca papers”.

 

In addition to the much-covered business dealings of British prime minister David Cameron and Icelandic prime minister Sigmundur Davíð Gunnlaugsson, the leaked documents also contain identity information about the shareholders and directors of 214,000 shell companies set up by Mossack Fonseca, as well as some of their financial transactions. Much of this information does not show anything more than prudent financial management. It is generally not against the law (in and of itself) to own an offshore shell company, although offshore shell companies may sometimes be used for illegalities.
The journalists on the investigative team found business transactions by many important figures in world politics, sports and art, and many of these transactions are quite legal. Since the data is incomplete, questions remain in many other cases; still others seem to clearly indicate ethical if not legal impropriety. Some disclosures – tax avoidance in very poor countries by very wealthy entities and individuals for example – lead to questions on moral grounds. According to The Namibian for instance, a shell company registered to Beny Steinmetz, Octea, owes more than $700,000 US in property taxes to the city of Koidu in Sierra Leone, and is $150 million in the red, even though its exports were more than twice that in an average month 2012–2015. Steinmetz himself has personal worth of $6 billion. Other offshore shell company transactions described in the documents do seem to have broken exchange laws, violated trade sanctions or stemmed from political corruption, according to ICIJ reporters. For example:
Uruguay has arrested five people and charged them with money-laundering through Mossack Fonseca shell companies for a Mexican drug cartel. Ouestaf, an ICIJ partner in the investigation, reported that it had discovered new evidence that Karim Wade received payments from DP World (DP). He and his long-time friend were convicted of this in a trial that the United Nations and Amnesty International said was unfair and violated the defendants’ rights. The Ouestaf article does not address the conduct of the trial, but does say that Ouestaf journalists found Mossack Fonseca documents showing payments to Wade via a DP subsidiary and a shell company registered to the friend. Named in the leak were 12 current or former world leaders, 128 other public officials and politicians, and hundreds of other members of the elites of over 200 countries.Customers may open offshore accounts for any number of reasons, some of which are entirely legal but ethically questionable. A Canadian lawyer based in Dubai noted, for example, that businesses might wish to avoid falling under Islamic inheritance jurisprudence if an owner dies. Businesses in some countries may wish to hold some of their funds in dollars also, said a Brazilian lawyer. Estate planning is another example of legal tax avoidance.

American film-maker Stanley Kubrick had an estimated personal worth of $20 million when he died in 1999, much of it invested in the 18th-century English manor he bought in 1978. He lived in that manor the rest of his life, filming scenes from The Shining, Full Metal Jacket and Eyes Wide Shut there as well. Three holding companies set up by Mossack Fonseca now own the property, and are in turn held by trusts set up for his children and grandchildren. Since Kubrick was an American living in Britain, his estate would otherwise have had to pay taxes to both governments and might have been forced to sell the property to have the liquid assets to do so. Kubrick is buried on the grounds along with one of his daughters and the rest of his family still lives there.

Source : Wikipedia

کیا پانامہ لیکس بھی ’سازش‘ ہے؟

پاکستان کا شمار اُن چند ممالک میں ہوتا ہے جہاں روزانہ کی بنیاد پر ایک نیا
موضوع انگڑائی لیتا ہے اور پھر ڈرائنگ روم، دفاتر اور دوستوں کی محافل میں اُسی موضوع پر لوگ تجزیے کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ گزشتہ روز بھی ایسا ہی ہوا جب پانامہ پیپرز نے دنیا بھر کے ایسے سرمایہ داروں کی معلومات ریلیز کی جنہوں نے خفیہ طریقوں سے دولت کے انبار جمع کئے ہیں۔ ان دستاویزات میں پاکستانیوں سمیت دنیا بھر سے بڑے بڑے نام شامل ہیں جبکہ وزیراعظم نواز شریف کے خاندان کا ذکر بھی اِس فہرست میں کیا گیا ہے۔

اس سے پہلے ہم آپ کو یہ بتائیں کہ یہ سارا معاملہ کیا ہے اور کس نے کیا کیا کارنامے سرانجام دیئے، بہتر یہ ہوگا کہ پانامہ پیپرز کا تھوڑا سا تعارف پیش کیا جائے۔ پانامہ پیپرز کو کارپوریٹ سروسز فراہم کرنے والی موزیک فونیسکا نے ترتیب دیا ہے۔ موزیک فونیسکا لاء فرم ہے جس کے پوری دنیا میں 40 دفاتر ہیں۔ اس فرم کی بنیاد 1977ء میں جارگن موزیک نے رکھی۔ بعد میں رامن فونیسکا نے بھی اِس میں شمولیت اختیار کرلی۔ مزے کی بات یہاں یہ ہے کہ جارگن موزیک، ارحرڈ موزیک کا بیٹا ہے اور یہ بات انتہائی دلچسپ ہے کہ ارحرڈ موزیک نازی پارٹی کی آرمڈ ونگ کا حصہ رہ چکے ہیں، پھر بعد میں اُس نے امریکی سی آئی اے کیلئے کام شروع کردیا اور کیوبا کی جاسوسی کی۔ رامن فونیسک ایک ناولسٹ اور وکیل ہے۔ رامن فونیسک پانامہ کے صدر کا منسٹر کونسلر تھا اور پانامینسٹا پارٹی کا صدر تھا۔ رامن فونیسک کو مارچ 2016ء میں برازیلین آپریشن کار واش کی وجہ سے فارغ کر دیا گیا تھا۔ آپریشن کار واش منی لانڈرنگ کی تحقیقات کا مشن ہے جس کو برازیلین پولیس چلا رہی ہے۔

اب اِس کمپنی کو چلانے والے دونوں ہی حضرات متنازعہ شخصیت کے مالک ہیں، متنازعہ اِس لیے کہ انہوں نے اپنی پوری زندگی ایسے کاموں پر صرف کردی جو خفیہ طریقوں سے کیے جاتے رہے، لیکن کمال دیکھیے کہ آج اُن کی اولادیں دنیا بھر کے خفیہ طریقوں سے دولت جمع کرنے والوں کی تلاش کا کام کررہی ہیں، بلکہ ایک فہرست بھی جاری کردی ہے۔ پاکستان کے حالات اور یہاں ہونے والی بدعنوانی کو دیکھنے کے بعد ہم گمان ضرور کرسکتے ہیں کہ ان لیکس میں بہت حد تک حقیقت ہوسکتی ہے لیکن ہمیں یہ سمجھنے کی ضرورت ضرور ہے کہ کہیں ایسے متنازعہ مالکان کے فرم کی رپورٹ دودھ کی دھلی ہوسکتی ہے؟

چلیں ہم مان لیتے ہیں کہ پاکستان کے حکمراں خاندان نے ملکی دولت باہر بھجوائی لیکن ہمارے پڑوس بھارت کا کیا؟ کیا وہاں سب ایماندار ہیں؟ کیا وہاں بد عنوانی نہیں ہوتی؟ کیا وہاں کسی سیاست دان نے ملکی دولت باہر نہیں بھجوائی؟ جی کم از کم پانامہ لیکس تو ایسا ہی بتارہی ہیں، اگرچہ کچھ فنکاروں کا ذکر ضرور ہے جن میں امیتابھ بچن اور ایشوریا بچن کا نام سرفہرست ہے مگر سیاستدانوں کا نام اس فہرست میں شامل نہیں۔ یورپ والے بھی بڑے عجیب ہیں۔ پہلے ہمارے حکمرانوں کو خفیہ دولت جمع کرنے اور مغربی بنکوں میں محفوظ رکھنے کے طریقے بتاتے ہیں اور بعد میں خود ہی اُن کا بھانڈا پھوڑ دیتے ہیں۔ معذرت کے ساتھ لیکن ایسی عادتیں تو بازاری عورتوں کی ہوا کرتی ہیں۔
اِن لیکس میں جن اہم شخصیت یا اُن سے جڑے افراد کا نام شامل ہیں وہ یہ ہیں۔
وزیر اعظم پاکستان نواز شریف کے چار میں سے تین بچوں کا ذکر ہے۔
برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون کے والد کا ذکر ہے۔
روسی صدر پوٹن کے قریبی رفقا
چینی صدر کے بہنوئی
آئس لینڈ کے وزیراعظم سگمندر گنلاگسن (Sigmundur Gunnlaugsson)
سامراجی طاقتیں جس کسی قوم کے خلاف اقدام کرنا چاہتی ہیں تو سب سے پہلے میڈیا وار لڑی جاتی ہے۔ اگر مد مقابل قوت میڈیا وار کا شکار نہیں بنتی تو دوسرا مرحلہ معاشی پابندیوں کا ہوتا ہے اور تیسرا مرحلہ میدان جنگ کا ہے۔ جہاں یہ قوتیں اپنے ہتھیاروں کے زور سے جنگ جیتتی ہیں۔ لیکن گزشتہ کچھ عرصے سے ایک نیا ہتھیار میں سامنے لایا گیا ہے، ابھی کچھ ہی عرصے پہلے کی بات ہے جب دنیا بھر میں وکی لیکس کا چرچا تھا۔ ابھی اُن کی بازگشت ختم ہی ہوئی تھی کہ اچانک پانامہ لیکس میدان میں آگئی ہیں۔
جس طرح اوپر کہا کہ یہ عین ممکن ہے کہ جو کچھ اِن لیکس کے ذریعے بتایا گیا ہے وہ بالکل ٹھیک ہو کہ حکمراں خاندان اور دیگر سیاستدانوں نے ملکی دولت بیرون ملک بھجوائی ہو لیکن اِس کا ذمہ دار میں سیاستدانوں کے بجائے عوام کو سمجھتا ہوں۔ یقیناً آپ میں سے بہت لوگ حیران ہونگے کہ بھلا یہاں عوام کہاں سے آگئی۔ دیکھیئے جناب! چاہے بات ہو مسلم لیگ (ن) کی یا پاکستان پیپلز پارٹی کی۔ یہی وہ دونوں جماعتیں ہیں جنہوں نے جمہوری دور میں سب سے زیادہ وقت عوام پر حکمرانی کی ہے، اور جمہوریت میں حکومتیں عوامی ووٹ سے بنتی ہیں یہ کسی کو بتانے کی ضرورت ہرگز نہیں۔ پھر یہ بھی آج کی بات نہیں کہ دونوں ہی جماعتوں پر مسلسل کرپشن اور لوٹ مار کے الزامات لگتے رہے، لیکن اِن تمام تر الزامات کے باوجود عوام نے انہی جماعتوں کو ووٹ دیا اور اب بھی دیتے ہیں۔
یہ بھی ممکن ہے کہ آپ سوچ رہے ہوں کہ یہ پارٹیاں ووٹ سے نہیں بلکہ دھاندلی سے حکومت بناتی ہیں، اگر آپ کی یہ بات بھی مان لی جائے تب بھی قصوروار عوام ہی ہیں۔ آپ مزید سوال پوچھیں اِس سے پہلے ہی اِس سوال کا جواب بھی دے دیتے ہیں کہ اگر عوام واقعی یہ سمجھتی تھی کہ یہ جماعتیں دھاندلی سے حکومت میں آتی ہیں تو عوام نے خاموشی کیوں اختیار کیں؟
اِس لیے بہتر یہ ہے کہ حکومت اور سیاستدانوں کو کرپٹ اور چور کہنے سے پہلے آپ کو اور مجھے اپنے اپنے گریبانوں کو جھانکنے کی ضرورت ہے۔ اگر وہ کرپٹ ہیں تو ہم بھی کرپٹ ہیں کیونکہ ہم نے اپنے ذاتی مفادات کے لیے ایسے جماعتوں کو بار بار حکمرانی کا تاج پہنایا ہے۔ لہذا اگر آپ سمجھتے ہیں کہ ملک سے لوٹی ہوئی دولت باہر نہیں جائے تو کسی اور کو ٹھیک کرنے سے پہلے اپنا احتساب کیجیے۔ اگر آپ کو میری بات سے اختلاف ہے تو آئس لینڈ کے حالات کا جائزہ لے لیجیے جہاں کے وزیراعظم پر الزام لگنے کے بعد لوگوں کی بڑی تعداد وزیراعظم ہاوس کے باہر جمع ہوگئے ہیں اور اُن کا کہنا ہے کہ جب تک وزیراعظم استعفی نہیں دینگے اُس وقت تک اُن کا احتجاج جاری رہے گا۔
آخر میں ایک التماس اُن تمام سیاستدانوں اور تمام ہی ایسے افراد سے ہے جن کا نام پانامہ پیپرز میں ہے کہ اگر آپ ٹھیک ہے اور کبھی کوئی دولت بیرون ملک نہیں بھیجی تو فوری طور پر ثبوت فراہم کیے جائیں اور اگر ثبوت نہ دیے جاسکیں تو ایسے تمام لوگوں کے سامنے سینہ چوڑا کر کے آئیے گا اپنی بے گناہی کا ثبوت دیجیے، لیکن اگر آپ ایسا نہ کرسکیں تو خدارا عوام سے اپنے کیے کی معافی مانگیے، عوام سے بھی بڑھ کر رب سے معافی مانگیے کہ اُس نے آپ کو خلق خدا کی خدمت کا موقع دیا لیکن آپ نے یہ قیمتی موقع ضائع کردیا۔
فرمان نواز

دولت چھپانے کے طریقے، ایک عمارت میں اٹھارہ ہزار کمپنیاں

پاناما کی قانونی کمپنی موساک فونیسکا کی افشا ہونے والی ہزاروں دستاویزات
سے پتہ چلتا ہے کہ دولت چھپانے کے لیے کس طرح سے ’ٹیکس ہیون‘ کا استعمال کیا جاتا ہے، اِن انکشافات سے دنیا بھر کی توجہ وسطی امریکی ریاست کی جانب مرکوز ہوگئی ہے۔ پاناما پیپرز کے انکشافات سے پاناما کو یہ تحریک ملی کہ وہ اپنی آف شور کی مالیاتی صنعت میں شفافیت کو بہتر بنانے کے لیے ایک بین الاقوامی پینل تشکیل دے۔ لیکن مالی رازداری کی تحقیق کرنے والی عالمی تنظیموں نے خبردار کیا ہے کہ سب سے کم مالی شفافیت والے ممالک کی فہرست کے پہلے دس ممالک میں بھی پاناما شامل نہیں ہے۔ امیر یورپی اور شمالی امریکی افراد آسانی سے اپنی دولت یہاں چھپا سکتے ہیں اور اِس سے معلوم ہوتا ہے کہ اب تک پاناما کے تنازعے میں کیوں بہت کم امریکی شہریوں کا نام سامنے آیا ہے۔

مالی رازداری کرنے والے سرفہرست دس ممالک میں سوئٹزرلینڈ، ہانگ کانگ، امریکہ، سنگا پور، لگزمبرگ، لبنان، جرمنی، بحرین، متحدہ عرب امارات شامل ہیں۔ موساک فونیسکا کے شریک بانی رامون فونیسکا نے امیر ممالک پر منافقت کا الزام لگایا ہے۔ خبررساں ادارے نیویارک ٹائمز سے بات کرتے ہوئے اُن کا کہنا تھا کہ ’میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ پاناما سے زیادہ غلط دولت نیویارک، میامی اور لندن میں موجود ہے۔

لیکن کیا وہ صحیح ہیں؟

بین الاقوامی ٹیکس اور مالی قواعد کا تجزیہ کرنے والے خودمختار ادارے ٹیکس جسٹس نیٹ ورک نے ایک فہرست ترتیب دی ہے، جس میں مالکوں کی، اُن کے مالی قواعد کی مضبوطی اور لین دین کے حجم کے مطابق درجہ بندی کی گئی ہے۔
اِن دس ممالک کی فہرست میں پاناما شامل نہیں ہے۔ فہرست کے مطابق پہلے نمبر پر سوئزرلینڈ، دوسرے پر ہانگ کانگ، تیسرے پر امریکہ، چوتھے پر سنگاپور، پانچویں نمبر پر کیمن آئس لینڈ، چھٹے پر لکسمبرگ، ساتویں پر لبنان، آٹھویں پر جرمنی، نویں پر بحرین اور دسویں نمبر پر متحدہ عرب امارات کو شامل کیا ہے۔
دہرا معیار
بی بی سی کے نامہ نگار میکس سائٹز نے ٹیکس جسٹس نیٹ ورک کے الیکس کوبھم سے گفتگو کی ہے۔ کوبھم کہتے ہیں کہ ’یہاں دہرے معیار ہیں: کئی ترقی یافتہ ممالک جہاں مالی شفافیت موجود نہیں ہے، قانون نافذ کرنے کے حق کی حمایت یا ذریعہ بنتے ہیں۔‘ بینکاری میں رازداری کے سخت قوانین کی وجہ سے سوئزرلینڈ فہرست میں سب سے اوپر ہے، یہاں تک کے اُس نے عالمی دباؤ کے بعد حال ہی میں بین الاقوامی ٹیکس چوری کی تحقیقات میں سامنے آنے والے اکاؤنٹس یا کھاتوں کے مالکان کی نشاندہی کرنے کی منظوری دی ہے۔ ہانگ کانگ اِس فہرست میں دوسرے نمبر پر ہے۔
پاناما پیپرز میں انکشاف کیا گیا ہے کہ کمپنیوں کا ایک تہائی کاروبار ہانگ کانگ اور چین میں قائم دفاتر کے ذریعے سے ہوتا ہے۔ جس سے کمپنیوں کی بڑی مارکیٹ چین اور کمپنیوں کا سب سے مصروف دفتر ہانگ کانگ کہلاتا ہے۔ ہانگ کانگ میں حامل رقعہ حصص کی خرید و فروخت کی قانونی اجازت موجود ہے، جس سے اُس کے مالک کی نشاندہی کے بغیر رقم یا فنڈ کی منتقلی میں مدد ملتی ہے۔
امریکی دولت
امریکی سرحد کے اندر اور وائٹ ہاؤس سے انتہائی قریب، ڈیلاوئیر کی مشرقی ساحلی ریاست میں تقریباً 945,000 کمپنیاں قائم ہیں۔ جس کے حساب سے وہاں کا ہر رہائشی ایک کمپنی کا مالک ہے۔ ڈیلاوئیر اُن چار امریکی ریاستوں میں شامل ہے (باقی تین ریاستیں نیواڈا، ایریزونا اور ویاؤمنگ ہیں)، جن پر خراب مالی قواعد کی وجہ سے تنقید کی جاتی ہے۔ اور یہاں پر قائم کئی کمپنیوں کے بارے میں شبہات ہیں کہ وہ ’گھوسٹ کمپنیاں‘ ہیں۔ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے اِس ریاست کو ’بین الاقوامی جرائم کی پناہ گاہ‘ قرار دیا ہے۔

سمندر پار برطانوی علاقے
سنہ 2008 میں نیو ہمشائر میں ہونے والے ایک مباحثے میں امریکی صدر اوباما نے آگلینڈ ہاؤس کا ذکر کیا تھا، یہ کیمن آئس لینڈ کی ایک عمارت ہے، جس کے بارے میں اُن کا کہنا تھا کہ وہاں 12 ہزار کمپنیوں کے دفاتر ہیں۔ صدر کا کہنا ہے کہ ’ یہ ریکارڈ پر آنے والا سب سے بڑا ٹیکس کا اسکینڈل ہے یا تو سب سے بڑی عمارت ہے۔‘ اِس وقت آگلینڈ ہاؤس کی ویب سائٹ کے مطابق وہاں 18 ہزار کمپنیوں کے دفاتر رجسٹرڈ ہیں۔ 
کیمن آئس لینڈ سمندر پار برطانوی علاقہ لیکن خود مختار ہے۔ جیسن کوبھم کا کہنا ہے کہ اس طرح کی انحصار کرنے والے علاقوں کو برطانوی درجہ بندی میں شامل کیا گیا تو برطانیہ فہرست میں سب سے اوپر ہوگا۔ برطانیہ کا ایک اور سمندر پار علاقہ برٹش ورجِن آئس لینڈ بھی پاناما پیپرز میں نمایاں ہے۔ انکشافات میں ملوث کئی کمپنیاں ایسی ہیں جو پہلے یہاں اور بعد میں پاناما میں رجسٹرڈ ہوئی ہیں۔
خامیاں دور کرنے کی کوشش

لیکن پاناما واحد ملک نہیں ہے، جس نے مالی شفافیت کو بہتر بنانے کے لیے کارروائی کا وعدہ کیا ہے۔ سنہ 2013 میں جی ایٹ کے اجلاس میں اہم معاشی طاقتوں نے، منی لانڈرنگ میں ملوث افراد، ٹیکس چوروں اور کارپوریٹ ٹیکس نہ دینے والوں کے خلاف نئے اقدامات پر آمادگی ظاہر کی تھی۔ سربراہی اجلاس کے اعلامیے میں ممالک سے ’ٹیکس چوری کی لعنت کے خلاف جنگ‘ پر زور دیا گیا تھا۔ لندن سکول آف اکنامکس سے تعلق رکھنے والے جیسن ہائیکل کے اندازے کے مطابق ٹیکس ہیون میں دنیا کی کل نجی دولت کا ایک میں سے چھٹا حصہ چھپا ہوا ہے۔

بشکریہ بی بی سی اردو