What are the Panama Papers?

A huge leak of documents has lifted the lid on how the rich and powerful use tax havens to hide their wealth. The files were leaked from one of the world’s most secretive companies, a Panamanian law firm called Mossack Fonseca.
What are the Panama Papers?
The files show how Mossack Fonseca clients were able to launder money, dodge sanctions and avoid tax. In one case, the company offered an American millionaire fake ownership records to hide money from the authorities. This is in direct breach of international regulations designed to stop money laundering and tax evasion. It is the biggest leak in history, dwarfing the data released by the Wikileaks organisation in 2010. For context, if the amount of data released by Wikileaks was equivalent to the population of San Francisco, the amount of data released in the Panama Papers is the equivalent to that of India. You can find our special report on the revelations here.
Who is in the papers?
There are links to 12 current or former heads of state and government in the data, including dictators accused of looting their own countries. More than 60 relatives and associates of heads of state and other politicians are also implicated. The files also reveal a suspected billion-dollar money laundering ring involving close associates of Russia’s President, Vladimir Putin.  Also mentioned are the brother-in-law of China’s President Xi Jinping; Ukraine President Petro Poroshenko; Argentina President Mauricio Macri; the late father of UK Prime Minister David Cameron and three of the four children of Pakistan’s Prime Minister Nawaz Sharif. The documents show that Iceland’s Prime Minister, Sigmundur Gunnlaugsson, had an undeclared interest linked to his wife’s wealth. He has now resigned. The scandal also touches football’s world governing body, Fifa. Part of the documents suggest that a key member of Fifa’s ethics committee, Uruguayan lawyer Juan Pedro Damiani, and his firm provided legal assistance for at least seven offshore companies linked to a former Fifa vice-president arrested last May as part of the US inquiry into football corruption. The leak has also revealed that more than 500 banks, including their subsidiaries and branches, registered nearly 15,600 shell companies with Mossack Fonseca.  Lenders have denied allegations that they are helping clients to avoid tax by using complicated offshore arrangements. Chart showing the ten banks that requested most offshore companies for clients
How do tax havens work?
Although there are legitimate ways of using tax havens, most of what has been going on is about hiding the true owners of money, the origin of the money and avoiding paying tax on the money. Some of the main allegations centre on the creation of shell companies, that have the outward appearance of being legitimate businesses, but are just empty shells. They do nothing but manage money, while hiding who owns it. One of the media partners involved in the investigation, McClatchy.
What do those involved have to say?
Mossack Fonseca says it has operated beyond reproach for 40 years and never been accused or charged with criminal wrong-doing. Mr Putin’s spokesman Dmitry Peskov said the reports were down to “journalists and members of other organisations actively trying to discredit Putin and this country’s leadership”. Publication of the leaks may be down to “former employees of the State Department, the CIA, other security services,” he said. In an interview with a Swedish television channel, Mr Gunnlaugsson said his business affairs were above board and broke off the interview. Fifa said it is now investigating Mr Damiani, who told Reuters  that he broke off relations with the Fifa member under investigation as soon as the latter had been accused of corruption.
 Who leaked the Panama Papers?
The 11.5m documents were obtained by the German newspaper Sueddeutsche Zeitung and shared with the International Consortium of Investigative Journalists (ICIJ). The ICIJ then worked with journalists from 107 media organisations in 76 countries, including UK newspaper the Guardian, to analyse the documents over a year. The BBC does not know the identity of the source but the firm says it has been the victim of a hack from servers based abroad. In all, the details of 214,000 entities, including companies, trusts and foundations, were leaked. The information in the documents dates back to 1977, and goes up to December last year. Emails make up the largest type of document leaked, but images of contracts and passports were also released.
How can I read the papers?
So far, a searchable archive is not available at the moment. There is a huge amount of data, and much of it reportedly includes personal information (including passport details), and does not necessarily include those suspected of criminal activity. Having said that, there is plenty of information out there. The ICIJ has put together a comprehensive list of the main figures implicated here – you can also search by country. You can sign up on the ICIJ’s website for any major updates on the Panama Papers.

Panama Papers

The Panama Papers are 11.5 million leaked documents that detail financial and attorney–client information for more than 214,488 offshore entities.  The documents, which belonged to the Panamanian law firm and corporate service provider Mossack Fonseca, were leaked in 2015 by an anonymous source, some dating back to the 1970s. The leaked documents contain personal financial information about wealthy individuals and public officials that had previously been kept private. While offshore business entities are legal, reporters found that some of the Mossack Fonseca shell corporations were used for illegal purposes, including fraud, tax evasion, and evading international sanctions.

“John Doe”, the whistleblower who leaked the documents to German journalist Bastian Obermayer from the newspaper Süddeutsche Zeitung (SZ), remains anonymous, even to the journalists on the investigation. “My life is in danger”, he told them.  In a May 6 statement, John Doe cited income inequality as the reason for his action, and said he leaked the documents “simply because I understood enough about their contents to realise the scale of the injustices they described”. He added that he has never worked for any government or intelligence agency. He expressed willingness to help prosecutors if immune to prosecution. After SZ verified that the statement did come from the Panama Papers source, the International Consortium of Investigative Journalists (ICIJ) posted the full document on its website.
Because of the amount of data, SZ asked the ICIJ for help. Journalists from 107 media organizations in 80 countries analyzed documents detailing the operations of the law firm. After more than a year of analysis, the first news stories were published on April 3, 2016, along with 150 of the documents themselves. The project represents an important milestone in the use of data journalism software tools and mobile collaboration. The documents were quickly dubbed the Panama Papers. The Panamanian government strongly objects to the name; so do other entities in Panama and elsewhere. Some media outlets covering the story have used the name “Mossack Fonseca papers”.

 

In addition to the much-covered business dealings of British prime minister David Cameron and Icelandic prime minister Sigmundur Davíð Gunnlaugsson, the leaked documents also contain identity information about the shareholders and directors of 214,000 shell companies set up by Mossack Fonseca, as well as some of their financial transactions. Much of this information does not show anything more than prudent financial management. It is generally not against the law (in and of itself) to own an offshore shell company, although offshore shell companies may sometimes be used for illegalities.
The journalists on the investigative team found business transactions by many important figures in world politics, sports and art, and many of these transactions are quite legal. Since the data is incomplete, questions remain in many other cases; still others seem to clearly indicate ethical if not legal impropriety. Some disclosures – tax avoidance in very poor countries by very wealthy entities and individuals for example – lead to questions on moral grounds. According to The Namibian for instance, a shell company registered to Beny Steinmetz, Octea, owes more than $700,000 US in property taxes to the city of Koidu in Sierra Leone, and is $150 million in the red, even though its exports were more than twice that in an average month 2012–2015. Steinmetz himself has personal worth of $6 billion. Other offshore shell company transactions described in the documents do seem to have broken exchange laws, violated trade sanctions or stemmed from political corruption, according to ICIJ reporters. For example:
Uruguay has arrested five people and charged them with money-laundering through Mossack Fonseca shell companies for a Mexican drug cartel. Ouestaf, an ICIJ partner in the investigation, reported that it had discovered new evidence that Karim Wade received payments from DP World (DP). He and his long-time friend were convicted of this in a trial that the United Nations and Amnesty International said was unfair and violated the defendants’ rights. The Ouestaf article does not address the conduct of the trial, but does say that Ouestaf journalists found Mossack Fonseca documents showing payments to Wade via a DP subsidiary and a shell company registered to the friend. Named in the leak were 12 current or former world leaders, 128 other public officials and politicians, and hundreds of other members of the elites of over 200 countries.Customers may open offshore accounts for any number of reasons, some of which are entirely legal but ethically questionable. A Canadian lawyer based in Dubai noted, for example, that businesses might wish to avoid falling under Islamic inheritance jurisprudence if an owner dies. Businesses in some countries may wish to hold some of their funds in dollars also, said a Brazilian lawyer. Estate planning is another example of legal tax avoidance.

American film-maker Stanley Kubrick had an estimated personal worth of $20 million when he died in 1999, much of it invested in the 18th-century English manor he bought in 1978. He lived in that manor the rest of his life, filming scenes from The Shining, Full Metal Jacket and Eyes Wide Shut there as well. Three holding companies set up by Mossack Fonseca now own the property, and are in turn held by trusts set up for his children and grandchildren. Since Kubrick was an American living in Britain, his estate would otherwise have had to pay taxes to both governments and might have been forced to sell the property to have the liquid assets to do so. Kubrick is buried on the grounds along with one of his daughters and the rest of his family still lives there.

Source : Wikipedia

ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں

ایک شکاری سے ایک ساحلی بستی کے لڑکے نے پوچھا استاد جی میں چھوٹے موٹے پرندے تو زندہ پکڑ لیتا ہوں مگر بگلہ آج تک نہیں پکڑ سکا۔ شکاری نے کہا یہ تو بہت آسان ہے۔ جب بھی تم کسی چٹان پر بگلہ بیٹھے دیکھو تو دبے پاؤں اس کے پیچھے جاؤ، سر پر موم بتی رکھ کے جلا دو۔ موم کے پگھلتے قطرے بگلے کی آنکھوں میں پڑنے سے وہ نابینا ہو جائے گا۔ اس کے بعد آرام سے گردن سے پکڑو اور تھیلے میں ڈال لو۔ لڑکے نے پوچھا استاد جی ایک بات تو بتاؤ۔ جب میں بگلے کے اتنا نزدیک پہنچ جاؤں تو پھر سر پر موم بتی رکھنے کی کیا ضرورت۔ ڈائریکٹ گردن کیوں نہ دبوچ لوں؟ شکاری نے کہا کہ بات تو تیری ٹھیک ہے بچے پر اس طرح بگلہ پکڑنا کوئی فنکاری تو نہ ہوئی…
دنیا کے بیشتر ممالک میں جب بھی کوئی مالی و اخلاقی اسکینڈل سامنے آتا ہے تو عام طور سے ملکی ادارے ہی اس کی تحقیقات کرتے ہیں۔ جیسے امریکا میں ایف بی آئی، اسرائیل میں پولیس بیورو، برطانیہ میں اسکاٹ لینڈ یارڈ، بھارت میں سی بی آئی۔ بھلے کوئی کلنٹن ہو، ایریل شیرون ہو، ٹونی بلیئریاراجیو گاندھی۔
یہ بھی ہو سکتا تھا کہ وزیرِ اعظم نواز شریف پانامہ لیکس کی چھان بین کا کیس نیب کے حوالے کر دیتے۔ آخر نیب برسوں سے سیاستدانوں، سابق جرنیلوں، بیوروکریٹس، تاجروں اور صنعت کاروں کے معاملات کی چھان بین کر ہی رہی ہے۔ کئی مقدمات کو منطقی انجام تک بھی پہنچا چکی ہے۔ اس کے پاس چھان بین کا ضروری انفراسٹرکچر بھی ہے۔
اگرچہ پانامہ لیکس سے چند ہفتے پہلے میاں صاحب نے نیب کو سخت سست بھی سنائی تھیں اور یہ تک کہا تھا کہ نیب جس طرح تاجر طبقے کو ہراساں کر رہی ہے اس کے بعد ملکی و غیر ملکی مخیئر پاکستان میں سرمایہ کاری سے ہچکچا رہے ہیں اور افسر ضروری فائلوں پر دستخط سے بھی گھبرا رہے ہیں۔ اپنے تحفظات کے باوجود اگر وزیرِ اعظم پانامہ کیس کی چھان بین کا کام نیب کے حوالے کر دیتے تو حزبِ اختلاف بھی ایک خود مختار آئینی ادارے کے ہاتھوں اس کیس کی چھان بین کی بہت زیادہ مخالفت نہ کر پاتی۔ اس کام کے لیے ایف آئی اے بھی ایک موزوں ادارہ ہے مگر اس کی مثال میں اس لیے نہیں دے رہا کیونکہ ایف آئی اے وزارتِ داخلہ کے تحت ہے اور وزیرِ داخلہ تقریباً نائب وزیرِ اعظم ہیں۔
مگر میاں صاحب نے کسی وجہ سے نیب کا راستہ نہیں اپنایا۔ انھوں نے پہلے خود ہی قوم سے بعجلت خطاب میں اپنی صفائی پیش کرتے ہوئے پانامہ لیکس کی گیند کو کسی ریٹائرڈ جج کے حوالے کرنے کی کوشش کی۔ جب بقول وزیرِداخلہ چوہدری نثار علی خان سپریم کورٹ کے دو سابق چیف جسٹسوں سمیت پانچ ججوں نے یکے بعد دیگرے پانامہ لیکس کا گرم آلو پکڑنے سے انکار کر دیا تو پھر سکینڈل کا فٹ بال کھلے میدان میں چھوڑ دیا گیا۔ یوں بھانت بھانت کی فرمائشی ککیں اس فٹ بال پر پڑنا شروع ہو گئیں۔ عمران خان، اسفند یار ولی اور سراج الحق وغیرہ کی ضد ہے کہ تحقیقاتی کمیشن سپریم کورٹ کے موجودہ چیف جسٹس اور دیگر برادر ججوں پر مشتمل ہو۔ جب کہ چیف جسٹس نے بھی اشارہ دیا کہ عدالت کا کام مقدمہ سنناہے۔ چھان بین انتظامی اداروں کا کام ہے۔
حکومت نے معاملے کی سنجیدگی کی شدت اپنے تئیں کم رکھنے کے لیے کم از کم دو ہفتے گیند کو کھیلنے کے بجائے اسے الزامی آسٹرو ٹرف پر ڈفلیکٹ کرنے یا ادھر ادھر باؤنڈری لائن سے باہر پھینکنے میں ضایع کر دیے اور پھر چار و ناچار عدالتِ عظمیٰ سے دوبارہ مدد لینے کا فیصلہ ایسے کیا جیسے بھولے کو اس کا باپ ٹیکہ لگوانے کے لیے کھینچتا ہوا کمپاؤنڈر تک لے جائے۔
اس دوران تجویزاتی میچ میں غیر سیاسی فریق بھی اپنا حصہ ڈالنے لگے۔ جیسے سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ پانامہ لیکس کی تحقیقات کے لیے صدارتی آرڈیننس کے تحت نیشنل ٹاسک فورس تشکیل دی جائے جو اقوام متحدہ کے کنوینشن برائے انسداد بدعنوانی کے تحت جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم بنا کر بیرونی دنیا سے شواہد جمع کر سکے۔ پیپلز پارٹی سے وابستہ کئی نام بھی چونکہ پانامہ لیکس کا حصہ ہیں لہذا حزبِ اختلاف کی دیگر جماعتوں کے برعکس پیپلز پارٹی کھل کے نہ تو کوئی آزادانہ موقف اپنا سکتی ہے اور نہ خاموش رہنے کی پوزیشن میں ہے۔ چنانچہ اس نے درمیانی راستہ چنا۔ وہ ایک پارلیمانی کمیشن کے ذریعے تحقیقات کی حامی ہے جسے مالیاتی امور کے فورنزک ماہرین کا تعاون حاصل ہو۔
مسلم لیگ ن کی جانب سے معاملے کو الزامیہ و جوابی الزامیہ دھول میں چھپاتے ہوئے شائد یہ بھی خیال ہو کہ حزبِ اختلاف کا کنفیوژن ایک طرح سے اس کے حق میں جائے گا۔ نہ اپوزیشن کسی ایک طریقے پر متفق ہو گی نہ تحقیقات کی رادھا ناچے گی۔ دوسری جانب اپوزیشن بھی اس سارے مسئلے کو مالیاتی تکنیکی انداز سے دیکھنے کے بجائے نواز شریف پر دباؤ ڈالنے کے ایک سنہری موقع کی طرح استعمال کر رہی ہے۔
سیدھی سیدھی بات ہے کہ وزیرِ اعظم کے خاندان پر آنے والے حرف کی چھان بین ہو تا کہ یہ حرف دھل سکے۔ مگر میزبانی کی نیت نہ ہو تو ایک سادہ سی بات کو بھی جلیبی بنایا جا سکتا ہے۔ بالکل اس میزبان کی طرح جس نے ایک بن بلائے مہمان سے پوچھا چائے پیجئے گا؟ مہمان نے کہا جی پی لیں گے۔ میزبان نے کہا کپ میں یا گلاس میں۔ مہمان نے کہا کپ میں۔ میزبان نے کہا کپ پلاسٹک کا بھی ہے اور چائنا کلے کا بھی۔ مہمان نے کہا چائنا کلے ٹھیک رہے گا۔ میزبان نے کہا میڈ ان پاکستان ٹی کپ میں یا برٹش میڈ میں۔ مہمان نے کہا برٹش چل جائے گا۔ میزبان نے کہا برٹش ٹی سیٹ بھی میرے پاس دو طرح کے ہیں سادہ بھی اور پھولدار بھی۔ میزبان نے کہا پھولدار اچھا لگے گا۔ میزبان نے کہا بس جیسے ہی باورچی آتا ہے میں چائے بنواتا ہوں۔ مہمان نے کہا مجھے بھی جانے کی کوئی جلدی نہیں۔
شائد مسلم لیگ ن بھی حزبِ اختلاف کو پانامہ کپ میں ایسی ہی چائے پیش کرنا چاہ رہی ہے۔ اب جب کہ فوج نے کسی باورچی کا انتظار کیے بغیر اپنے کچن کی صفائی شروع کر دی ہے۔ لگتا ہے سویلینز کو بھی اپنا خانساماں خود ہی بننا پڑے گا۔ آپس کی بات تو یہ ہے کہ میں نے منیرؔ نیازی کے بڑے بڑے عاشق دیکھے مگر پچھلے پینتیس برس میں نواز شریف جیسا نہیں دیکھا جو منیرؔ کی شاعری محض پسند ہی نہیں کرتے بلکہ اسے روزمرہ کاروبارِ مملکت کا حصہ بھی بنا کے رکھتے ہیں۔
ضروری بات کہنی ہو کوئی وعدہ نبھانا ہو
اسے آواز دینی ہو، اسے واپس بلانا ہو
مدد کرنی ہو اس کی، یار کی ڈھارس بندھانا ہو
بہت دیرینہ رستوں پر کسی سے ملنے جانا ہو
بدلتے موسموں کی سیر میں دل کو لگانا ہو
کسی کو یاد رکھنا ہو، کسی کو بھول جانا ہو
ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں ہر کام کرنے میں

وسعت اللہ خان

ابھی فیصلہ نواز شریف کے ہاتھ میں ہے

پانامہ لیکس کی ہنگامہ خیزی جاری ہے۔ عمران خان قوم سے پرائیویٹ خطاب کر
چکے ہیں۔ اس سے پہلے وزیراعظم نواز شریف نے بھی اسی قوم سے سرکاری خطاب کیا تھا۔ اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ اور ان کی پاکستان پیپلزپارٹی اپنے تئیں نواز شریف اور ان کی حکومت پر تنقید کر رہے ہیں۔ عمران خان استعفیٰ مانگتے ہیں جب کہ پیپلزپارٹی جوڈیشل کمیشن بن جانے پر راضی ہے۔

دیگر سیاسی جماعتیں ایک حد سے آگے نہیں بڑھنا چاہتیں۔ عین ممکن ہے عمران اگر رائیونڈ میں دھرنا دینے چل پڑیں تو نواز شریف دیگر سیاسی جماعتوں کو ایک بار پھر قائل کر لیں کہ جمہوریت خطرے میں ہے اس لیے وہ حکومت کا ساتھ دیں۔ پارلیمنٹ کا گذشتہ روز غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی ہونے والا اجلاس پھر سے بلایا جا سکتا ہے جو غیر معینہ مدت تک جاری رہ سکتا ہے اگرچہ اس بار یہ مشکل لگتا ہے۔ پرویز رشید کہتے ہیں کہ انھوں نے عمران کا پلان ون اور ٹو دیکھ لیا، دھرنا ٹو بھی دیکھ لیں گے۔

ہماری سرزمین بریکنگ نیوز کے لیے جتنی زرخیز ہے غالباً اتفاقات کے لیے بھی اتنی ہی پُرتاثیرہے۔ یہ محض ’’اتفاق‘‘ہی تو تھا کہ حسین نواز نے اچانک نامور اینکرز کو انٹرویو دے ڈالے۔ پھر یہ بھی ’’اتفاق‘‘ ہی ہے کہ ایک دن اچانک پانامہ لیکس سامنے آگئیں اور دنیا کے بیشتر ملکوں میں ہلچل مچ گئی۔ آئس لینڈ کے وزیراعظم کو گھر جانا پڑا، برطانیہ کے وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون کو اپنے ٹیکس ریٹرنز سامنے لانے پڑے جب کہ ان سے استعفے کی ڈیمانڈ ابھی تک جاری ہے۔

یہ بھی ’’اتفاق‘‘ ہی ہے کہ اختلاف رائے کے باوجود ہمارے وزیراعظم نے اپنے بچوں کی صفائی دینے کے لیے قوم سے خطاب کرنے کو ترجیح دی۔ اور ایسے ہی اتفاقات میں ایک اتفاق یہ بھی ہے کہ وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے اس حلفیہ بیان میں جسے عدلیہ اس بنیاد پر کالعدم قرار دے چکی ہے کہ وہ ان سے دباؤ میں لیا گیا۔ سعید احمد نامی ایک شخص کا نام موجود تھا جو حال مقیم اسٹیٹ بینک اور عہدہ ان کا ڈپٹی گورنر ہے۔

کچھ اتفاقات ایسے ہوئے ہیں جو انسان کو پریشان کر دیتے ہیں۔ اسحاق ڈار سے جب دباؤ ڈال کر وہ تحریر لی گئی جس میں منی لانڈرنگ کا اعتراف کیا گیا تھا تو پھر اس میں سعید احمد کا نام شامل کرنا کیوں ضروری تھا۔ مجھے حیرت اس لیے ہوئی کہ سعید احمد نے اسحاق ڈار سے اپنی دیرینہ دوستی کا اعتراف کیا ہے۔ دباؤ میں بھی کہیں کسی دوست کو پھنسانا میر ی سمجھ میں نہیں آیا۔ بڑے لوگوں کی باتیں بھی بڑی ہوتی ہیں۔ ممکن ہے وفاقی وزیرخزانہ نے دباؤ کے تحت سعید احمد کا نام اس کالعدم تحریر میں شامل کر لیا ہو اور پھر انھیں خیال آیا ہو کہ اب اس دوست کو ڈپٹی اسٹیٹ بینک کا عہدہ دے کر تلافی کر لی جائے۔ اس سے یہ مطلب اخذ نہ کیا جائے کہ سعید احمد اس عہدے کے اہل نہیں تھے یا نہیں ہیں۔
نواز شریف کو پانامہ لیکس پر قوم سے خطاب کرنا چاہیے تھا یا نہیں، بحث کافی پرانی ہو چکی ہے۔ میرے خیال میں نہیں کرنا چاہیے تھا کیونکہ جب وزیراعظم اپنے بچوں کی جائیدادوں اور آف شور کمپنیوں کی وضاحت دینے کے لیے خود قوم کے سامنے آگئے تو معاملے میں اور زیادہ جان پڑ گئی۔ حکومت کے لیے بہتر تھا اور اب بھی ہے کہ وہ اس معاملے پر میڈیا سے بات کرنے کے لیے کسی ایک شخص کی ڈیوٹی لگا دے۔ کیونکہ جتنے زیادہ لوگ بات کریں گے اتنی زیادہ باتیں ہوں گی۔ اس کا سارا نقصان حکومت کو ہو گا۔ کوئی یہ دعویٰ کرے کہ حکومتی صفوں میں پریشانی نہیں ہے تو وہ یقیناً احمقوں کی جنت میں رہتا ہے۔ نواز شریف نے ترکی کا دورہ منسوخ کر دیا ہے، اندرون ملک بھی ان کی مصروفیات نہ ہونے کے برابر ہیں۔
اس سے پہلے وہ دورہ امریکا ملتوی کر چکے ہیں لیکن اس کی وجہ گلشن اقبال پارک لاہور میں ہونے والا خوفناک دھماکا تھا۔ پانامہ لیکس کا کرائسز ایسا ہے کہ اس سے نکلنا آسان نہیں ہوگا۔ ایک فہرست تو وہ ہے جو سامنے آچکی ہے۔ ایک آنے والی فہرست کی بھی بازگشت ہے جس میں 470 مزید پاکستانیوں کی شمولیت کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے۔ ظاہر ہے اس آنے والی فہرست نے بھی اشرافیہ کے کئی لوگوں کو پریشان کر رکھا ہوگا۔ کئی کی نیندیں اڑ چکی ہوں گی۔
نواز شریف اب تک خوش قسمت رہے ہیں۔ 126 دن کے دھرنے کے باوجود وہ پہلے سے زیادہ طاقتور ہو کر نکلے۔ پانامہ لیکس کے آنے سے پہلے کوئی تصور بھی نہیں کر سکتا تھا کہ وزیراعظم یا ان کی حکومت کو دوبارہ کوئی مسئلہ درپیش ہو گا۔ راوی سب چین لکھ رہا تھا۔ ماضی میں عدالتوں سے ریلیف کے مقابلے میں بھی نواز شریف ہی سب سے زیادہ خوش قسمت ثابت ہوئے ہیں۔ اعتزاز احسن نے کل پارلیمنٹ میں خطاب کرتے ہوئے کاروباری معاملات میں بھی نواز شریف اور ان کے بچوں کو خوش قسمت قرار دیا۔ یہ ہوتا ہے جب قسمت ساتھ دے تو مٹی بھی سونا بن جاتی ہے۔ اعتزاز کے بقول اب تک یہی حالت رہی ہے۔ نواز شریف موجودہ کرائسز سے نکل گئے تو پھر ان کے مخالفین یہ کہیں لکھ لیں کہ وہ اور ان کا خاندان تاحیات اس ملک کے حکمران رہیں گے۔
نوازشریف لکی ہیں تو عمران کی قسمت کے بھی کیا کہنے۔ پی ٹی آئی پے درپے غلطیوں کی وجہ سے اپنی مقبولیت کھو رہی تھی۔ لوگوں کا اعتماد اس پارٹی پر سے اٹھ رہا تھا۔ مجھے لگتا تھا کہ پیپلزپارٹی دوبارہ اپنی جگہ بنانے میں کامیاب ہو جائے گی۔ پانامہ لیکس نے کپتان کی سیاست میں پھر سے جان ڈال دی۔ عمران یہ سمجھتے ہیں کہ اس سے بہتر موقع ان کے ہاتھ نہیں آئے گا۔ ان کا مقابلہ البتہ نوازشریف سے ہے۔ یہ ماننا پڑے گا کہ نواز شریف آخر تک ہار نہیں مانتے۔ کپتان کو اگر یقین ہے کہ وہ اس بار میاں صاحب کو گرا لیں گے تو دوسری طرف بھی یہ امید ہو گی کہ ایک بار پھر اس بحران سے نکل آئیں گے۔
کپتان نے اپنے پتے سیدھے کر لیے ہیں۔ پارٹی الیکشن ملتوی کر کے ساری توجہ پانامہ لیکس پر مبذول کر لی ہے۔ سوال یہ ہے کہ نواز شریف کے پاس کیا آپشنز ہیں۔ فوری حل تو یہ ہو سکتا ہے کہ وہ قوم سے ایک بار اور خطاب کریں۔ میاں صاحب یہ موقف اختیار کریں کہ ان کی فیملی نے کوئی غیر قانونی کام نہیں کیا لیکن چونکہ ان کے بچوں کا نام آف شور کمپنیوں میں آیا ہے اس لیے وہ سمجھتے ہیں کہ فوری الیکشن کرا کے فریش عوامی مینڈیٹ لیا جائے۔
دوسرا ممکنہ حل یہ ہو سکتا ہے کہ وہ اپوزیشن کے ساتھ یہ معاہدہ کر لیں کہ 5سالہ مدت پوری کرنے کے بجائے وہ 4سالہ مدت کے بعد الیکشن کرادیں گے۔ جس نواز شریف کو میں جانتا ہوں وہ البتہ ایسا نہیں کرے گا۔ کپتان نے تہیہ کر رکھا ہے کہ وہ رائیونڈ کا ہر صورت گھیراؤ کریں گے۔ اس سسٹم نے چلنا ہے تو پھر ایک ہی حل رہ جاتا ہے کہ اس بار اعلیٰ عدلیہ اپنا کردار ادا کرے۔ چیف جسٹس آف پاکستان کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیشن بن گیا تو سب مطمئن ہو جائیں گے۔ اتفاقات کا مزید سہارا لیا گیا تو پھر کوئی انہونی بھی ہو سکتی ہے۔
ابھی وقت ہے نواز شریف کوئی فیصلہ کر لیں۔ فیصلے کا اختیار ان کے ہاتھ سے نکل گیا تو پھر کچھ بھی ہو سکتا ہے۔
ایاز خان

کیوں مذاق کرتے ہو؟

کسی اہم مسئلے کو حل کرنے کے بجائے دفنانا زیادہ آسان ہوتا ہے اور اس سے بھی زیادہ آسان یہ ہے کہ مسئلے پر کمیشن بٹھا دو ۔ یقین نہ آئے تو پچھلے 70 برس میں بننے والے تحقیقاتی و اصلاحی کمیشنوں کا حال دیکھ لیں۔ بیشتر کی رپورٹیں اہم قومی مفاد کے رازدارانہ ڈیپ فریزر میں محفوظ ہیں۔ اگر تاریخِ پاکستان کو 25 برس فاسٹ فارورڈ کر لیا جائے تو بھی نتیجہ وہی ہے۔
1972 میں حمود الرحمان کمیشن نے مشرقی پاکستان کی علیحدگی کے ذمہ داروں کا تعین نام لے کر کیا۔ بھارتی جریدے انڈیا ٹوڈے نے 30 برس بعد ( سنہ 2002 ) کمیشن کی رپورٹ شائع کردی مگر حکومتِ پاکستان نے آج تک اس لیک رپورٹ کو بھی نہیں مانا۔
اوجڑی کیمپ کس کی غفلت سے پھٹا؟ اس بابت جونیجو حکومت نے دو تحقیقاتی کمیٹیاں بنائیں۔ ایک کی رپورٹ کبھی نہیں آئی اور لیفٹننٹ جنرل ( ریٹائرڈ ) عمران اللہ کی قیادت میں دوسری کمیٹی نے اسے محض ایک حادثہ قرار دیا۔ پھر بھی جونیجو حکومت اوجڑی کیمپ کی طرح اڑا دی گئی اور جنرل عمران اللہ کی بے ضرر رپورٹ بھی کبھی شائع نہ ہو سکی۔
جنرل ضیا الحق سترہ اگست 1988 کو فضائی حادثے میں ہلاک ہوئے۔ کہیں پانچ برس بعد ان کے فکری وارث میاں نواز شریف نے جسٹس شفیع الرحمان کی قیادت میں انکوائری کمیشن بنایا۔ آج 23 برس بعد بھی کمیشن رپورٹ سربمہر ہے۔
بے نظیر بھٹو نے انٹیلی جینس ایجنسیوں کو کسی ضابطہ کار کے تحت لانے کے لئے سابق ایئر چیف مارشل ذوالفقار علی خان کی سربراہی میں ایک کمیشن بنایا۔ مگر ذوالفقار کمیشن کی اس طرح کی بے ضرر سفارشات پر بھی عمل نہ ہو سکا کہ ایک بااختیار مشترکہ انٹیلی جنیس کمیٹی ایجنسیوں کی کارکردگی پر نظر رکھے اور آئی ایس آئی کا سربراہ باری باری تینوں مسلح افواج سے لیا جائے ۔
 
جولائی 2007 میں لال مسجد آپریشن میں 103 ہلاکتیں ہوئیں۔ جسٹس شہزادو شیخ کی سربراہی میں قائم عدالتی کمیشن نے واقعہ کے چھ برس بعد مارچ 2013 میں رپورٹ مکمل کی۔ سپریم کورٹ نے رپورٹ کا ایک حصہ اور دستاویزات سربمہر کردیں اور باقی رپورٹ کی جزوی اشاعت کی اجازت دے ۔ مگر یہ جزوی اشاعت بھی نہ ہو پائی۔
17 جون 2014کو ماڈل ٹاؤن لاہور میں پولیس فائرنگ سے پاکستان عوامی تحریک کے چودہ کارکن ہلاک اور 80 سے زائد زخمی ہوئے۔ لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس باقر علی نجفی کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیشن نے دو ماہ کے اندر رپورٹ حکومتِ پنجاب کے حوالے کردی ۔ اگرچہ ایک نیوز چینل نے اپنے طور پر یہ رپورٹ لیک کردی مگر حکومتِ پنجاب نے آج تک یہ رپورٹ باضابطہ جاری نہیں کی۔
دو مئی 2011 کو اسامہ بن لادن ایبٹ آباد میں امریکی کمانڈو ایکشن میں ہلاک ہوا۔ ڈیڑھ ماہ بعد جسٹس جاوید اقبال کی سربراہی میں چار رکنی تحقیقاتی کمیشن بنایا گیا۔ الجزیرہ چینل نے تین سو چونتیس صفحات کی کمیشن رپورٹ فاش کردی مگر حکومت آج بھی کڑک مرغی کی طرح اس پر بیٹھی ہے۔
جبری گمشدگی کے معاملے میں گذشتہ چھ برس میں جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال ، جسٹس منصور عالم اور جسٹس غوث بخش کی سربراہی میں تین عدالتی کمیشنوں کے علاوہ کئی چھان پھٹک کمیٹیاں اور ٹریبونلز تشکیل دئیے گئے۔ دو سابق چیف جسٹسوں نے اس انسانی المیے میں ذاتی دلچپسی بھی لی۔ مگر زندہ گواہیوں کے باوجود ذمہ داروں کی پکڑ تو خیر کیا ہوتی ان کا ٹھیک سے تعین بھی نہ ہو سکا۔
 
معروف صحافی سلیم شہزاد کی لاش 29 مئی 2011 کو منڈی بہاؤ لدین کی ایک نہر سے ملی۔ سپریم کورٹ کے جج ثاقب نثار کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیشن نے سلیم شہزاد کی 33 ہزار ای میلز کا ریکارڈ چھان مارا۔ 23 سماعتوں میں 41 گواہوں کو قلم بند کیا۔ مگر رپورٹ کاخلاصہ کم وبیش یہ تھا کہ یہ سلیم شہزاد کا قتل کسی قاتل نے کیا ہے لیکن ٹھیک ٹھیک نشاندہی بوجوہ محال ہے۔
اور اب سرکردہ صحافی حامد میر پر قاتلانہ حملے کے دو برس بعد وہ رپورٹ سوشل میڈیا پر لیک ہوگئی ہے جو جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں سہہ ججی کمیشن نے پانچ ماہ پہلے حکومت کے حوالے کی تھی۔ اس رپورٹ میں بھی یہی نتیجہ اخذ کیا گیا کہ ناقص تفتیش کے سبب حملہ آوروں کا تعین مشکل ہے۔ مگر حکومت رپورٹ کی باضابطہ اشاعت سے آج بھی ڈر رہی ہے۔
تازہ ترین یہ کہ میاں نواز شریف نے پانامہ پیپرز کے پانی سے اپنا دودھ الگ کرنے کے لئے ایک عدالتی کمیشن کے قیام کا عندیہ دیا ہے۔ مشکل یہ ہے کہ اب تک کوئی جج راضی نہیں ہو رہا۔
کیوں مذاق کرتے ہو گرمیوں کی شاموں میں
اس طرح تو ہوتا ہے ، اس طرح کے کاموں میں
( شعیب بن عزیز مجھے معاف کردیجئے گا)
وسعت اللہ خان
بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

لکی پاناما سرکس

نہ ہیکنگ ہوتی، نہ موساک فونسیکا کا جار ٹوٹتا، نہ آئس لینڈ کے وزیرِ اعظم
استعفیٰ دیتے، نہ ہی پاکستانی حزبِ اختلاف کو نواز شریف کا استعفی طلب کرنے کے لیے ایک اور مثال دستیاب ہوتی۔ ویسے استعفیٰ طلب کرنے کے لیے کسی پاناما پیرز لیکس کی ضرورت تو نہیں ۔ اگست 2014 میں جب ڈی چوک میں 126 روزہ گو نواز گو دھرنا شروع ہوا تو کون سے پاناما پیپرز تھے؟ بس کسی نے کان میں یہی تو کہا تھا ناں کہ خان صاحب الیکشن میں 35 پنکچر لگا کے تحریکِ انصاف کا انتخابی ٹائر چوری کر لیا گیا ہے لہذا میاں نوں پے جاؤ اور خان صاحب میاں نوں پے گئے۔

اگر اسی دھرنے کے کوئی کتابیں پڑھنے والا مشیر ہوتا تو خان صاحب کے کان میں کہہ سکتا تھا کہ نواز شریف کی انتخابی دھاندلی تو کچھ بھی نہیں۔ عالمی بینکنگ کے معروف ماہر ماہر ریمنڈ بیکر کی کتاب ’ کیپٹل ازمز اکیلیز ہیل: ڈرٹی منی، اینڈ ہاؤ ٹو رینیو دی فری مارکیٹ سسٹم‘ پڑھ لیجیے۔ اس میں لکھا ہے کہ لندن میں مے فئیر کے فلیٹس برٹش ورجن آئی لینڈ میں رجسٹرڈ تین فرنٹ کمپنیوں ’نیسکول، نیلسن، شمروک سکسٹی ایٹ‘ اور چینل آئی لینڈ میں رجسٹرڈ ’چنڈرون جرسی پرائیویٹ لمیٹڈ‘ کے پردے میں خریدے گئے۔ خان صاحب اگر بروقت کتاب پڑھ لیتے تو انھیں پاناما لیکس کا چھینکا اتفاقاً ٹوٹنے اور دو برس بعد ایک اور دھرنے کی دھمکی کی ضرورت نہ ہوتی۔

  ڈی چوک دھرنے میں خان صاحب نے طاہر القادری اور تھرڈ ایمپائر سے پارٹنر شپ کی تھی۔ اب رائے ونڈ سٹیٹس کے باہر مجوزہ دھرنے میں پیپلز پارٹی سمیت حزبِ اختلاف کی پارلیمانی جماعتوں سے شامل ہونے کی اپیل کی ہے۔ کیسا لگے گا اگر رائے ونڈ دھرنے کے کنٹینر پر عمران خان، رحمان ملک، مولانا فضل الرحمان اور ڈاکٹر فاروق ستار ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے کرپشن کے خلاف جہاد کا عہد کر رہے ہوں؟ حالانکہ پاناما پیپرز میں صرف شریف خاندان کے علاوہ سیاسی، کاروباری، صنعتی، عدالتی اور ابلاغی طبقات سے متعلق 215 دیگر نام بھی ہیں مگر کسی نیوز چینل یا کرپشن مکاؤ تحریک کا فوکس ان پر نہیں۔ سیانے کہتے ہیں اشتہار اور چندے کی آس بری شے ہے ۔

رہی بات شریف برادران کی تو ان کی وکالت پرویز رشید کی قیادت میں وہی ماٹھی ٹیم کر رہی ہے جو ڈی چوک دھرنے میں کی جانے والی ہر تقریر کا جواب دینے کے لئے بنائی گئی تھی۔ الزامات کے بیل کو سینگوں سے پکڑنے کے بجائے ہر الزام کا توڑ جوابی کوسنوں میں تلاش کیا جا رہا ہے ۔ رہے وزیرِ اعظم تو ان کا منشور منیر نیازی کی یہ نظم ہے کہ ’ہمیشہ دیر کردیتا ہوں میں ہر کام کرنے میں‘  اسی لیے انھوں نے پاناما گیٹ کے بعد کی گئی صفائی تقریر میں جس ریٹائرڈ جج پر مبنی جانچ کمیشن بنانے کا اعلان کیا وہ جج اب تک نہیں ملا۔ وزیرِ اعظم یہ گیند سپریم کورٹ کے احاطے میں بھی پھینک سکتے تھے مگر پھر یہ خطرہ کہ سپریم کورٹ جانے کون سا جج نامزد کر ڈالے۔
سیاسی مسائل کو عدالتی فارمولے سے حل کرنا انوکی اور محمد علی کے بے جوڑ دنگل جیسا ہے۔ ویسے بھی بینکنگ اور فنانس ایسے رولر کوسٹرز ہیں کہ اچھے اچھے ماہرین کو دانتوں پسینہ آجاتا ہے۔ اگر یہ بھول بھلیاں اتنی سہل ہوتی تو آج سینکڑوں معزز پاکستانی لمبی لمبی جیلیں کاٹ رہے ہوتے۔ اسی لیے عمران خان ہوں کہ کوئی اور، اس بھول بھلیاں میں گھسنے کے بجائے پاناما گیٹ کے کاغذات سے میسر آگ پر جتنی دیر تلک سیاسی ہاتھ تاپ سکتا ہے تاپے گا۔ تب تلک خانہ 
بدوش کو سامنے کی پہاڑی پر کوئی اور جلتی لکڑی نظر آجاوے گی۔
وسعت اللہ خان
بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

کیا پانامہ لیکس بھی ’سازش‘ ہے؟

پاکستان کا شمار اُن چند ممالک میں ہوتا ہے جہاں روزانہ کی بنیاد پر ایک نیا
موضوع انگڑائی لیتا ہے اور پھر ڈرائنگ روم، دفاتر اور دوستوں کی محافل میں اُسی موضوع پر لوگ تجزیے کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ گزشتہ روز بھی ایسا ہی ہوا جب پانامہ پیپرز نے دنیا بھر کے ایسے سرمایہ داروں کی معلومات ریلیز کی جنہوں نے خفیہ طریقوں سے دولت کے انبار جمع کئے ہیں۔ ان دستاویزات میں پاکستانیوں سمیت دنیا بھر سے بڑے بڑے نام شامل ہیں جبکہ وزیراعظم نواز شریف کے خاندان کا ذکر بھی اِس فہرست میں کیا گیا ہے۔

اس سے پہلے ہم آپ کو یہ بتائیں کہ یہ سارا معاملہ کیا ہے اور کس نے کیا کیا کارنامے سرانجام دیئے، بہتر یہ ہوگا کہ پانامہ پیپرز کا تھوڑا سا تعارف پیش کیا جائے۔ پانامہ پیپرز کو کارپوریٹ سروسز فراہم کرنے والی موزیک فونیسکا نے ترتیب دیا ہے۔ موزیک فونیسکا لاء فرم ہے جس کے پوری دنیا میں 40 دفاتر ہیں۔ اس فرم کی بنیاد 1977ء میں جارگن موزیک نے رکھی۔ بعد میں رامن فونیسکا نے بھی اِس میں شمولیت اختیار کرلی۔ مزے کی بات یہاں یہ ہے کہ جارگن موزیک، ارحرڈ موزیک کا بیٹا ہے اور یہ بات انتہائی دلچسپ ہے کہ ارحرڈ موزیک نازی پارٹی کی آرمڈ ونگ کا حصہ رہ چکے ہیں، پھر بعد میں اُس نے امریکی سی آئی اے کیلئے کام شروع کردیا اور کیوبا کی جاسوسی کی۔ رامن فونیسک ایک ناولسٹ اور وکیل ہے۔ رامن فونیسک پانامہ کے صدر کا منسٹر کونسلر تھا اور پانامینسٹا پارٹی کا صدر تھا۔ رامن فونیسک کو مارچ 2016ء میں برازیلین آپریشن کار واش کی وجہ سے فارغ کر دیا گیا تھا۔ آپریشن کار واش منی لانڈرنگ کی تحقیقات کا مشن ہے جس کو برازیلین پولیس چلا رہی ہے۔

اب اِس کمپنی کو چلانے والے دونوں ہی حضرات متنازعہ شخصیت کے مالک ہیں، متنازعہ اِس لیے کہ انہوں نے اپنی پوری زندگی ایسے کاموں پر صرف کردی جو خفیہ طریقوں سے کیے جاتے رہے، لیکن کمال دیکھیے کہ آج اُن کی اولادیں دنیا بھر کے خفیہ طریقوں سے دولت جمع کرنے والوں کی تلاش کا کام کررہی ہیں، بلکہ ایک فہرست بھی جاری کردی ہے۔ پاکستان کے حالات اور یہاں ہونے والی بدعنوانی کو دیکھنے کے بعد ہم گمان ضرور کرسکتے ہیں کہ ان لیکس میں بہت حد تک حقیقت ہوسکتی ہے لیکن ہمیں یہ سمجھنے کی ضرورت ضرور ہے کہ کہیں ایسے متنازعہ مالکان کے فرم کی رپورٹ دودھ کی دھلی ہوسکتی ہے؟

چلیں ہم مان لیتے ہیں کہ پاکستان کے حکمراں خاندان نے ملکی دولت باہر بھجوائی لیکن ہمارے پڑوس بھارت کا کیا؟ کیا وہاں سب ایماندار ہیں؟ کیا وہاں بد عنوانی نہیں ہوتی؟ کیا وہاں کسی سیاست دان نے ملکی دولت باہر نہیں بھجوائی؟ جی کم از کم پانامہ لیکس تو ایسا ہی بتارہی ہیں، اگرچہ کچھ فنکاروں کا ذکر ضرور ہے جن میں امیتابھ بچن اور ایشوریا بچن کا نام سرفہرست ہے مگر سیاستدانوں کا نام اس فہرست میں شامل نہیں۔ یورپ والے بھی بڑے عجیب ہیں۔ پہلے ہمارے حکمرانوں کو خفیہ دولت جمع کرنے اور مغربی بنکوں میں محفوظ رکھنے کے طریقے بتاتے ہیں اور بعد میں خود ہی اُن کا بھانڈا پھوڑ دیتے ہیں۔ معذرت کے ساتھ لیکن ایسی عادتیں تو بازاری عورتوں کی ہوا کرتی ہیں۔
اِن لیکس میں جن اہم شخصیت یا اُن سے جڑے افراد کا نام شامل ہیں وہ یہ ہیں۔
وزیر اعظم پاکستان نواز شریف کے چار میں سے تین بچوں کا ذکر ہے۔
برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون کے والد کا ذکر ہے۔
روسی صدر پوٹن کے قریبی رفقا
چینی صدر کے بہنوئی
آئس لینڈ کے وزیراعظم سگمندر گنلاگسن (Sigmundur Gunnlaugsson)
سامراجی طاقتیں جس کسی قوم کے خلاف اقدام کرنا چاہتی ہیں تو سب سے پہلے میڈیا وار لڑی جاتی ہے۔ اگر مد مقابل قوت میڈیا وار کا شکار نہیں بنتی تو دوسرا مرحلہ معاشی پابندیوں کا ہوتا ہے اور تیسرا مرحلہ میدان جنگ کا ہے۔ جہاں یہ قوتیں اپنے ہتھیاروں کے زور سے جنگ جیتتی ہیں۔ لیکن گزشتہ کچھ عرصے سے ایک نیا ہتھیار میں سامنے لایا گیا ہے، ابھی کچھ ہی عرصے پہلے کی بات ہے جب دنیا بھر میں وکی لیکس کا چرچا تھا۔ ابھی اُن کی بازگشت ختم ہی ہوئی تھی کہ اچانک پانامہ لیکس میدان میں آگئی ہیں۔
جس طرح اوپر کہا کہ یہ عین ممکن ہے کہ جو کچھ اِن لیکس کے ذریعے بتایا گیا ہے وہ بالکل ٹھیک ہو کہ حکمراں خاندان اور دیگر سیاستدانوں نے ملکی دولت بیرون ملک بھجوائی ہو لیکن اِس کا ذمہ دار میں سیاستدانوں کے بجائے عوام کو سمجھتا ہوں۔ یقیناً آپ میں سے بہت لوگ حیران ہونگے کہ بھلا یہاں عوام کہاں سے آگئی۔ دیکھیئے جناب! چاہے بات ہو مسلم لیگ (ن) کی یا پاکستان پیپلز پارٹی کی۔ یہی وہ دونوں جماعتیں ہیں جنہوں نے جمہوری دور میں سب سے زیادہ وقت عوام پر حکمرانی کی ہے، اور جمہوریت میں حکومتیں عوامی ووٹ سے بنتی ہیں یہ کسی کو بتانے کی ضرورت ہرگز نہیں۔ پھر یہ بھی آج کی بات نہیں کہ دونوں ہی جماعتوں پر مسلسل کرپشن اور لوٹ مار کے الزامات لگتے رہے، لیکن اِن تمام تر الزامات کے باوجود عوام نے انہی جماعتوں کو ووٹ دیا اور اب بھی دیتے ہیں۔
یہ بھی ممکن ہے کہ آپ سوچ رہے ہوں کہ یہ پارٹیاں ووٹ سے نہیں بلکہ دھاندلی سے حکومت بناتی ہیں، اگر آپ کی یہ بات بھی مان لی جائے تب بھی قصوروار عوام ہی ہیں۔ آپ مزید سوال پوچھیں اِس سے پہلے ہی اِس سوال کا جواب بھی دے دیتے ہیں کہ اگر عوام واقعی یہ سمجھتی تھی کہ یہ جماعتیں دھاندلی سے حکومت میں آتی ہیں تو عوام نے خاموشی کیوں اختیار کیں؟
اِس لیے بہتر یہ ہے کہ حکومت اور سیاستدانوں کو کرپٹ اور چور کہنے سے پہلے آپ کو اور مجھے اپنے اپنے گریبانوں کو جھانکنے کی ضرورت ہے۔ اگر وہ کرپٹ ہیں تو ہم بھی کرپٹ ہیں کیونکہ ہم نے اپنے ذاتی مفادات کے لیے ایسے جماعتوں کو بار بار حکمرانی کا تاج پہنایا ہے۔ لہذا اگر آپ سمجھتے ہیں کہ ملک سے لوٹی ہوئی دولت باہر نہیں جائے تو کسی اور کو ٹھیک کرنے سے پہلے اپنا احتساب کیجیے۔ اگر آپ کو میری بات سے اختلاف ہے تو آئس لینڈ کے حالات کا جائزہ لے لیجیے جہاں کے وزیراعظم پر الزام لگنے کے بعد لوگوں کی بڑی تعداد وزیراعظم ہاوس کے باہر جمع ہوگئے ہیں اور اُن کا کہنا ہے کہ جب تک وزیراعظم استعفی نہیں دینگے اُس وقت تک اُن کا احتجاج جاری رہے گا۔
آخر میں ایک التماس اُن تمام سیاستدانوں اور تمام ہی ایسے افراد سے ہے جن کا نام پانامہ پیپرز میں ہے کہ اگر آپ ٹھیک ہے اور کبھی کوئی دولت بیرون ملک نہیں بھیجی تو فوری طور پر ثبوت فراہم کیے جائیں اور اگر ثبوت نہ دیے جاسکیں تو ایسے تمام لوگوں کے سامنے سینہ چوڑا کر کے آئیے گا اپنی بے گناہی کا ثبوت دیجیے، لیکن اگر آپ ایسا نہ کرسکیں تو خدارا عوام سے اپنے کیے کی معافی مانگیے، عوام سے بھی بڑھ کر رب سے معافی مانگیے کہ اُس نے آپ کو خلق خدا کی خدمت کا موقع دیا لیکن آپ نے یہ قیمتی موقع ضائع کردیا۔
فرمان نواز