ٹوکیو کے ایمان دار شہری

Tokyo-69347جاپانی دارالحکومت ٹوکیو کی پولیس نے کہا ہے کہ گذشتہ سال دیانت دار شہریوں نے ریکارڈ مقدار میں گم ہونے والی رقم حکام کے حوالے کی ہے۔ پولیس نے کہا ہے کہ اس دوران شہریوں نے تین کروڑ 20 لاکھ ڈالر کے مساوی کی گمشدہ رقم واپس کی۔ اس کے علاوہ گم ہونے والی دوسری اشیا میں چھتریاں، موبائل فون اور پالتو پرندے شامل ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ذاتی استعمال کی چیزوں کا حجم کم ہوتا جا رہا ہے اس لیے ان کا گم ہونا بھی آسان تر ہو گیا ہے۔ جاپان میں گم شدہ اشیا واپس کرنے کا ایک فائدہ ہے: اگر مالک نے تین ماہ کے اندر اندر آ کر اپنی چیز وصول نہ کی تو اس شخص کو دے دی جائے گی جسے ملی تھی!     1

تاہم حیرت انگیز طور پر بہت سے ایسے لوگوں نے جنھیں رقم ملی تھی، تین ماہ گزر جانے کے بعد بھی اسے لینے سے انکار کر دیا اور یوں شہر کی بلدیہ کے حصے میں 39 کروڑ ین آ گئے۔ گذشتہ سال سپورٹس نپون نامی چینل نے خبر دی تھی کہ ایک شخص نے ایک بیگ واپس کیا جس میں سوا لاکھ ڈالر کے برابر رقم کے نوٹ بھرے ہوئے تھے۔ ٹوکیو کو اپنے شہریوں کی دیانت داری پر فخر ہے، اور جاپان نے یہی نکتہ 2020 کے اولمپک کھیلوں کا میزبان بننے کی کامیاب مہم کے دوران بھی پیش کیا تھا۔ ٹوکیو آنے والے بہت سے سیاحوں نے بھی تصدیق کی ہے کہ ان کے کھوئے ہوئے بٹوے اور دوسری قیمتی چیزیں بعد میں مل گئیں۔

Advertisements

Troubled Waters: Conflict in the South China Sea explained

The South China Sea disputes involve both island and maritime claims among several sovereign states within the region, namely Brunei, the People’s Republic of China, the Republic of China, Malaysia, the Philippines, and Vietnam. Non-claimants want the South China Sea to remain as international waters, with the United States conducting “freedom of navigation” operations. There are disputes concerning both the Spratly and the Paracel islands, as well as maritime, areas near to sea, boundaries in the Gulf of Tonkin and elsewhere. There is a further dispute in the waters near the Indonesian Natuna Islands. The interests of different nations include acquiring fishing areas around the two archipelagos; the potential exploitation of crude oil and natural gas under the waters of various parts of the South China Sea, and the strategic control of important shipping lanes.
The Shangri-La Dialogue serves as the “Track One” exchange forum on security issues surrounding the Asia-Pacific region, including territorial disputes in the South China Sea. The Council for Security Cooperation in the Asia Pacific is the “Track Two” forum for dialogue on security issues.  In February 2016, President Obama initiated the U.S.-ASEAN Summit at Sunnylands for closer engagement with the Association of Southeast Asian Nations. Territorial disputes in the South China Sea were a major topic, but its joint statement, the “Sunnylands Declaration”, did not name the South China Sea, instead calling for “respect of each nation’s sovereignty and for international law”. Analysts believe it indicates divisions within the group on how to respond to China’s maritime strategy. In July 2016, the Permanent Court of Arbitration ruled against China’s territorial claims in Philippines v. China. China does not acknowledge the Court nor abide by its ruling.
The area may be rich in oil and natural gas deposits; however, the estimates are highly varied. The Ministry of Geological Resources and Mining of the People’s Republic of China estimate that the South China Sea may contain 17.7 billion tons of crude oil (compared to Kuwait with 13 billion tons). In the years following the announcement by the ministry, the claims regarding the South China Sea islands intensified. However, other sources claim that the proven reserve of oil in the South China Sea may only be 7.5 billion barrels, or about 1.1 billion tons. According to the US Energy Information Administration (EIA)’s profile of the South China Sea region, a US Geological Survey estimate puts the region’s discovered and undiscovered oil reserves at 11 billion barrels, as opposed to a Chinese figure of 125 billion barrels. The same EIA report also points to the wide variety of natural gas resource estimations, ranging from 190 trillion cubic feet to 500 trillion cubic feet, likely located in the contested Reed Bank”. The South China Sea is dubbed by China as the “second Persian Sea.” The state-owned China Offshore Exploration Corp. planned to spend 200 billion RMB (US$30 billion) in the next 20 years to exploit oil in the region, with the estimated production of 25 million metric tons of crude oil and natural gas per annum, at a depth of 2000 meters within the next five years.
The Philippines began exploring the areas west of Palawan for oil in 1970. Exploration in the area began in Reed Bank/Tablemount. in 1976, gas was discovered following the drilling of a well. However, China’s complaints halted the exploration. On 27 March 1984, the first Philippine oil company discovered an oil field off Palawan, which is an island province bordering the South China Sea and the Sulu Sea.  These oil fields supply 15% of annual oil consumption in the Philippines. The nine-dotted line was originally an “eleven-dotted-line,” first indicated by the then Kuomintang government of the Republic of China in 1947, for its claims to the South China Sea. After, the Communist Party of China took over mainland China and formed the People’s Republic of China in 1949. The line was adopted and revised to nine as endorsed by Zhou Enlai. The legacy of the nine-dotted line is viewed by some Chinese government officials, and by the Chinese military, as providing historical support for their claims to the South China Sea. In the 1970s, however, the Philippines, Malaysia and other countries began referring to the Spratly Islands as included in their own territory. On 11 June 1978, President Ferdinand Marcos of the Philippines issued Presidential decree No. 1596, declaring the Spratly Islands (referred to therein as the Kalayaan Island Group) as Philippine territory.
The abundant fishing opportunities within the region are another motivation for the claim. In 1988, the South China Sea is believed to have accounted for 8% of world fishing catches, a figure that has grown since then.[citation needed] There have been many clashes in the Philippines with foreign fishing vessels (including China) in disputed areas. China believes that the value in fishing and oil from the sea has risen to a trillion dollars. The area is also one of the busiest shipping routes in the world. In the 1980s, at least 270 merchant ships used the route each day. Currently more than half the tonnage of oil transported by sea passes through it, a figure rising steadily with the growth of Chinese consumption of oil. This traffic is three times greater than that passing through the Suez Canal and five times more than the Panama Canal. As of 1996, Vietnam, the Philippines, Brunei, Malaysia and other countries asserted claims within the Chinese nine-dotted line The United Nations Convention on the Law of the Sea, which came into effect on 16 November 1994, resulted in more intense territorial disputes between the parties. As of 2012, all of the Paracel Islands are under Chinese control.

Independent analysis 

The position of China on its maritime claims based on UNCLOS and history has been ambiguous, particularly with the nine dash line map. For example, in its notes verbales in 2011, the first phrase stated that China has undisputed sovereignty over the islands and the adjacent waters, suggesting China is claiming sovereignty over its territorial waters, a position consistent with UNCLOS. However, the second phrase in its notes verbales stated that China enjoys sovereign rights and jurisdiction over the relevant waters along with the seabed and subsoil contained in this region, suggesting that China is claiming sovereignty over all of the maritime space (includes all the geographic features and the waters within the nine dash line). The third phrase indicates support for basing their claims on historical basis as well. Recently in its notes verbales in 2011, China has explicitly stated that it claims the territorial waters and all of the islands in which each island has its own exclusive economic zone and continental shelf.  A major problem with this claim is that it fails to distinguish between geographic features considered as “islands” or “rocks” under UNCLOS.[105] The vast majority of international legal experts have concluded that China’s claims based on historical claims is invalid. Many ambiguities arise from the notion of historical claims as a basis for claiming sovereignty and is inherently ambiguous.
Japanese scholar Taoka Shunji criticized Japanese Prime Minister Shinzo Abe for trying to falsely portray China as a threat to Japan and that it was invading its neighbors like the Philippines. He pointed out that the Spratly islands were not part of the Philippines when the US acquired the Philippines from Spain in the Treaty of Paris in 1898, and the Japanese-ruled Taiwan itself had annexed the Spratly islands in 1938, a move that was never challenged by the US-ruled Philippines, which never asserted that it was their territory. He also pointed out that other countries did not need to do full land reclamation since they already controlled islands and that the reason China engaged in extensive land reclamation is because they needed it to build airfields since China only has control over reefs.

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Euro 2016 – Who are the best and worst

T Captain Aron Gunnarsson says Iceland will take inspiration from fellow underdogs Wales when they take on hosts France in the quarter-finals on Sunday — and the tiny country even believe they can win Euro 2016 outright. Iceland, with a population of just 330,000, have produced a series of astonishing displays to reach the tournament’s last eight, including a comfortable 2-1 win over England in the second round. File photos of team Iceland .ReutersFile photos of team Iceland .Reuters
Wales, who are also making their European championship debut, upset Belgium 3-1 to reach the semi-finals on Friday. Asked if their performance inspired the Icelanders, midfielder Gunnarsson told reporters on Saturday: “Yes, of course. They were not the favourites to reach that far in and we weren’t either. It is a joy to watch. “I think Wales are a force to be reckoned with. They have a good squad of players and a togetherness and they are showing a great attitude and desire to win football matches and I think we can definitely learn from them.”
Gunnarsson, who plays his club football in Wales for Cardiff City, added; “If you didn’t believe (we could win Euro 2016) we wouldn’t be here, it’s a simple answer. In this group we have fought hard to get where we are and we will keep on fighting.”Iceland have only lost once in their last 10 competitive matches and are one of two teams, along with Wales, to have scored in all of their games at Euro 2016. But it will take a huge effort to upset touted France. Didier Deschamps’ side are unbeaten in 11 previous matches against Iceland, winning eight of those games.
Iceland’s joint coach Heimir Hallgrimsson said he was under no illusions that France had the better individual players. But he felt Iceland could still show they were the better team when the two sides meet at the Stade de France. Hallgrimsson says there is still more to come from his team. “We are always playing the biggest game in Icelandic football history,” he said. “We are more used to it the more games we play. When we have overcome these obstacles, the next obstacles seem smaller the further we go. “We are a bit more relaxed in each game and have more self confidence. I keep saying we haven’t seen the best game of Iceland yet.”

  

 

ایک بچہ 250 ڈالر میں؟ بے حسِی وہ بیماری ہے جس کی بھینٹ شامی بچے چڑھ رہے ہیں

امریکی صحافی فرینکلن لیمب کا مغربی ویب سائٹس پر شائع ہونے والے مضمون نے پڑھنے والوں کے رونگٹی کھڑے کر د ئیے اورجدید تہذیب کے دعویٰ داروں کے پول کھول کر رکھ دیئے۔ شام میں کیا ہو رہا ہے؟ کون کیا چاہتا ہے اور کون انسانیت سوز سلوک روا رکھے ہوئے ہے۔ وہاں انسانوں کے بچے جانوروں سے بھی بد تر طریقوں سے نیلام ہو رہے ہیں۔اصل بات یہ ہے کہ آج کل بہت سی مسیحیوں کا رویہ مسیحیت کے خفیہ کارندوں جیسا ہے۔ ایسے مسیحیوں کوایک مکروہ قسم کی بیماری لاحق ہو گئی ہے جسے ‘‘بے حسِی اور بے اعتنائی کی بیماری’’ کہا جا سکتا ہے۔ یہی وہ بیماری ہے جس کی بھینٹ یہ شامی بچے چڑھ رہے ہیں۔ فرینکلن لیمب کے مطابق لبنان میں کام کے سلسلے میں قیام کے دوران اس نے الرملہ البیضاء کے ساحل کے قریب 4 شامی بچوں کو 600 امریکی ڈالر میں خریدا۔
 مضمون نگار کا کہنا ہے کہ وہ یقین سے نہیں کہہ سکتا کہ آیا جس خاتون سے انہوں نے یہ بچے خریدے اس کی کہانی سچی تھی یا وہ انسانوں کی تجارت میں ملوث گروہوں کی رکن تھی۔ وہ گروہ جو ان دنوں لبنان میں وسیع پیمانے پر کام کررہے ہیں۔ خاتون کہتی ہیں کہ وہ حلب میں ان بچوں کے گھر کے پڑوس میں رہتی تھی۔ بمباری کے نتیجے میں ان کے گھر والے اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے اور اس خاتون نے بچوں کو بچایا۔ ان میں پانچ برس کی دو جڑواں بچیاں ہیں، ایک سال اور چند ماہ کا ایک بچہ ہے اور سب سے بڑا بھائی آٹھ برس کا ہے۔ اس خاتون نے پناہ گزینوں سے متعلق اقوام متحدہ کے کمیشن میں اندراج اس لیے نہیں کرایا کیوں کہ وہ خود لبنان میں غیر قانونی طور پر مقیم تھی۔ وہ بچوں کی دیکھ بھال نہیں کرسکتی لیکن انہیں دربدر کی ٹھوکریں کھانے کے لیے سڑک پر بھی نہیں چھوڑ سکتی۔
خاتون کے مطابق وہ چاروں بچوں کو 1000 ڈالر کے عوض دے سکتی ہے یا پھر وہ ان میں سے کسی بھی ایک بچے کو 250 ڈالر کے عوض خرید ا جا سکتا ہے۔اس سودے بازی کے موقع پر چاروں بچے بہت سہمے ہوئے تھے۔ وہ سردی اور بارش سے کانپ رہے تھے اور بھوکے بھی لگ رہے تھے۔ لیمب نے بنا کچھ سوچے تمام بچوں کی قیمت 600 ڈالر لگا دی۔ عورت نے پیش کش قبول کرتے ہوئے کہا کہ وہ یونان کے جزیرے لبوس پہنچنے کے لیے ترکی جانا چاہتی ہے۔ اس عورت نے بچوں کے عوض ملنے والی رقم لبنانی کرنسی میں نہیں بلکہ امریکی ڈالر میں لینے پر اصرار کیا۔ کیا کسی نے لبنان میں ان شامی پناہ گزین بچوں کو درپیش استحصال کے بارے میں سوچا ہے جو ہزاروں کی تعداد میں دربدر ہے۔ پناہ گزینوں کے لیے امدادی کوششیں فنڈز کی عدم دستیابی کا شکار ہیں اور اقوام متحدہ نے بھی امداد کا سلسلہ منقطع کر رکھا ہے۔
درجنوں شامی بچوں کوروزانہ بھیک مانگتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ کچھ تو ایسے ہیں جو بیروت کی سڑکوں پر چیونگ گم اور پھول بیچتے ہوئے یا جوتوں کی پالش کرتے ہوئے پھرتے رہتے ہیں۔ ایک تصویر یہ بھی ہے کہ فرار پر مجبور ہو کر اپنے بچوں کے ساتھ لبنان آنے والی نصف سے زیادہ شامی خواتین جنگ میں اپنے شوہروں اور بڑی بیٹوں کو کھو چکی ہیں۔ ان میں اکثر کام کی تلاش کے لیے سرگرداں ہیں جب کہ اپنے ملک میں یہ ایسا کرنے پر مجبور نہیں تھیں۔ بہت سی شامی خواتین جو کام حاصل کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں ان کو کام دینے والوں اور ساتھی مردوں کی جانب سے جنسی ہراسیت کا سامنا ہوتا ہے۔ اس لیے کہ ان کے گھر میں کوئی مرد نہیں جو ان کو تحفظ دے سکے اور مال اور امداد کے عوض بدکاری سے روک سکے۔ لیمب ان بچوں کو اپنے اپارٹمنٹ لے آیا جہاں اس نے ادیس ابابا سے تعلق رکھنے والی ایک دوست جو بہت اچھی خدمت گار بھی ہے کو بچوں کی دیکھ بھال میں مدد کرنے پر آمادہ کر لیا۔ اب سوال یہ ہے کہ ان چھ بچوں کو تو لیمب نے خرید لیا اور جو بچے کسی لیمب کی دریا دلی سے مستفید نہیں ہوئے ان کا مستقبل کیا ہے؟
 
فائزہ نذیر احمد

دنیا استنبول کے غم میں نڈھال کیوں نہیں؟

استنبول کے ہوائی اڈے پر دہشت گردی کے واقعے کے بعد فیس بُک نے ترک جھنڈے میں پروفائل پکچر کو ملبوس کرنے کا آپشن نہیں دیا اور اس پر بڑی تعداد میں لوگوں نے تنقید کی۔ پیرس اور برسلز حملوں کے بعد سوشل میڈیا اور روایتی میڈیا میں اس خبر کی کوریج کے حوالے سے سوالات اٹھنا معمول کی بات ہے کہ پیرس پر اتنی کوریج کیوں اور بیروت یا لاہور پر کیوں نہیں؟
جہاں صارفین کی جانب سے خبروں میں دلچسپی میں امتیاز برتنے کی بات درست ہے وہیں سوشل میڈیا ویب سائٹس کی جانب سے ایسے مواقع پر مختلف سہولیات کی فراہمی میں امتیاز برتنے کی بات بھی درست ہے۔ مگر سوال یہ ہے کہ اگر میں اپنی پروفائل کی تصویر کو ترکی یا فرانس کے جھنڈے میں نہیں لپیٹتا تو کیا اس سے یہ مراد لینا درست ہے کہ مجھے اتنا دکھ نہیں جنتا ایسا کرنے والے کو ہے؟

آن لائن بینکنگ اور اے ٹی ایم کارڈز والے خبردار

کراچی پولیس چینی باشندوں پر مشتمل ایک ایسے جرائم پیشہ گروہ کی سرگرمی سے تلاش میں ہے جو مقامی بنکوں کی اے ٹی ایم مشینوں سے مختلف کھاتہ داروں کی رقوم کے متعلق معلومات حاصل کرکے کروڑوں روپے کی رقوم پر ہاتھ صاف کرچکا ہے۔ اس گروہ کا ایک رکن گرفتار ہوچکا ہے۔ یہ چینی شہری جو سائبر جرائم کے ماہر ہیں چند ہی روز قبل پاکستان آئے تھے ۔ انہوں نے کراچی کے بعض اہم علاقوں کی اے ٹی ایم مشینوں سے اپنے خاص کارڈز کے ذریعے مختلف کھاتہ داروں کے بنک اکاؤنٹس کی خفیہ معلومات حاصل کرکے ان کی رقوم اپنے تیار کردہ اے ٹی ایم کارڈوں کے ذریعے ہتھیانے کا کام شروع کردیا ۔ اس سے قبل کراچی کے بہت سے کریڈٹ کارڈ ہولڈراپنے بنکوں کی انتظامیہ سے شکایات کررہے تھے کہ ان کے کارڈز کے ذریعے دنیا کے مختلف ممالک میں لاکھوں روپے کی خریداری کس طرح ہورہی ہے؟
میرے سامنے اس وقت امریکہ میں گذشتہ برس سب سے زیادہ فروخت ہونے والی کتاب ” Future Crimes” موجود ہے،جس کے مصنف مارک گڈمین نے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی اور اس کے ذریعے ایک دوسرے سے منسلک دُنیا کی انتہائی خطرناک سرگرمیوں کا انکشاف کیا ہے،جنہیں معلوم کرکے انٹرنیٹ اور 249 کمپیوٹرزسے متعلقہ ٹیکنالوجی استعمال کرنے والا ہر انسان کانپ اُٹھتا ہے۔ سوشل میڈیا، ای کامرس اور کمپیوٹر ڈیٹا پر انحصار کرنے والے لوگ نہیں جانتے کہ کب ان کا تمام ڈیٹا اور ہر طرح کی خفیہ دستاویزات ہیکرز Hackers کے پاس پہنچ جائیں گی یا ان کے اپنے کمپیوٹر سے مکمل صاف کردی جائیں گی۔ دراصل جہاں کمپیوٹرز اورانٹرنیٹ کے رابطے اور سہولتیں موجودہ انسانی زندگی میں سہولت پیدا کرنے اور ترقی کی طرف بڑھنے کے لئے ایک سے بڑھ کر ایک معجز ے دکھا رہی ہیں وہاں کئی لحاظ سے انسان اس ٹیکنالوجی کا غلام بن کر بھی رہ گیا ہے۔

ڈیجیٹل انڈر ورلڈ کے لوگ اس میدان کے ایسے ناسور ہیں جن کی موجودگی میں اربوں کھربوں کے مصارف سے قائم ہونے والے دنیا کے بڑے سے بڑے اور انتہائی حساس معلومات رکھنے والے نیٹ ورک بھی محفوظ نہیں ۔ کچھ نہیں کہا جاسکتا کہ ہیکر ز Hackers کس وقت کس نیٹ ورک کے مضبوط حصار توڑ کر ان میں جا گھسیں، کب ان کی اہم ترین خفیہ معلومات لے اڑیں اور کب ان کے نیٹ ورکس سے ایسی تمام معلومات صاف کرکے ان اداروں کو کروڑوں اربوں ڈالرز کا نقصان پہنچا دیں۔ وکی لیکس کے بعد دُنیا پانامہ لیکس کا تجربہ کر چکی۔ ہیکرز Hackersکی طرف سے ایسے بڑے کام کرنے کے علاوہ نچلی سطح کے جرائم تواتر کے ساتھ سامنے آتے رہتے ہیں۔ بڑی بڑی کمپنیاں اور ادارے اپنے نیٹ ورکس کو ڈیجٹل انڈر ورلڈ سے محفوظ رکھنے کے لئے کمپیوٹر سیکیورٹی کے لئے بھاری مصارف برداشت کررہے ہیں۔ امریکہ کا صرف گارنر گروپ اپنے کمپیوٹر ڈیٹا کے تحفظ کے لئے سالانہ تقریبا نوے ارب ڈالر اخراجات برداشت کررہا ہے۔ اس وقت دُنیا میں کمپیوٹر وائرس سے تحفظ دینے کے لئے Symantec, McAfee,Trend Micro جیسے ادارے سروسز فراہم کررہے ہیں۔
کتاب کے مصنف کا خیال ہے کہ ایسے اداروں کے فراہم کردہ اینٹی وائرس پروگرام صرف پانچ فیصد وائر س کی نشاندہی کرپاتے ہیں] جبکہ 95 فیصد وائر س کا سراغ ہی نہیں مل سکتا۔ مصنف مارک گڈمین ڈیجیٹل کرائمز کا سراغ لگانے والی امریکی ایجنسیوں کے علاوہ ایسے بہت سے بین الاقوامی اداروں میں بھی طویل عرصے تک خدمات سرانجام دے چکے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ جس طرح دنیا میں اٹلی کا مافیا 249 جاپان کا یاکوزا، چین کا ٹرایڈز، اور کولمبیا کا ڈرگ کیرلز موجود ہیں اس سے بھی بڑھ کر سائبر کرائمز کرنے والے منظم گروہ موجود ہیں،جن کا تمام کاروبار آن لائن ہے۔ ان کی ہر طرح سے محفوظ آن لائن سائٹس پر اغوا 249 دہشت گردی249 بنکوں کی رقوم ہتھیانے، کمپنیوں کا ڈیٹا تباہ کرنے یا چرانے سے لے کر ہیروئن فروشی، ناجائز اسلحہ اور معاوضے پر قتل اور اغوا برائے تاوان اور جسم فروشی جیسے کاروبار عام ہو رہے ہیں اور اس سارے کاروبار کے پیچھے موجود لوگوں کے نام اور ایڈریس مکمل طور پر خفیہ ہیں۔ ان آن لائن جرائم کی پناہ گاہوں کو ختم نہیں کیا جا سکتا،البتہ اس مارکیٹ کے جعلی گاہک بن کر بعض اوقات حکومتوں کی خفیہ ایجنسیوں کے لوگ اس دھندے میں مصروف لوگوں کے قریب پہنچ جاتے ہیں، لیکن ان پر آسانی سے ہاتھ اس لئے نہیں ڈال سکتے کہ ان کے جرائم کے خلاف ان کے پاس کوئی ثبوت نہیں ہوتا۔
مصنف ان سائٹس کو ’’ مجرموں کی بلٹ پروف پناہ گاہیں‘‘ کا نام دیتا ہے ۔ ایسے آن لائن غیر قانونی کاروبار کو یہ آن لائن تحفظ اور سہولت فراہم کرنے والے اس سہولت کے عوض اپنے گاہکوں سے اچھا خاصا معاوضہ وصول کرتے ہیں اور یہ بے حد منافع بخش کام بن چکا ہے۔ تاہم ہیکرز کے کام میں سارے لوگ جرائم پیشہ ہی نہیں، ایسی مثالیں بھی سامنے آئی ہیں کہ بعض نوعمر امریکی طالب علموں نے محض تفریح کے لئے بعض ایئرپورٹس اور بڑی آئل کمپنیوں کے ڈیٹا نیٹ ورکس تک رسائی حاصل کی اور ان کے کام کو روک دیا۔ یہ ادارے بمشکل ہی کسی بڑے حادثے اور جانی نقصان سے محفوظ رہ سکے۔ کئی کمپنیوں کو کمپیوٹر ہیکرز کی وجہ سے کروڑوں اور ا ربوں ڈالر کا نقصان بھی برداشت کرنا پڑا ہے۔ اس وقت پیشہ وارانہ طور پر کمپیوٹرز اور نیٹ ورکس سے ڈیٹا چرانے والے جرائم پیشہ لوگوں کے منظم عالمی گروہ چین کے علاوہ انڈونیشیا، امریکہ، تائیوان، روس، رومانیہ، بلغاریہ، برازیل، انڈیا اور یوکرائن میں موجود ہیں۔ دنیا بھر میں اے ٹی ایم کارڈز اور کروڑوں کی تعداد میں کریڈٹ کارڈزچرانے اوران کی از سر نو فروخت کا کاروبار کرنے کے لئے Albert Gonzalez کا نام بدنام ہے ۔
منظم جرائم پیشہ گروہوں کے علاوہ اب بعض سیاسی اور نظریاتی طور پر کام کرنے والے گروہ بھی سائبر سپیس میں اپنا وجود منوا رہے ہیں۔ ان میں وکی لیکس کے بعد اب پانامہ لیکس والوں کے نام نمایاں ہیں۔ سیرین الیکٹرانک آرمی کے نام سے بھی ایک تنظیم سرگرم ہے۔ ان لوگوں کا موقف یہ ہے کہ وہ دُنیا کی اہم حکومتوں اور اداروں کی معلومات ناانصافیوں کے خاتمے کے لئے دُنیا کے سامنے لارہے ہیں۔ پانامہ لیکس والوں کا کہنا ہے کہ دُنیا کے موجودہ مالیاتی اور کرپٹ سیاسی نظاموں کی وجہ سے دنیا بھر کی دولت چند سو ہاتھوں میں جمع ہوچکی ہے۔ ترقی پذیر ملکوں کے حاکم اپنے عوام کا خون چوس کر اربوں ڈالر کی رقم دوسرے ملکوں میں لاکر جمع کرارہے ہیں وہ افراد جو دُنیا کے بڑے بڑے اداروں کو چیلنج کرکے ان کا ڈیٹا عام کردینے کے لئے معروف ہیں ان میں Julian,Assange, Chelsea,Manning and Edward Snowden کے نام نمایاں ہیں۔
اگر ان لوگوں کے نام عالمی اخبارات کی صفحہ اول کی سرخیوں میں آتے ہیں تو ان کے مقابلے میں جرائم پیشہ ہیکرز اپنے ارکان کے ناموں کو مکمل طور پر صیغہ راز میں رکھنے کے حق میں ہیں۔ ان کی سائٹس پر نہ صرف ہر طرح کے گھناؤنے جرائم والے اپنا کام اطمینان سے کرسکتے ہیں،بلکہ مختلف جرائم کرنے کے آسان اور موثر طریقے بھی یہاں بتائے جاتے ہیں 249 یہی وجہ ہے کہ سائبر کرائمز کے بعض ماہرین نے انٹرنیٹ کو دہشت گردوں کی یونیورسٹی کا نام دیا ہے۔ مصنف نے کمپیوٹر وائرس کے سلسلے میں پاکستانیوں کو بھی کریڈت دیا ہے 249 اس نے لکھا ہے کہ دنیا میں آئی بی ایم کمپیوٹرز کا سب سے پہلا وائر س برین وائرس تھا۔ جو1986ء میں لاہور کے دو بھائیوں امجد فاروق علوی اور باسط فاروق علوی نے تخلیق کیا تھا۔ اس وقت ان کی عمریں سترہ اور چوبیس سال تھیں۔ تاہم ان کے وائریس کا مقصد یہ تھا کہ دوسرے ان کا سافٹ ویئر چوری نہ کریں۔
قارئین ! میں اپنے آئندہ کالم میں کتابً فیوچر کرائمزً میں مذکور سائبر کرائمز کے متعلق بہت سے مزید اہم حقائق بیان کروں گا۔ تاہم ہمارے پاکستانی ہیکرز امریکہ اور یورپ میں جاکر اس میدان میں کیا کچھ کرتے رہے ہیں اس کی ایک جھلک بھی یہاں دکھانا خالی از دلچسپی نہیں ہوگا۔
یہ 1995 کی بات ہے جب میرے ایک دوست نے مجھے بتایا کہ کس طرح امریکہ میں بظاہر اپنے دوستوں کے پاس جانے کے دھوکے میں وہ خطرناک قسم کے جرائم پیشہ لوگوں کے درمیان پہنچ گیا تھا۔ اللہ کے خصوصی کرم اور اپنے پختہ عزم کی وجہ سے وہ ان لوگوں کے چنگل سے نکل آیا، ورنہ وہ اسے وسائل کی چمک کے ذریعے اپنے جرائم پیشہ گروہ کا ساتھی بنانا چاہتے تھے۔ یہ لوگ سائبر کرائمز مافیا کا حصہ تھے ۔ بظاہر تو انہوں نے کار مرمت کرنے کی ورکشاپ بنا رکھی تھی اور کچھ کاریں مرمت بھی کرتے تھے،لیکن ان کے اصل کام کچھ اور تھے۔ یہ لوگ اسے بتاتے رہے کہ کس طرح انہوں نے ٹیلی مارکیٹنگ کے ذریعے جعل سازی کرکے لاکھوں ڈالر کمائے پھر ایک افسر سے مل کر گرین کارڈ ز بنوانے کاکام کیا اور لاکھوں ڈالر کمائے۔ 
میرے اس دوست سے امریکہ میں جعلسازی کے یہ کام کرنے والے ان لوگوں نے کہا کہ اگر وہ ان کو لندن میں رہنے والے اپنے کزن کا بنک اکاؤنٹ نمبر معلوم کرکے بتا دے تو وہ اس میں چند لاکھ پونڈ رقم بھجوا سکتے ہیں، جس سے وہ آدھی رقم انہیں واپس کرنے کا پابند ہوگا۔ میرے دوست نے ان سے کہا کہ آپ اپنی پوری رقم اپنے پاس کیوں نہیں رکھتے، انہوں نے کہا کہ یہ رقم کسی بنک سے ایک خاص تکنیک کے ذریعے نکلوائی جائے گی او ر احتیاط کے طور پر وہ اسے کسی کاروباری کے بنک اکاؤنٹ ہی میں بھیج سکتے ہیں۔ آپ آج اکاؤنٹ نمبر بتائیں شام تک رقم اس اکاؤنٹ میں پہنچ جائے گی۔ ان لوگوں کی باتوں سے میرے دوست نے محسوس کیا کہ وہ لوگ کسی خطرناک گروہ سے وابستہ ہیں۔ اس کے بعد انہوں نے بات کو مذاق میں ٹالتے ہوئے کہا کہ صاحب ہم نے ان کاموں میں پی ایچ ڈی کر رکھی ہے ۔ جب وہ دو اڑھائی ماہ ان لوگوں کے درمیان گزارنے کے بعد واپسی کی تیاری کررہا تھا تو ایک دن اس کے میزبان دوستوں نے اسے کہا کہ اچھے دوست آپ یہ سستی قسم کی شرٹس اور معمولی قیمت کی چیزیں تحفے میں لے جانے کے لئے کیوں خرید رہے ہیں؟ ہم سے یہ کریڈٹ کارڈ لے لو 249 اور اس کے ذریعے کھلے دل سے خریداری کرو۔ کم از کم دو دو سو ڈالر کی شرٹس اور پانچ پانچ سو ڈالر کے بوٹ خرید کر وطن لے جاؤ تا کہ لوگوں کو معلوم ہو کہ تم امریکہ سے آئے ہو۔
اس نے کہا کہ وہ ان کے کریڈ ٹ کارڈ استعمال کرکے ان پر کسی طرح کا بوجھ نہیں بننا چاہتا، جس پر انہوں نے ہنس کر کہا کہ تم اس بات کا غم نہ کرو ہمیں خود معلوم نہیں یہ کریڈٹ کارڈ کس کے ہیں اور تم کس پر بوجھ بنو گے ! ایک موقع پر پھر انہوں نے اسے کہا کہ دیکھیں آپ یہاں کچھ کمانے آئے ہیں۔ بہت اوپر جانے کے لئے کم از کم ابتداء میں اس طرح کے فراڈ کرنے ہی پڑتے ہیں۔ جب تک کوئی بڑا داؤ نہیں لگاؤ گے کامیابی کی طرف بڑھ نہیں پاؤ گے۔ اصل کمائی تو ایسے ہی کاموں میں ہے۔ میرے دوست نے انہیں کریدنے کے لئے پوچھا :کس طرح کے کاموں میں ؟ انہوں نے کہا : تم اب واپس جارہے ہو تو جاتے ہوئے ہم سے کوئی پچاس ہزار ڈالر کے ٹریولنگ چیکس لے جاؤ، جا کر انہیں کیش کراؤ، ان سے آدھی رقم تمہاری اور آدھی ہماری ہوگی۔ اس نے کہا کہ یہ ٹریولنگ چیکس جعلی ہوں گے۔ انہوں نے کہا ہرگز نہیں ۔ ہمارے ساتھ شاپنگ کے لئے چل کر دیکھ لو، جس سٹور پر بھی چاہوہم ان چیکس کے ذریعے پے منٹ کرکے دکھا دیتے ہیں۔اس نے کہا تو پھر آپ یہ سارے چیکس اپنے پاس ہی کیوں نہیں رکھ لیتے ؟ 
انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس تو ایسے لاکھوں ٹریولرز چیکس ہیں 249 اگر ہم سب کیش کرانے لے جائیں گے تو شک کی وجہ سے دھر لئے جائیں گے،جبکہ تم ایک وزٹر کے طور پر امریکہ آئے ہو یہاں انہیں کیش کرالو یا واپسی پر پاکستان میں جاکر۔ پچاس ہزار ڈالر کی رقم کوئی اتنی بڑی رقم نہیں کہ کوئی کسی وزٹر پرکسی طرح سے شبہ کرے۔ اس نے ان لوگوں کی ایسی باتوں کو مذاق یا ہوائی باتیں جانا تھا،لیکن انہوں نے اس کی ملاقات ایک لیموزین کے مالک ہم وطن سے کرائی اور بتایا کہ وہ اس وقت ایک امریکن بنک میں ایک بڑے عہدے پر تعینات ہے۔ لمبی چوڑی تنخواہ ہے اور بہت سی مراعات حاصل ہیں۔ اس شخص کے رخصت ہونے کے بعد انہوں نے بتایا کہ دراصل یہ شخص پہلے ا سی بنک میں کیشئر تھا، اس نے کمپیوٹر سافٹ ویئر پر استعمال کی ایک ایسی تکنیک اختراع کی جس کی وجہ سے بنک کے مختلف کھاتوں سے آہستہ آہستہ تین چار کروڑ ڈالر کی رقم فراڈ سے اپنے اکاؤنٹ میں منتقل کرلی۔
ایک موقع پر اس تکنیک کے استعمال میں اس سے کچھ غلطی ہو گئی، جس سے بنک والوں کو اس پر شبہ ہوگیا اور وہ پکڑا گیا۔ بنک نے اسے پولیس کے سپرد کردیا۔ بنک بورڈ کا اجلاس ہوا تو بورڈ کے ارکان نے اس شخص کی ذہانت اور مہارت پر تعجب کا اظہار کیا اور اس نتیجے پر پہنچے کہ ایسے ذہین اور طباع شخص کی صلاحیتوں سے بنک کو فائدہ اُٹھانا چاہئے۔ اس کے بعد ایک بہت اچھے وکیل کو ایک لاکھ ڈالر کا معاوضہ دے کر بنک نے خود اسے رہا کرایا اور اپنے ہاں لمبی چوڑی تنخواہ کے ساتھ سیکورٹیز کا انچارج بنایا ۔اس طرح جعلسازوں کے اس گروہ نے اس پر یہ واضح کرنے کی کوشش کی کہ ذہانت کی ،خواہ وہ منفی ہی کیوں نہ ہو،دُنیا میں کتنی قدر و اہمیت ہے۔
میرے دوست کے ان تجربات پر مبنی یہ حقائق میرے سامنے تھے اور میں سوچتا تھا کہ آخر امریکن ایسے تارکین وطن کو اپنے ہاں کس طرح برداشت کرلیتے ہیں؟ اب ’’فیوچر کرائمز‘‘ نامی کتاب میرے سامنے ہے اور میں سوچتا ہوں کہ امریکہ بے چارا خود اپنی اکانومی کو چار چاند لگانے اور دُنیا بھر میں اپنا کنٹرول مضبوط کرنے والی اس قابل فخرٹیکنالوجی کے ہاتھوں کس قدر بے بس ہے!
ڈاکٹر شفیق جالندھری

نوشیروان عادل – دیانت دار اور انصاف کرنے والا بادشاہ

نوشیروان ایک بے حد، دیانت دار اور انصاف کرنے والا بادشاہ تھا۔ اس کے عدل و انصاف کے قصے دنیا بھر میں مشہور ہیں۔ اسی لیے اسے نوشیروان عادل کہا جاتا ہے۔ ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ نوشیروان اپنے وزیروں اور مشیروں کے ساتھ شکار کے لیے گیا۔ جلد ہی بادشاہ اور اس کے ساتھیوں نے تین ہرن شکار کرلیے۔ اب دوپہر ڈھلنے والی تھی۔ سب کو بھوک ستارہی تھی۔ نوشیروان نے شاہی باورچی کو حکم دیا کہ ہرنوں کو ذبح کرکے ان کا گوشت بُھون کر سب کو پیش کیاجائے۔ عین اس وقت شاہی باورچی کو معلوم ہوا کہ افراتفری میں صبح آتے وقت وہ نمک نہیں لایا۔ جب نوشیروان کو باورچی کی کوتاہی کا علم ہوا، تو اس نے ایک ملازم کو حکم دیا کہ وہ قریبی گائوں جاکر نمک لے آئے۔
نوشیروان نے ملازم کو تاکید کی کہ نمک دام دے کر خریدا جائے۔ ایک وزیر نے کہا: ’’جناب ذرا سے نمک کی کیا حیثیت ہے کہ اسے بھی دام دے کر لیا جائے۔‘‘ نوشیروان نے کہا :’’تم ٹھیک کہتے ہو کہ یہ ذرا سے نمک کی بات ہے، لیکن اگر حکام کو بغیر دام دیئے چیزیں لینے کی عادت پڑگئی،تو کیا ہوگا۔ ظلم پہلے ذرا سا ہوتا ہے، مگر بار بار ظلم کیا جائے تو وہ بہت بڑھ جاتا ہے۔ بادشاہ اور حاکم اگر اسی طرح ظلم کرتے جائیں، تو ملک تباہ و برباد ہوجاتے ہیں۔ رعایا ایسی ظالم حکومت سے تنگ آکر بغاوت پر آمادہ ہوجاتی ہے۔ اگر کوئی حکومت کا ملازم کسی باغ سے ایک سیب بغیر دام دیئے، توڑ لے تو باقی ملازم پورا باغ اُجاڑ دیں گے۔ ذرا سوچو اس طرز عمل سے باغ کے مالک کا کیا حال ہوگا‘‘۔
پروفیسر سجاد شیخ