حسین حقانی نیٹ ورک

حسین حقانی سفارت کاری کی ’میرا‘ بنتے جا رہے ہیں۔ حقانی صاحب کو اچھی طرح علم ہے کہ کب، کیسے اور کس طرح سے میڈیا کی توجہ حاصل کرنی ہے۔ امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ کے لیے لکھا گیا اُن کا حالیہ کالم ہی اُٹھا کر دیکھ لیں، کہ وہ کالم بادی النظر میں تو ٹرمپ کے مسئلے پر لکھا گیا تھا لیکن آدھے سے زیادہ کالم میں اپنی کہانی اور اپنی اہمیت جتاتے رہے اور پاکستانی میڈیا میں اُن کے بطور سفیر کردار پر بحث اور انگلیاں اُٹھنا شروع ہوگئی ہیں۔ یہ کالم اگر کسی عام لکھاری نے لکھا ہوتا تو یقینًا نتائج مختلف ہوتے، عین ممکن ہے کہ وہ شائع ہی نہ ہوتا اور اگر ہوتا بھی تو اُس میں بیان کردہ باتوں کے مطابق سخت ایکشن لیا جاتا، کیونکہ حسین حقانی نے اپنے کالم میں خود کو غدار ثابت کیا ہے اور وہ آئین کے مطابق غداری کی ہر تعریف پر پورا اُترتے ہیں۔

حسین حقانی کا ماضی انتہائی شاندار ہے جو کہ ثابت کرتا ہے کہ اگر آپ ’کیٹ فش‘ ہیں تو آپ کو جھیل سوکھنے سے پہلے ہی اپنا بندوبست کرلینا چاہیئے۔ بطورِ سفیر، حقانی کی سری لنکا میں تعیناتی کے ابواب تو پھر سہی لیکن جب زرداری حکومت نے اپنے دوستوں کو نوازنے کا سلسلہ شروع کیا تو حسین حقانی اُن لوگوں میں سے تھے جنہوں نے بہتی گنگا میں صرف ہاتھ ہی نہیں دھوئے بلکہ جی بھر کر نہائے۔ اُنہوں نے اپنی وفاداری کے عوض امریکہ میں بطور سفیر تعیناتی کروائی، اُس کی وجہ وہ اپنے کالم میں اپنا امریکی حلقوں میں اثر و رسوخ بتاتے ہیں جبکہ پڑھنے والے سمجھتے ہیں کہ ایسا اثر حاصل کرنے کیلئے انسان کو اخلاقی سطح سے کتنا نیچے گرنا پڑتا ہے۔Hussain-Haqqani-Edward-Said-Hall-11-Aug-2014-003

ابتداء میں حسین حقانی ملک کی سب سے بڑی طلبہ تنظیم سے منسلک رہے تھے اور اُس دور میں وہ باقاعدگی کے ساتھ کراچی میں قائم امریکی قونصل خانے کی لائبریری جاتے تھے۔ اُس کے بعد صحافت کا آغاز کیا اور وائس آف امریکہ ریڈیو کیلئے افغانستان کی جنگ کو کور کیا۔ ضیاء الحق کی مدد سے انہوں نے اپنا سیاسی سفر شروع کیا اور بعد میں نواز شریف کے قریب ہو گئے۔ اُس کے بعد اُنہوں نے بینظیر بھٹو کا کیمپ جوائن کیا اور فوائد سمیٹے۔ زرداری سے دوستی انہوں نے 2008ء میں کیش کروائی جب وہ امریکہ میں سفیر تعینات رہے۔ وقت کو سمجھنے والے حقانی نے مشرف دور کا بیشتر حصہ امریکہ میں گزارا۔

زرداری دور میں جب امریکہ نے پاکستان کے علم میں لائے بغیر اُسامہ بن لادن کے خلاف آپریشن کیا تو سب ہی کہہ رہے تھے کہ یہ ’ان سائیڈ جاب‘ ہے۔ تاہم چند ہی دنوں کے بعد میموگیٹ کا اسکینڈل شروع ہو گیا اور میڈیا سے بن لادن اسٹوری پسِ منظر میں چلی گئی۔ اُس دوران حسین حقانی نے استعفیٰ دیا اور چند روز کے بعد پاسپورٹ تھام کر امریکہ سدھار گئے۔ آج کل وہ امریکہ میں بطور سمدھی اپنی ذمہ داریاں نبھا رہے ہیں اور وقتاً فوقتاً ہمیں یہ یاد دلاتے رہتے ہیں کہ اُنہوں نے حکومت اور قوم کو کیسے بیوقوف بنایا۔ حقانی کا انجام کیا ہو گا، یہ ہمارا آج کا موضوع نہیں ہے۔ تاہم حقانی نے امریکی جریدے کے کالم میں جو اعتراف کئے ہیں وہ کس نوعیت کے ہیں، یہ ہمارا موضوع ہے۔

حسین حقانی نے تسلیم کیا ہے کہ انہوں نے بن لادن آپریشن میں امریکہ کی مدد کی تھی اور یہ مدد ’آؤٹ آف دی وے‘ تھی۔ یہاں یہ سوال اُٹھتا ہے کہ کیا وہ یہ مدد کرنے کے مجاز تھے کیونکہ وہ اُس وقت امریکہ میں بطور سفیر اپنی ذمہ داریاں ادا کر رہے تھے اور یہ سفیر کے کرنے کے کام نہیں ہیں اور نہ ہی اُن کے ایس او پیز میں یہ بات شامل ہوتی ہے۔ کیا پیپلز پارٹی اُن کے اقدامات سے آگاہ تھی؟ اِس کا جواب حقانی نے اپنے کالم میں خود ہی دیا ہے کہ اُس وقت کے صدر اور وزیر اعظم اُن کے اقدامات سے نہ صرف آگاہ تھے بلکہ معاون بھی تھے اور منظوری بھی دے رہے تھے۔

اب پیپلز پارٹی کی قیادت سے بھی سوال ہونا چاہیئے کہ آپ کے کیمپ میں ایک غدار کیا کررہا تھا؟ جس کی وفاداریاں پاکستان سے زیادہ امریکیوں کیلئے تھیں اور جس نے پاکستان سے پہلے امریکہ کا سوچا۔ کیا آرمی کو اُن اقدامات کا علم تھا؟ حسین حقانی نے تسلیم کیا ہے کہ اُنہوں نے سی آئی اے کے جاسوس پاکستان لانے میں اہم کردار ادا کیا اور اُن کو ویزے جاری کئے۔ لگے ہاتھوں وہ یہ بھی بتا دیتے کہ کتنے جاسوس اِس ملک میں آئے؟ وہ کون سے آلات یہاں لائے؟ اِس سے پاکستان کی سیکیورٹی کس حد تک کمزور ہوئی اور یہ جاسوس اب کہاں ہیں؟

یہ بھی بتا دیتے کہ اُن جاسوسوں کا کام صرف بن لادن کی تلاش نہیں تھا بلکہ وہ پاکستان کے ایٹمی پروگرام کی جاسوسی کرنے بھی آئے تھے اور وہ اِس میں کس حد تک کامیاب ہوئے ہیں، تو اِس کا جواب ہے کہ امریکہ کے وہ جاسوس ابھی تک ناکام ہیں کیونکہ الحمد اللہ پاکستان کا ایٹمی پروگرام جاری ہے۔ اب سوال اُٹھتا ہے کہ اگر پاکستان کا سفیر امریکہ میں یہ گل کھلاتا رہا ہے تو اُس کے نیچے کا عملہ کیا کرتا رہا ہو گا؟ اگر اعلیٰ ترین عہدے پر فائز شخص ایسا گھٹیا اور غدار ہے تو وہاں موجود دیگر عملے کی صورتحال کیا ہے؟

کیا اب یہ ضرورت نہیں کہ بیوروکریسی پر شکنجہ کسا جائے جو کہ تمام ہی مسائل کی جڑ معلوم ہوتی ہے، فوج پر تو منہ اُٹھا کر کوئی بھی تنقید کر لیتا ہے، بیورو کریسی کا احتساب کب ہو گا اور اب جب کہ اُن کے قبیلے کے ایک اہم سردار نے اپنی غداری بھی تسلیم کر لی ہے۔ میری ذاتی نظر میں حسین حقانی نے جو بھی کیا ہے، اُس نے یہ کام اکیلے نہیں کئے ہیں بلکہ امریکہ میں رہتے ہوئے بھی پاکستان میں اپنے نیٹ ورک کے ذریعے اُس نے یہ تمام کام کئے ہیں۔ سوال یہ ہے کہ کیا پاکستان میں اُس نیٹ ورک کے خلاف کوئی آپریشن ہو گا؟ کیونکہ اِس ’حقانی نیٹ ورک‘ کے خلاف آپریشن کرنا اب ناگزیر ہو چکا ہے۔

کیا حسین حقانی کے اعتراف غداری کے زمرے میں نہیں آتے ہیں؟ اگر ایک آرٹیکل کو بنیاد بنا کر پورا چینل بند کیا جا سکتا ہے، ایک آرٹیکل یا رپورٹ کو بنیاد بنا کر حملے کئے جا سکتے ہیں، ایک آرٹیکل کو بنیاد بنا کر آپریشنز کئے جا سکتے ہیں تو ایک اعترافی آرٹیکل کو بنیاد بنا کر سابق سفارتکار پر غداری کا مقدمہ کیوں نہیں چل سکتا؟ اگر قانون طاقتور ہے اور ملک میں قانون کی حکمرانی ہے تو پھر ایسا ہونا چاہیئے وگرنہ دوسری صورت میں اگر حسین حقانی کو نشان عبرت نہیں بنایا جاتا ہے تو یہ باقی ماندہ بیوروکریسی کیلئے کیسی مثال ہوگی، یہ سوچنے کی بات ہے۔

سالار سلیمان

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s