اینٹی بایوٹکس جراثیم کے خلاف بے اثر ہو رہی ہیں ؟

پاکستان میں جعلی ادویہ کی بھرمار ہے۔ اسی لیے اگر کسی دوا سے فائدہ نہ ہو تو ذہن میں خیال پیدا ہوتا ہے کہ وہ دوا جعلی تھی۔ قوی امکان ہے کہ یہ خیال غلط ہو اور دوا اصلی ہو۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ بیکٹیریا میں ان ادویہ کے خلاف قوت مزاحمت پیدا ہو چکی ہے۔ اسی لیے اینٹی بایوٹکس کی بڑھتی ہوئی تعداد بے اثر ہوتی جا رہی ہے۔ طاقت وَر اینٹی بایوٹکس تیار کرنے کی ضرورت پر کئی برسوں سے زور دیا جا رہا ہے۔ جراثیم میں ادویہ کے خلاف بڑھتی ہوئی مزاحمت سنگین صورت اختیار کرتی جا رہی ہے۔ اسی کے پیش نظر عالمی ادارۂ صحت نے ایک بار پھر اپیل کرتے ہوئے کہ نئی اینٹی بایوٹکس فوری تیار کی جائیں۔ عالمی ادارۂ صحت کے مطابق بیکٹیریا کی بارہ اقسام میں موجودہ اینٹی بایوٹک ادویہ کے خلاف زبردست مزاحمت پیدا ہوچکی ہے، اور یہ جراثیم انسانی صحت کے لیے سب سے بڑا خطرہ بن چکے ہیں۔ ماہرین صحت نے ان جراثیم کو مجموعی طور پر ’ سُپربگ‘ کا نام دیا ہے۔

گذشتہ برس عالمی بینک نے ایک رپورٹ جاری کی تھی جس میں خبردار کیا گیا تھا کہ جراثیم میں اینٹی بایوٹکس کے خلاف بڑھتی ہوئی مزاحمت اور سُپر بگز کی وجہ سے 2050ء تک ایک کروڑ انسان موت کا شکار ہو سکتے ہیں۔ علاوہ ازیں کچھ ممالک کی معیشت بھی شدید متأثر ہو سکتی ہے۔ ڈبلیو ایچ او نے ان مہلک بیکٹیریا کی فہرست بھی جاری کی ہے۔ اس فہرست میں gram-negative bacteria کو خاص طور پر نمایاں کیا گیا ہے۔ یہ وہ بیکٹیریا ہیں جن میں ایک سے زائد اینٹی بایوٹکس کے خلاف مزاحمت کی صلاحیت پیدا ہو چکی ہے۔ gram-negative bacteria اس لیے زیادہ خطرناک ہیں کہ یہ ادویہ کے خلاف مزاحمت کے نت نئے راستے تلاش کر لیتے ہیں۔ یہ صلاحیت جینز کے ساتھ دوسرے بیکٹیریا میں منتقل ہو جاتی ہے، نتیجتاً وہ بھی اینٹی بایوٹکس کے خلاف مزاحمت کے قابل ہو جاتے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او کی اسسٹنٹ ڈائریکٹر ڈاکٹر میری پاول کینی کہتی ہیں،’’اینٹی بایوٹکس کے خلاف مزاحمت تیزی سے بڑھ رہی ہے اور ہمارے پاس طریقۂ ہائے علاج محدود ہوتے جا رہے ہیں۔ اگر ہم نے نئی اور طاقت وَر اینٹی بایوٹکس کی تیاری کا کام ادویہ ساز کمپنیوں پر چھوڑ دیا تو بہت دیر ہوجائے گی۔‘‘ اسی لیے اس ضمن میں عالمی ادارے کی جانب سے باقاعدہ حکمت عملی تشکیل دی گئی ہے۔ ڈبلیو ایچ او نے بہ لحاظ ترجیح اینٹی بایوٹکس کو تین زمروں میں تقسیم کیا ہے۔ اولین زمرے میں وہ ادویہ رکھی گئی ہیں جنھیں تیار کرنے کی فوری ضرورت ہے۔ یہ ادویہ اسپتالوں اور نرسنگ ہومز میں مصنوعی سانس کی مشینوں پر زندہ مریضوں کے خطرناک بیکٹیریا سے تحفظ کے لیے درکار ہوں گی۔

Acinetobacter، Pseudomonas اور دوسرے کئی بیکٹیریا ان لاچار مریضوں میں جان لیوا انفیکشن پیدا کرسکتے ہیں۔ دوسرے اور تیسرے زمرے میں رکھی گئی اینٹی بایوٹکس عمومی امراض پیدا کرنے والے بیکٹیریا کے خلاف مؤثر ہوں گی۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s