نوکیا فون کے زوال کے بعد

فِن لینڈ کا چھوٹا سا شہر نوکیا انتہائی غیر دلچسپ منظر پیش کر رہا ہے۔ موسم سرما کی برف میں چند بلاکز پر محیط فلیٹوں کا سلسلہ ہے اور مرکزی سڑک کے ساتھ ہی دکانوں کی ایک چھوٹی سی پٹی ہے۔ یہاں ہوٹل اور سستے دام والا سپر سٹور بھی ہے۔

اسے دیکھ کے ایسا محسوس نہیں ہوتا کہ 90 کے عشرے میں اس شہر نے موبائل فون کی صنعت میں انقلاب لانے والی کمپنی کو اپنا نام دیا تھا اور فن لینڈ کی معیشیت کو دنیا میں سب سے زیادہ خوش حال بنانے میں مدد دی تھی۔
اپنے عروج کے وقت سنہ 2000 کے عشرے میں دنیا کے 40 فیصد موبائیل فون نوکیا نے مہیا کیے تھے اور فن لینڈ کو عالمی سطح پر تسلیم شدہ صارفین کی پہلی برانڈ دی تھی۔
اندرون ملک اس کے ثمرات اور بھی زیادہ اچھے تھے۔ ریسرچ انسٹی ٹیوٹ آف فِنش اکانومی کے مطابق سنہ 1998 سے سنہ 2007 کے دوران فن لینڈ کی شرح نمو میں نوکیا کا حصہ ایک چوتھائی تھا۔ اس دورانیے کو فن لینڈ کے وزیر خزانہ ’معیشیت کا معجزہ‘ کہتے ہیں۔
تاہم جس تیزی سے یہ ابھرا تھا، اسی تیزی سے موبائیل فون کے بازار میں نوکیا کی برتری نیچے بھی آگئی تھی۔ اس سے نہ صرف فن لینڈ کی معیشیت کو دھچکا لگا بلکہ ملک کی تاریخ کی طویل ترین کساد بازاری میں بھی اس نے اہم کردار ادا کیا۔

سنہ 1998 سے سنہ 2007 کے دوران فن لینڈ کی شرح نمو میں نوکیا کا حصہ ایک چوتھائی تھا جسے معیشیت کا معجزہ کہا جاتا ہے

نوکیا سے تقریباً 15 منٹ کے فاصلے پر ہی ٹیمپیئر ہے جہاں کمپنی کے تحقیق و ترقی کی سب سے بڑے شعبے قائم ہیں۔ کمپنی کے اچھے دنوں میں یہاں چار ہزار انتہائی ہنرمند افراد کام کرتے تھے۔
ٹیمپیئر شہر کے معاشی اور شہری ترقی کے ڈائریکٹر کاری کنکالا کہتے ہیں ’یہ یہاں کی ہر شے کی ریڑھ کی ہڈی تھا۔ یونیورسٹیاں نوکیا کے ساتھ مل کے کام کرنے پہ انحصار کرتی تھیں، ذیلی ٹھیکیداروں کا انحصار بھی نوکیا پر ہی تھا، بچے بھی نوکریوں کے لیے نوکیا کی جانب دیکھتے تھے۔ 
’اور اب ہمیں 14 سے 15 فیصد بیروزگاری کی شرح کے ساتھ مشکل ترین صورت حال کا سامنا ہے۔ 

ٹیمپیئر میں نوکیا کے آر ایند ڈی منصوبے کے سابق سینیئر مینیجر مِکا گرنڈسٹورم کہتے ہیں ’میرے خیال میں ہماری سب سے بڑی کامیابی موٹورولا سے بھی چھوٹی جسامت کے موبائیل فون کی تیاری تھی۔ یہ سنہ 1997-1998 کی بات ہے۔ یہ ایک طرح سے انجینیئرنگ خواب تھا۔ 

تاہم موبائیل فون کی صنعت میں سمارٹ فون متعارف ہونے کے بعدصورت حال بالکل تبدیل ہوگئی۔ خاص طور پر سنہ 2007 میں ٹیکنالوجی کی کمپنی ایپل کی جانب سے آئی فون متعا رف کروانے کے بعد۔
مِیکا کہتے ہیں ’اگر آپ فون کی بیٹری کی زندگی کے بارے میں سوچیں تو ہمارے پاس ایسے فون تھے جو ایک ہفتے تک چل سکتے تھے۔ لیکن پھر ایسےنئے فون آگئے جو کارکردگی میں بہترین تھے لیکن صرف ایک دن ہی چلتے تھے۔ اچھا، ایسی کوئی شے خریدنے پر آپ اپنے صارف کو کیسے آمادہ کرسکتے ہیں؟ 
نوکیا نے سمارٹ فون کے بازار میں اپنی بقا کی لڑائی جاری رکھی، تاہم سنہ 2014 میں نوکیا کا موبائیل فون کا کاروبار مائیکروسوفٹ نے خرید لیا تھا اور ڈیوائس پر سے نوکیا کا نام یکسر مٹا دیا گیا تھا۔
نوکیا شہر کے جنوب میں دو گھنٹے کے فاصلے پر ہیلسنکی شہر ہے جہاں نوکیا کے دور کے بعد کی نئی کاروباری تہذیب کے آثار نمودار ہونا شروع ہوگئے ہیں۔
ٹامس کیٹوما ایک سافٹ ویئر انجینیئر ہیں، انھوں نے اپنی پیشہ ورانہ زندگی کا بیشتر حصہ نوکیا کے لیے کام کرتے ہوئے گزارا ہے جن میں امریکہ اور جرمنی میں گزرا وقت بھی شامل ہے۔
گذشتہ سال وہ آن لائن صارفین کی کمپنی زُولینڈو کے لیے کام کرنے کی غرض سے فِن لینڈ واپس لوٹے ہیں۔ انھوں نے فِن لینڈ کے دارالحکومت میں ایک پرانی فیکٹری کو ایک زبردست دفتر میں تبدیل کردیا ہے جہاں انھوں نے ٹیکنالوجی کی کمپنی شروع کی ہے۔
ٹامس کیٹوما کہتے ہیں ’فنی مہارت کہیں نہیں گئی ہے۔ فِن لینڈ میں نوکیا کا عروج کا وقت گزرا ہے اس کا مطلب یہ ہے کہ یہاں ٹیکنالوجی کا علم اور اس میں مہارت رکھنے والوں کا زخیرہ موجود ہے۔ 
فِن لینڈ کی ٹیکنالوجی کی صنعت کا مستقبل جو بھی ہو کچھ لوگوں کے خیال میں نوکیا جیسی بڑی اور متاثرکن کمپنی پھر سے ابھر سکتی ہے۔
نوکیا کے تحقیق اور ترقی کے شعبے کے ایک اور سابق مینیجر سیپّو ہاتایا کہتے ہیں ’جب نوکیا اس کاروبار کا اہم کھلاڑی تھا فِن لینڈ میں بہت سی اچھی چیزیں ہوئی تھیں۔ اب صورت حال تبدیل ہورہی ہے۔ نئی ایجادات بڑی کمپنیوں کے ذریعے نہیں ہورہی ہیں بلکہ چھوٹی اور نئی کمپنیوں کے ذریعے ہورہی ہیں۔‘

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s