Recep Tayyip Erdogan – Real Hero Of Turkish Peoples

Recep Tayyip Erdoğan born 26 February 1954) is a Turkish politician who has been the 12th President of Turkey since 2014. He previously served as the Prime Minister of Turkey from 2003 to 2014 and as the Mayor of Istanbul from 1994 to 1998. He founded the Justice and Development Party (AKP) in 2001 and led it to three general election victories in 2002, 2007 and 2011 before standing down as leader upon his election as President in 2014. Originating from an Islamist political background and as a self-described conservative democrat, his administration has overseen social conservative and liberal economic policies.
Erdoğan was a semi-professional footballer playing for Kasımpaşa Spor Kulübü before being elected as the Mayor of Istanbul from the Islamist Welfare Party in 1994. He was stripped and banned from office after being sentenced to 10 months in prison for inciting religious intolerance in 1998, after which he abandoned openly Islamist politics and established the moderate conservative AKP in 2001. The AKP won a landslide victory in the 2002 general election, with the party’s co-founder Abdullah Gül becoming Prime Minister until his government annulled Erdoğan’s ban from political office. Erdoğan subsequently became Prime Minister in March 2003 after winning a seat in a by-election held in Siirt.
As part of his ‘2023 vision’ for the centenary of the Turkish Republic, Erdoğan’s government oversaw accession negotiations for Turkey’s membership of the European Union, an economic recovery following a financial crash in 2001, two successful constitutional referendums in 2007 and 2010, a Solution process with Kurdish militants, an allegedly Neo-Ottoman foreign policy and investments in infrastructure that included new roads, airports and a high-speed train network. With the help of Fethullah Gülen’s Cemaat Movement, Erdoğan was able to curb the political power of the military through the controversial Sledgehammer and Ergenekon court cases. In late 2012, his government began peace negotiations with the Kurdistan Workers Party (PKK) to end the ongoing PKK insurgency that began in 1978. The ceasefire broke down in 2015, leading to a renewed escalation in conflict.
As President, Erdoğan has been a strong advocate of an executive presidency that would boost his own powers and has maintained an active influence over political affairs despite the symbolic nature of his office. In 2016, he was accused of forcing the resignation of Prime Minister Ahmet Davutoğlu due to his scepticism over the proposed presidential system, resulting in his replacement by close ally Binali Yıldırım. He has also come under fire for constructing Ak Saray, the world’s largest palace on Atatürk Forest Farm and Zoo for his own use as President and has been repeatedly accused of breaching the constitutional terms of his office by not maintaining political neutrality. In 2015, amid consistent allegations that he maintained financial links with Islamic State of Iraq and the Levant militants, revelations that the state was supplying arms to militant groups in Syria in the 2014 National Intelligence Organisation lorry scandal led to accusations of high treason. Erdoğan’s failed peace negotiations with Kurdish rebels and lax security policies against ISIL have been consistently blamed for the sharp rise in terrorist incidents in Turkey since 2015. Soon afterwards in press around the world appeared suggestions that coup d’état attempt was staged by Erdoğan to grasp more power in Turkey.
Nationwide protests against the perceived authoritarianism of Erdoğan’s government began in May 2013, with the internationally criticised police crackdown resulting in 22 deaths and the stalling of EU membership negotiations. Following a split with long-time ally Fethullah Gülen, Erdoğan brought about large-scale judicial reforms that were criticised for threatening judicial independence. A US$100 billion government corruption scandal in 2013 led to the arrests of Erdoğan’s close allies, with Erdoğan himself incriminated after a recording was released on social media. Erdoğan’s government has since come under fire for electoral fraud, demeaning the Constitution, alleged human rights violations and crackdown on press and social media, having blocked access to Twitter, Facebook and YouTube on numerous occasions.  Opposition journalists and politicians have thus branded him a “dictator”.

Early political career

While studying business administration and playing semi-professional football, Erdoğan engaged in politics by joining the National Turkish Student Union, an anti-communist action group. In 1974, he wrote, directed and played the lead role in the play Maskomya, which presented Freemasonry, Communism and Judaism as evil. In 1976, he became the head of the Beyoğlu youth branch of the Islamist National Salvation Party (MSP),  and was later promoted to chair of the Istanbul youth branch of the party. After the 1980 military coup, Erdoğan followed most of Necmettin Erbakan’s followers into the Islamist Welfare Party. He became the party’s Beyoğlu district chair in 1984, and in 1985 he became the chair of the Istanbul city branch. He was elected to parliament in 1991, but barred from taking his seat.

Mayor of Istanbul (1994–98)

In the local elections of 27 March 1994, Erdoğan was elected Mayor of Istanbul, with a plurality (25.19%) of the popular vote. Many feared that he would impose Islamic law; however, he was pragmatic in office, tackling chronic problems in Istanbul including water shortage, pollution and traffic chaos. The water shortage problem was solved with the laying of hundreds of kilometers of new pipelines. The garbage problem was solved with the establishment of state-of-the-art recycling facilities. While Erdoğan was in office, air pollution was reduced through a plan developed to switch to natural gas. He changed the public buses to environmentally friendly ones. The city’s traffic and transportation jams were reduced with more than fifty bridges, viaducts, and highways built. He took precautions to prevent corruption, using measures to ensure that municipal funds were used prudently. He paid back a major portion of Istanbul Metropolitan Municipality’s two billion dollar debt and invested four billion dollars in the city. Erdoğan initiated the first roundtable of mayors during the Istanbul conference, which led to a global, organized movement of mayors. A seven-member international jury from the United Nations unanimously awarded Erdoğan the UN-HABITAT award.

Imprisonment

In 1998, the fundamentalist Welfare Party was declared unconstitutional on the grounds of threatening the secularism of Turkey and was shut down by the Turkish constitutional court. Erdoğan became a prominent speaker at demonstrations held by his party colleagues. In December 1997, Erdoğan recited a poem in Siirt from a work written by Ziya Gökalp, a pan-Turkish activist of the early 20th century.  His recitation included verses translated as “The mosques are our barracks, the domes our helmets, the minarets our bayonets and the faithful our soldiers….”  which are not in the original version of the poem. Erdoğan said the poem had been approved by the education ministry to be published in textbooks. Under article 312/2 of the Turkish penal code his recitation was regarded as an incitement to violence and religious or racial hatred. He was given a ten-month prison sentence of which he served four months, from 24 March 1999 to 27 July 1999. Due to his conviction, Erdoğan was forced to give up his mayoral position. The conviction also stipulated a political ban, which prevented him from participating in parliamentary elections.

Prime Minister (2003–14)

In 2001, Erdoğan established the Justice and Development Party (AKP). The AKP won a landslide victory in the 2002 election, taking nearly two-thirds of the seats. Erdoğan could not become Prime Minister as he was still banned from politics by the judiciary for his speech in Siirt. Gül became the Prime Minister instead. In December 2002, the Supreme Election Board canceled the general election results from Siirt due to voting irregularities and scheduled a new election for 9 February 2003. By this time, party leader Erdoğan was able to run for parliament due to a legal change made possible by the opposition Republican People’s Party. The AKP duly listed Erdoğan as a candidate for the rescheduled election, which he won, becoming Prime Minister after Gül handed over the post.

Economy

In 2002, Erdoğan inherited a Turkish economy that was beginning to recover from a recession as a result of reforms implemented by Kemal Dervis.  Erdoğan supported Finance Minister Ali Babacan in enforcing macro-economic policies. Erdoğan tried to attract more foreign investors to Turkey and lifted many government regulations. The cash-flow into the Turkish economy between 2002 and 2012 caused a growth of 64% in real GDP and a 43% increase in GDP per capita; considerably higher numbers were commonly advertised but these did not account for the inflation of the US dollar between 2002 and 2012. The average annual growth in GDP per capita was 3.6%. The growth in real GDP between 2002 and 2012 was higher than the values from developed countries, but was close to average when developing countries are also taken into account. The ranking of the Turkish economy in terms of GDP moved slightly from 17 to 16 during this decade. A major consequence of the policies between 2002 and 2012 was the widening of the current account deficit from 600 million USD to 48 billion USD.

 

 

 

آسٹریلیا میں مسلمانوں کی آمد پر پابندی کی تجویز کا مذاق

آسٹریلیا میں اس ٹی وی میزبان کا سوشل میڈیا پر تمسخر اڑایا جا رہا ہے جس نے فرانس کے شہر نیس میں ہونے والے دہشتگردی کے واقعے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ مسلمان تارکین وطن کی آسٹریلیا آمد پر پابندی عائد کر دینی چاہیے۔ سونیا کروگر نے، جو چینل نائن ٹوڈے پر دو پروگراموں کی میزبانی کرتی ہیں، نیس حملے کے بعد اپنے پروگرام میں کہا تھا کہ اگر آسٹریلیا کی سرحدیں وقتی طور پر مسلمانوں کے لیے بند کر دی جائیں تو وہ خود کو زیادہ محفوظ محسوس کریں گی۔ سونیا کروگر نےاپنے ٹوئٹر پیغام میں اپنے خیالات کو ذرہ مختلف انداز میں پیش کرنے کی کوشش کی۔ انھوں نے کہا وہ بطور ایک ماں کے پریشان ہیں اور چاہتی ہیں کہ اس معاملے پر بحث ہونی چاہیے۔ سونیا کروگر کا ہیش ٹیگ asamother# ٹرینڈ کرنے لگا اور کئی لوگوں نے ان پر نسل پرستی کا الزام عائد کیا ہے۔ کمیڈین اور ٹی وی میزبان چارلی پیکرنگ نے اپنی ٹویٹ میں کہا ’ برائے مہربانی ان چیزوں کی فہرست تو بتا دیں جو بطور ماں آپ سمجھتی ہیں کہ آپ کا حق ہے۔ آپ کی بڑی مہربانی ہو گی۔‘

ایک اور ٹوئٹر صارف نے لکھا’ میں امید کرتی ہوں کہ میں بطور ماں اپنے بچوں کو ہر مختلف چیز سے نفرت اور خوف نہ سیکھاؤں۔ لیکن سونیا گروگر کی حمایت میں بھی لوگ بولے جو ان کےخیالات سے متفق ہیں اور ان کہنا ہے کہ انھیں اپنی رائے رکھنے کا حق حاصل ہے۔ سونیا کروگر نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں کہا کہ پچھلے ہفتے نیس کے المناک واقعے کے بعد جس میں دس بچے بھی اپنی جانیں گنوا بیٹھے تھے، میں بطور ماں یقین رکھتی ہوں کہ کسی بھی جمہوری معاشرے کے لیے ضروری ہے کہ نسل پرستی کا الزام لگائے بغیر ان معاملات پر بحث ہونی چاہیے۔ سونیا کروگر نے مزید کہا کہ جاپان مسلمان شدت پسندوں کے حملوں سے اس لیے محفوظ رہا ہے کیونکہ وہاں مسلمان تارکین وطن کی تعداد بہت ہی کم ہے۔

سینیٹر سارہ ہینسن ینگ نے کہا کہ بطور ماں یہ بہتر ہو گا کہ ہم اپنی جہالت اور عدم رواداری کو چھپانے کے لیے بچوں کا استعمال نہ کریں۔ ایک اور ٹوئٹر صارف ڈان واکر نے بطور ماں مجھے اپنے بچوں کو یہ سکھانا ہے کہ مسلمانوں کے بچے بھی انھیں جیسے انسان ہوتے ہیں اور یہ میرا فرض بنتا ہے کہ میں امیتازی سلوک اور تعصب کو مسترد کر دوں۔ ایک اور ٹوئٹر صارف نے لکھا کہ میں ایسی ماؤں پر پابندی چاہتا ہوں جو فقرہ ہی اس لفظ سے شروع کرتی ہیں’ بطور ماں‘ اور یہ فرض کر لیتی ہیں کہ پوری کمیونٹی ہی ممکنہ دہشتگرد ہے۔

لڈیا شیلی نے اپنے پیغام میں کہا ’ آپ کیا سمجھتے ہیں کہ ہمیں دکھ نہیں ہوتا یا ہمیں دہشتگردی سے خوف نہیں آتا، یا ہم غمگین نہیں ہوتے۔ آسٹریلیا کی امیگریشن پالیسی کافی سخت اور پوائنٹس پر مبنی ہے۔ وزیر اعظم میلکم ٹرن بل نے کہا ہے کہ آسٹریلیا کی پالیسی غیر امتیازی ہے اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں کی جا رہی ہے۔ آسٹریلیا کی امیگریشن مخالف جماعت ’ون نیشن پارٹی‘ سے تعلق رکھنے والی سینیٹر پولا ہینسن نے سونیا کروگر کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ سونیا لگی رہو، کم از کم کوئی تو بات کر رہا ہے۔

ترک نوجوان جان کی پرواہ کیے بغیر فوجی ٹینک کے سامنے لیٹ گیا

562168-turkey-1469014233-311-640x480ترکی میں منتخب حکومت کا تختہ الٹنے کی ناکام کوشش کے دوران فوجی ٹینک کے سامنے آنے والے بہادر نوجوان کی تفصیلات منظر ترکی میں منتخب حکومت کا تختہ الٹنے کی ناکاعام پر آگئیں۔ ترکی میں فوجی بغاوت کے بعد احتجاج کے دوران ٹینک کے سامنے لیٹنے والے نوجوان کی تصاویر نے سوشل میڈیا اور دنیا بھر کے میڈیا میں خوب مقبولیت حاصل کی لیکن اب اس نوجوان کی تفصیلات بھی منظرعام پر آگئی ہیں۔ 40 سالہ نوجوان میٹن دوگان فارمیسی کا سابق طالب علم ہے جس نے مارشل لا کی کوشش کے دوران جان کی پرواہ کئے بغیر فوجی ٹینک کے سامنے لیٹ کر صدر رجب طیب اردگان کا حامی ہونے کا ثبوت دیا۔میٹن دوگان کا کہنا ہے کہ 15 اور16 جولائی کی درمیانی شب انہوں نے فوجی بغاوت کا سن لیا تھا اور دیکھا کہ فوج کی بھاری نفری اتاترک ایئرپورٹ کی جانب بڑھ رہی ہے جس کے دوران وہ ایک ٹینک کے سامنے کھڑے ہوگئے جس پر انہوں نے چیخ کر فوجیوں سے مخاطب ہو کر کہا کہ میں ایک سپاہی ہوں تم کس کے سپاہی ہو جس پر فوجی ٹینک رک گیا جس کے بعد فوجیوں کی بڑی تعداد نے انہیں گھیر لیا اور ٹینک ایک مرتبہ پھر ایئرپورٹ کی جانب بڑھنے لگے جسے دیکھتے ہوئے میٹن دوگن دوبارہ ٹینک کے آگے آکر لیٹ گئے جس پر ایک مرتبہ پھر ٹینک رک گئے۔

میٹن دوگن کا کہنا تھا کہ فوجیوں کی بغاوت دیکھ کر ایک لمحے کے لئے بھی میں نے نہیں سوچا کہ میں جو کچھ کر رہا ہوں یہ صحیح ہے یا نہیں لیکن مجھے اتنا علم تھا کہ میرا اقدام جمہوریت کی خاطر ہے۔  دوسری جانب میٹن دوگن کی تصاویر سوشل میڈیا اور عالمی میڈیا پر آنے کے بعد ان کے اس اقدام کو بے حد سراہا گیا یہی نہیں ٹوئٹر پر “ٹینک مین” کے نام سے ہیش ٹیگ بھی ٹاپ ٹرینڈ کرنے لگا۔ میٹن دوگن ان ہزاروں افراد میں سے ایک تھے جو استنبول، انقرہ اور دیگر شہروں میں فوجی بغاوت ناکام بنانے کے لئے سڑک پر نکل آئے تھے۔

بیرون ملک پاکستانیوں کے 506 ارب ڈالر کا کالادھن سفید کرنے کی تیاری

حکومت نے بیرون ملک موجود پاکستانیوں کے کئی سو ارب ڈالر کے کالے دھن کو سفید کرنے کے لیے ایمنسیٹی اسکیم کی تیاری شروع کردی ہے جس کے بعد کئی ارب ڈالر پاکستان میں آنے کی اُمید پیدا ہوجائے گی۔ موجودہ حکومت نے کئی اسکیموں کی ناکامی کے بعد اب ایک نئی اسکیم لانے کی منصوبہ بندی کی ہے جس کے تحت حکومت سوئس اور دیگر بینکوں میں موجود اربوں ڈالر کے سرمائے کو ملک میں لانے کی خواہش مند ہے۔

توقع کی جارہی ہے کہ اس اسکیم کے آنے کے بعد کئی ارب ڈالر ملک میں واپس آئیں گے، جس سے ملک میں ڈالر کی سپلائی میں خاطر خواہ حد تک اضافے کا امکان ہے۔ حکومت کے مذکورہ اقدام کے حوالے سے کرنسی ڈیلرز کا کہنا ہے کہ وقتی طور پر روپیہ مضبوط ہوگا مگر اس سے ٹیکس گزاروں کی حوصلہ شکنی ہوگی۔ خیال رہے کہ ایک اندازے کے مطابق پاکستانیوں کے 506 ارب ڈالر بیرون ملک موجود ہیں، جن کے ملک میں واپس آنے سے جہاں زرمبادلہ کے ذخائر میں تیزی سے اضافہ ہوگا وہیں حکومت کو ٹیکسیز کی مد میں بھی ایک بڑا ریونیو ملنے کی اُمید ہے۔

تختہ پلٹنا مشکل تر ہوتا جا رہا ہے ؟ وسعت اللہ خان

دو  وارداتیں ایسی ہیں جو مکمل ہوجائیں تو کوئی سزا نہیں۔ ادھوری رہ جائیں تو قانوناً  قابلِ گرفت  ہیں۔ ایک خود کشی اور دوسرا کسی حکومت کا تختہ الٹنے کی کوشش۔ دونوں طرح کی وارداتوں میں اگر ارادہ پختہ ، منصوبہ بندی مکمل اور آلہِ واردات موثر نہ ہو اور ایکشن سرعت سے نہ ہو تو کٹہرا اور سلاخیں مقدر ہو سکتی ہیں۔ خودکشی کا عمل چونکہ ذاتی ہے لہٰذا اس میں کامیابی کا تناسب تختہ الٹنے کی کوشش  کے مقابلے میں زیادہ ہے۔ جب کہ تختہ پلٹانے کے لیے ایک سے زائد افراد کو منصوبے کا حصہ بنانا پڑتا ہے۔ یہ عمل ایک طرح کا جوا ہے جس میں جاننا ازبس ضروری ہے کہ آپ کے ہاتھ میں کتنے اکے ہیں اور مخالف کے پاس کتنے کمزور  پتے ہیں۔

کبھی کبھی اکے نہ بھی ساتھ ہوں تو تختہ پلٹا جا سکتا ہے۔ جیسے براعظم افریقہ میں ساٹھ سے نوے کی دہائی تک  ایسے کئی فوجی انقلاب لائے گئے جن میں دو درجن مسلح لوگ کافی ہوا کرتے تھے۔ جزائر کوموروز کی حکومت کا تختہ تو ایک ایسے گروہ نے پلٹ دیا جس میں کرائے کے درجن بھر غیر ملکی فوجی شامل تھے۔ انھوں نے فیس لی اور قیدی صدر کو نئے صدر کے حوالے کیا اور چلتے بنے۔ گھانا میں اسی کے عشرے میں ایک فلائٹ لیفٹننٹ ( جیری رالنگز ) نے حکومت الٹ دی تھی۔ انیس سو انہتر میں لیبیا میں ایک کرنل ( قذافی ) نے شاہ ادریس اور انیس سو باون کے مصر میں کچھ جونئیر افسروں (کرنل نجیب ، جمال ناصر وغیرہ ) نے شاہ فاروق کو چلتا کردیا۔

اسی دور میں امریکی سی آئی اے نے جواں سال بادشاہ رضا شاہ پہلوی سے سازباز کر کے تہران کے چند پہلوانوںاور لفنگوں کو پیسے دے کر دو دن کرائے کے مظاہرے کرائے جن میں ٹریکٹر ٹرالیاں بھر بھر کے مضافاتی علاقوں سے کسان لائے جاتے اور پارلیمنٹ  کے سامنے کھڑے کرا کے نعرے لگوائے جاتے۔اس ڈرامے کو وزیرِ اعظم مصدق کے خلاف عوامی بے چینی کا رنگ دیا گیا اور فوج نے پوری کابینہ کو حراست میں لے کر حکومت برخواست کردی۔ اللہ اللہ خیر صلی۔ افریقہ کو چھوڑ کے جونئیر فوجی افسروں نے جہاں جہاں تختہ پلٹنے کی کوشش کی اکثر ناکامی ہوئی۔ مثلاً انیس سو انچاس میں پاکستان میں میجر جنرل اکبر خان سازش کیس ہو کہ ستر اور نوے کی دہائی اور اب سے چند برس پہلے حزب التحریر سے متاثر کچھ جونئیر افسروں کی جانب سے مبینہ سازش کی پاداش میں کورٹ مارشل کی اطلاعات۔

آپ کو یاد ہوگا کہ اگست انیس سو اکیانوے میں سوویت یونین اگرچہ تحلیل ہو رہا تھا اس کے باوجود بورس یالسن کی قیادت میں پارلیمنٹ کے سامنے عوامی مزاحمت اور ثابت قدمی کے سبب کچھ مہم جو فوجی افسروں کے ایک گروہ کی جانب سے گوربچوف حکومت کا تختہ پلٹنے کی کوشش بہتر گھنٹے میں ہی اپنے گھٹنوں پر بیٹھ گئی۔ فرانس واحد ملک تھا جس نے روسی فوجی جنتا کے ابتدائی اعلان پر یقین کرتے ہوئے اسے تسلیم کرلیا اور بعد میں شرمندگی اٹھائی۔ پاکستان جیسے ممالک میں جہاں فوج سب سے منظم ادارہ سمجھی جاتی ہے جیسا کہ اوپر بتایا گیا کسی جونیئر افسر کی مہم جوئی کامیاب ہونا بہت مشکل ہے۔ تختہ پلٹنے کی صرف وہی کوششیں کامیاب ہو سکیں جو اعلیٰ فوجی ہائی کمان نے متفقہ طور پر کیں اور ہم خیال طفیلی سیاسی شخصیات کو بھی بطور شامل باجہ ساتھ رکھا۔ مگر اس میں بھی آخر وقت تک دھڑکا لگا رہتا تھا۔ جیسے چیف آف آرمی اسٹاف جنرل ضیا الحق سے منسوب وہ فقرہ جو انھوں نے ’’ کو ’’ سے ذرا پہلے مبینہ طور پر پنڈی کے کور کمانڈر جنرل چشتی سے کہا تھا ’’ مرشد کدھرے مروا نہ دئیں‘‘.

واحد جوابی ’’ کو ’’ فوج کے سربراہ جنرل پرویز مشرف کا تھا جس میں چند گھنٹے کے لیے ایسا محسوس ہوا گویا فوج نواز شریف کا تختہ پلٹنے کے معاملے پر منقسم ہے لیکن ’’ جوابی کو’’ اس لیے کامیاب ہوا  کیونکہ بارہ اکتوبر انیس سو ننانوے کو ڈھائی گھنٹے کے چیف آف آرمی اسٹاف لیفٹننٹ جنرل ضیا الدین کو سوائے اپنے کسی ہم پلہ افسر کی حمائیت نہ مل سکی۔ صرف وہی ’’ کو ’’لمبے عرصے تک پائیدار رہے جنھیں یونٹی آف کمانڈ کے تحت برپا کیا گیا۔ جیسے لاطینی امریکا میں چلی  ، ارجنٹینا ، برازیل. سب کے سب یونٹی آف کمانڈ کے سبب کامیاب ہوئے۔ وینزویلا میں ہیوگو شاویز حکومت کا تختہ پلٹنے کی جونئیر افسروں کی دو کوششیں ناکام ہوئیں۔ اس کا ایک سبب عوام کی جانب سے شاویز حکومت کا بھرپور سیاسی ساتھ بھی تھا۔ فلپینز میں مارکوس آمریت کے خاتمے کے بعد جب کورازون اکینو پاپولر ووٹ کے ذریعے صدر منتخب ہوئیں تو ان کے خلاف جونئیر فوجی افسروں کی جانب سے کئی بغاوتیں ہوئیں مگر عوامی طاقت اور مذہبی طبقے کی بھرپور حمائیت نے ان کوششوں کو کامیاب نہیں ہونے دیا۔ جونیئر افسروں کی ناکام کوششوں کا سلسلہ کورازون اکینو کے بعد بھی جاری رہا۔ ایشیا میں جنوبی کوریا میں طویل فوجی حکومتیں چین آف کمانڈ کے اصول کے سبب ہی کامیاب رہیں۔ اس تناظر میں برما کی فوجی جنتا نے عالمی ریکارڈ قائم کیا۔ وہاں انیس سو باسٹھ سے آج تک فوج کی حکمرانی ہے۔ چون برس کے دوران چین آف کمانڈ بدلتی تو رہی مگر ٹوٹی نہیں۔ تھائی لینڈ میں سن انیس سو تیس کے عشرے سے اب تک جتنے بھی ’’ کو ’’ لائے گئے وہ فوج کی اعلی قیادت بادشاہ کی حمائیت سے ہی ممکن کر پائی۔

ایشیا میں جونئیر افسروں کی جانب سے کامیاب ’’ کو ’’  کی بس دو مثالیں ہیں۔پہلی مثال انڈونیشیا ہے جہاں انیس سو پینسٹھ میں جکارتہ کے ڈویژنل ملٹری کمانڈر میجر جنرل سہارتو نے صدر احمد سوئیکارنو کا تختہ پلٹا۔ دراصل یہ ایک جوابی ’’ کو ’’ تھا۔ کیونکہ جونئیر افسروں کے ایک اور گروہ نے جس کا تعلق بائیں بازو سے تھا فوج کی اعلیٰ کمان کے بیشتر افسروں کو قید یا ہلاک کر دیا تھا اور اس گروہ کو مبینہ طور پر صدر احمد سوئکارنو کی درپردہ حمائیت حاصل تھی۔چنانچہ میجر جنرل سہارتو نے چین آف کمانڈ کے خلا کو پر کرتے ہوئے اقتدار پر آسانی سے قبضہ کر کے سوئیکارنو کو معزول کردیا اور پھر انڈونیشیا میں امریکی سی آئی اے کی مدد سے بائیں بازو کی جامع خونی تطہیر شروع ہوئی جس میں لگ بھگ ایک ملین مخالفین کا صفایا کردیا گیا۔ سہارتو نے اگلے تیس برس آرام سے حکومت کی۔

جونئیر افسروں کی جانب سے ایشیا میں کامیاب تختہ پلٹنے کی دوسری مثال افغانستان ہے جہاں اپریل انیس سو اٹہتر میں بری اور فضائی فوج کے جونئیر افسروں نے صدر سردار داؤد کا ایک خونی تبدیلی میں دھڑن تختہ کردیا جو خود بھی اپنے عم زاد شاہ ظاہر شاہ کو انیس سو تہتر میں معزول کر کے برسرِ اقتدار آئے تھے۔ تاہم جونیئر فوجی افسروں کی کوشش اس لیے کامیاب ہوئی کیونکہ افغان فوج کا حجم چھوٹا تھا۔ فوج کی جانب سے تختہ پلٹنے کا پہلا تجربہ تھا اور ان جونئیر افسروں نے اپنے طور پر نہیں بلکہ پرچم اور خلق پارٹی کے نظریاتی کاڈر کے طور پر یہ کام انجام دیا اور چند ہی گھنٹوں بعد قیادت نور محمد ترہ کی کے سویلین کاڈر کے حوالے کردی۔

ویسے تو مشرقِ وسطیٰ میں عراق ، شام ، یمن وغیرہ میں جونئیر افسروں نے کامیاب فوجی بغاوتیں کیں مگر ان بغاوتوں کے پیچھے بھی منظم بعثی یا مارکسسٹ یا قوم پرست سیاسی قوت کی پشت پناہی تھی۔ ان ممالک میں عوام ہمیشہ اقتدار کی خونی میوزیکل چئیر گیم سے الگ تھلگ رکھے گئے۔ چنانچہ وہ ہمیشہ خاموش تماشائی رہے۔ نتیجہ آپ کے سامنے ہے کہ آج اس خطے پر کیا بیت رہی ہے۔

جہاں تک ترکی کا معاملہ ہے تو ایک منتخب ، مقبول اور مستحکم پاپولر حکومت کے خلاف جونئیر فوجی کاڈر کی جانب سے بے موقع مہم جوئی کا انجام یہی ہونا تھا۔ پاکستان کی طرح ترک فوج بھی اپنے نظم و ضبط کے لیے مشہور ہے۔ پاکستان کی طرح ترکی میں بھی چار بار جن جن حکومتوں کا تختہ پلٹا گیا وہ مبینہ طور پر عوامی اعتماد کھو چکی تھیں۔ یہ ’’ کو ’’ فوج کی اعلیٰ قیادت کی جانب سے چین آف کمانڈ کے سائے میں برپا ہوئے لہذا کامیاب رہے۔

فی زمانہ کمیونکیشن کی ترقی  نے سرپرائز ایلیمنٹ کو کم سے کم کردیا ہے جو کسی بھی کامیاب تختہ پلٹ کوشش کا لازمی جزو ہوتا ہے۔ اس مواصلاتی انقلاب کے سبب سماج میں نہ صرف شعوری خواندگی کا تناسب بڑھا ہے بلکہ میڈیا، عدلیہ اور سیاستداں تختہ پلٹ قوتوں کی توقعات سے زیادہ بے باک اور عام آدمی اپنے حقوق کی بابت زیادہ بدتمیز ہوگیا ہے۔ فی زمانہ کامیاب ’’ کو ’’ ٹینکوں پر بیٹھ کر نہیں انٹر نیٹ کی لہروں پر قبضہ کرکے ٹویٹر اور فیس بک کے ہتھیاروں کی مدد سے ریموٹ کنٹرول حکمتِ عملی کے ساتھ ہی برپا ہو سکتا ہے۔ حتیٰ کہ وہ ’’ کو ’’ بھی آؤٹ آف فیشن ہو رہا ہے جو روایتی چین آف کمانڈ کے تحت کامیاب سمجھا جاتا تھا۔ مثلاً جنرل سیسی کی اقتدار پر گرفت مضبوط ہونے کے باوجود مصر آتش فشاں کے دہانے سے پیچھے نہیں ہٹایا جا سکا اور یہ ’’ کو ’’ تب تک ہی برقرار رہ سکتا ہے جب تک جبر کا بوٹ عوام کی گردن پر ہے۔ پہلے ایسا نہیں ہوتا تھا۔عوام کچھ عرصے بعد جبر قبول کر لیا کرتے تھے۔ مگر اس نسل کے پاس موبائیل فون اور میسیجنگ کی سہولت بھی تو نہیں تھی۔

وسعت اللہ خان

Jubilant Erdogan supporters celebrate coup failure

Tens of thousands of demonstrators came out on the streets of Turkey’s capital Ankara and other cities to show support for the President Tayyip Erdogan. On Sunday he told crowds of supporters, called to the streets by the government and by mosques across the country, that parliament must consider their demands to apply the death penalty for the plotters. “We cannot ignore this demand,” he told a chanting crowd outside his house in Istanbul late on Sunday. “In democracies, whatever the people say has to happen.”He called on Turks to stay on the streets throughout the week, and late into Sunday night his supporters thronged squares and streets, honking horns and waving flags. Turkey gave up the death penalty in 2004 as part of a program of reforms required to become a candidate to join the EU. Germany said on Monday that Turkey would lose its EU status if it reinstates the death penalty. Yildirim said Turkey should not act hastily over the death penalty but could not ignore the demands of its people.

 

 

 

 

 

 

 

ترکی کا عوامی انقلاب – اردوغان کو پاکستان میں ماڈل بنانے کی کوشش

ترکی میں فوج کے ایک گروپ کی جانب سے حکومت کا تختہ الٹنے کی کوشش ناکام ہونے پر پاکستان میں حکمران جماعت مسلم لیگ ن کے علاوہ جمعیت علمائے اسلام اور پاکستان پیپلز پارٹی سمیت دیگر جماعتوں نے بھی ترک صدر رجب طیب اردوغان کو مبارک باد دی ہے لیکن جماعت اسلامی نے اس کا مظاہرہ  پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی کی سڑکوں پر بھی کیا ہے۔ کراچی کی سڑکوں پر جماعت اسلامی کی جانب سے ترک عوام اور صدر اردوغان کے ساتھ اظہار یکہجتی کے لیے سرخ بینر لگائے گئے ہیں اور ترکی کے قومی پرچم نما بینروں پر تحریر ہے کہ ترک عوام نے اسلام دشمن لبرل امریکی لابی کو شکست دے دی ہے۔

ان بینروں سے قبل کراچی اور حیدرآباد سمیت کئی شہروں میں اردوغان حکومت محفوظ رہنے کی خوشی میں جماعت اسلامی کی جانب سے مٹھائی تقسیم کی گئی اور ریلیاں بھی نکالی گئی تھیں۔ جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمان کا کہنا ہے کہ جمہوریت کی بقا کے لیے اتنی بڑی قربانی شاید ہی کسی ملک نے دی ہے جو ترکی میں دی گئی۔ ’جہاں فوج اقتدار پر قابض ہوگئی ہو، سڑکوں پر ٹینک موجود ہوں، نئی کابینہ کا اعلان ہو چکا ہو وہاں سیاسی قیادت واپس پہنچ گئی اور عوام نے اپنی تاریخی مزاحمت سے اس پوری بغاوت کو کچل دیا، یہ جمہوریت کی بڑی فتح ہے۔‘ اس سے قبل جماعت کی بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے رہنماؤں کو پھانسی دینے کے خلاف اور کشمیر میں مسلمانوں پر مبینہ مظالم کے خلاف مہم جاری تھی۔

 جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمان کا کہنا ہے کہ اردوغان نے 12 سال عوام کی خدمت کی، اس سے قبل ترکی میں بھی بدعنوانی عام تھی اس دور سے پہلے نجم الدین اربکان نکلا اور ا س کے بعد طیب اردوغان آگے آئے اور ملک کو کرپشن سے پاک کیا اور ترقی کی۔ ’ہم ایک ایسے آدمی اور ایسی قوم کو جس کی ایک تاریخ ہے، اس نے اپنی جمہوریت کے لیے اتنا بڑا کام کیا ہے، اس سے کیوں نہ اظہار یکجہتی کریں اور اس کو رول ماڈل بنائیں، تاکہ عوام بدعنوانی سے پاک ملکی ترقی اور جو انسانی قدریں ہیں ان کی بحالی کے لیے کردار ادا کریں اور قربانیاں دیں۔‘

نوجوان تجزیہ نگار سرتاج خان کا کہنا ہے کہ ’جماعت اسلامی اور اردوغان میں اخوان مسلمین کا نظریاتی تعلق ہے، جس میں اردوغان کے علاوہ پاکستان، انڈیا، افغانستان، مصر، بنگلہ دیش شامل ہیں۔ فی زمانہ بنگلہ دیش اور مصر میں اس پر برا وقت آیا ہوا ہے اور وہاں اس کے رہنماؤں کو پھانسیاں دی جا رہی ہیں۔‘

جامعہ کراچی کے پاکستان سٹڈی سینٹر کے ڈائریکٹر ڈاکٹر جعفر کا کہنا ہے کہ جماعت اسلامی کا ترکی سے نظریاتی تعلق ہے۔ طیب اردوغان کے سیاسی سرپرست اربکان جماعت اسلامی کے ہم خیال تھے اور ان کے آپس میں بہت زیادہ روابط بھی رہے اور جب سے اردوغان اقتدار میں ہیں، جماعت اسلامی بحثیت مجموعی ان کے پالیسیوں کی حمایت کرتی آئی ہے کیونکہ اردوغان اور ان کے جماعت کا بھی دائیں بازو کی سیاست کی طرف جھکاؤ ہے۔

برصغیر کے مسلمانوں کا ترک عوام کے ساتھ پرانا تعلق رہا ہے، سلطنت عثمانیہ کے خاتمے کے خلاف یہاں اسلامی جماعتوں نے ایک بڑی تحریک چلائی تھی جس کو مہاتما گاندھی کی بھی حمایت حاصل رہی۔ جماعت اسلامی پر پاکستان میں فوج کی حمایت اور سیاسی معاونت کے بھی الزامات عائد ہوتے رہے ہیں۔ ڈاکٹر جعفر کا کہنا ہے کہ بنیاد پرست جماعتوں کا فوج کے حوالے سے کوئی اصولی موقف نہیں ہے بلکہ ان کا موقف یہ ہوتا ہے کہ فوج کی سربراہی کرنے والا جرنیل ان کا بندہ ہے کہ نہیں۔ انھوں نے اپنے زمانۂ طالب علمی کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ اس زمانے میں جماعت کا جو لٹریچر شائع ہوتا تھا اس میں کہا جا رہا تھا کہ اسلامی نظام لانے کے لیے جمہوریت ایک طریقہ ہے اور اس کے علاوہ دوسرے طریقے بھی ہو سکتے ہیں یعنی اس کا مطلب یہ تھا کہ اگر ہمارا ہم خیال جرنیل اقتدار میں آگیا ہے تو ہمیں اس کی حمایت کرنی چاہیے۔

ریاض سہیل

بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

کشمیر میں پیلیٹ گن چھرّوں کے استعمال پر شدید تشویش

انڈیا کے زیر انتظام جنوبی کشمیر کی رہائشی چودہ سالہ انشا مشتاق اس وقت سرینگر کے ہسپتال میں انتہائی نگہداشت کے یونٹ میں بستر پر شدید تکلیف میں ہیں اور ان کی والدہ رضیہ بیگم بے یار و مددگار ان کے پاس بیٹھی ہیں۔ انشا مشتاق کا چہرہ سوجنے کے بعد مکمل طور پر بگڑ گیا ہے اور ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ان کی حالت نازک ہے۔ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں علیحدگی پسند کمانڈر برہان وانی کی ہلاکت کے بعد پیدا ہونے والی کشیدگی کے دوران مظاہرین پر انڈین سکیورٹی فورسز کی جانب سے فائرنگ کی گئی جس میں انشا فاطمہ کو بڑی تعداد میں چھرے لگے تھے۔

ان کے والد مشتاق احمد ملک نے بی بی سی کو بتایا کہ ’انشا دیگر خاندان والوں کے ساتھ اپنے گھر کی پہلی منزل پر تھیں۔‘انھوں نے بتایا کہ ’میں نماز پڑھنے مسجد گیا تھا۔ انشا نے جیسے ہی کھڑکی سے باہر جھانکا تو سینٹرل ریزرو پولیس فورس کے اہلکار نے انتہائی قریب سے ان پر چھرے فائر کیے۔‘ امراضِ چشم کے شعبے کے سربراہ ڈاکٹر طارق قریشی نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ ’انشا مشتاق کی دونوں آنکھوں کو شدید نقصان پہنچا ہے اور وہ اب دوبارہ بینائی حاصل نہیں کر پائیں گی۔‘

ڈاکٹر طارق قریشی نے مزید بتایا کہ ’ہمارے پاس ایسے تقریباً 117 کیسز آئے ہیں۔ ان میں سے سات لوگ چھروں کی وجہ سے بینائی کھو بیٹھے ہیں جبکہ دیگر 40 افراد کو آنکھوں پر معمولی زخم آئے جنھیں طبی امداد دینے کے بعد گھر بھیج دیا گیا۔‘ چھروں والی بندوق (پیلیٹ گن) ایک شاٹ گن ہوتی ہے جسے عام طور پر جانوروں کو شکار کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ انڈیا کے زیرِ انتظام کشمیر میں پولیس کی جانب سے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پہلی مرتبہ اس قسم کی گن کا بطور غیر مہلک ہتھیار استعمال سنہ 2010 میں کیا گیا تھا۔ اس بندوق سے ایک وقت میں بڑی تعداد میں گول چھرے فائر کیے جاتے ہیں جو انتہائی تیزی کے ساتھ نکلتے ہیں۔

پیلیٹ گن کے کارتوس میں تقریباً پانچ سو چھرے ہوتے ہیں۔ جب کارتوس پھٹتا ہے تو چھرے ہر طرف پھیل جاتے ہیں۔ عام گولی کی نسبت یہ کم مہلک ہوتے ہیں لیکن اس سے بھی شدید زخم آ سکتے ہیں خاص طور پر اگر یہ چھرے آنکھ میں لگیں۔

کشمیر میں چھروں سے آنے والے زخموں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں نے اخبار انڈین ایکسپریس کو بتایا کہ انھوں نے ’بے ڈھنگے اور نوکیلے چھرے دیکھے ہیں جن سے اس مرتبہ زیادہ نقصان ہو رہا ہے۔‘انڈیا کی سکیورٹی فورسز کو سٹینڈرڈ آپریٹنگ پروسیجر (ایس او پی) کے تحت کارروائی کرنی تھی جس کا مطلب یہ ہے کہ انتہائی کشیدہ صورتحال میں ٹانگوں کا نشانہ بنایا جائے۔ تاہم 90 فیصد زخم وہ جسم کے اوپر کے حصوں پر آئے ہیں۔

کشمیر میں سینٹرل ریزرو پولیس فورس کے ترجمان راجیشور یادو کا اس بات پر اسرار ہے کہ اہلکاروں نے ’مظاہرین سے نمٹنے میں کافی حد تک تحمل کا مظاہرہ کیا۔‘ انھوں نے بتایا کہ ’ہم نے ایک خصوصی کارتوس کا استعمال کیا جو کم اثر اور غیر مہلک ہے۔‘لیکن بہت سے لوگ ان سے اتفاق نہیں کرتے۔ ایک ڈاکٹر نے بی بی سی کو بتایا کہ ’سرکاری فورسز نے جان بوجھ کر سینے اور سروں کو نشانہ بنایا۔ ایسا لگتا ہے کہ انھوں نے ہلاک کرنے کے لیے نشانہ بنایا۔‘

سرینگر ہسپتال جہاں انشا مشتاق زیر علاج ہیں ایسی دردناک اور کرب کی کہانیوں سے بھرا ہوا ہے۔ 17 سالہ شبیر احمد ڈار کو نرس طبی امداد فراہم کر رہی ہیں اور ڈاکٹروں کو ڈر ہے کہ شبیر اپنی دائیں آنکھ کی بینائی کھو بیٹھیں گے۔ ان کے بیڈ کے قریب ہی موجود 16 سالہ عامر فیاض غنی نے بتایا کہ ’میں اپنے دوست کے گھر جا رہا تھا کہ کوئی چیز میری آنکھ پر زور سے آکر لگی۔‘ ڈاکٹروں کے خیال میں فیاض غنی خوش قسمت ہیں کیونکہ ان کی آنکھ بچائی جا سکتی ہے۔ ایسے زخمی اگر بچ بھی جائیں تو انھیں بڑے پیمانے پر مالی مشکلات اور ٹراما کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ جیسا کہ 15 سالہ عابد میر کے ساتھ بھی ہوا ہے۔ عابد میر کے گھر والوں کو اب ان کا علاج کروانے کے لیے مالی امداد کی ضرورت ہے، وہ انھیں ریاست پنجاب میں امرتسر کے ہسپتال لے گئے ہیں۔ ان کے گھر والوں نے بتایا کہ ’عابد کے علاج پر دو لاکھ روپے خرچ آیا ہے۔‘

اسلام فوبیا : برطانوی مسلم صحافی کے اسکارف پر اعتراض کیسے کردیا ؟

 برطانوی اخبار دی سن کے
سابق ایڈیٹر کلوین میک کینزی نے اپنے کالم میں ٹی وی چینل 4 میں فرانس حملے کی رپورٹنگ کے دوران مسلم خاتون صحافی فاطمہ مانجی کے اسکارف پہننے پر سخت تنقید کی تھی جس کے بعد میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی کو قارئین کی جانب سے کلوین میک کینزی کے خلاف 300 شکایت موصول ہوئیں۔ کلوین میک کینزی نے برطانوی اخبار میں اپنے کالم میں لکھا کہ مجھے مشکل سے یقین آرہا ہے کہ خاتون اسکارف پہننے ٹی وی میں پروگرام کررہی ہے‘۔ انہوں نے لکھا تھا کہ ’پرتشدد خطے اور مردوں کے معاشرے میں حجاب مسلم خواتین کی غلامی کی علامت ہے‘۔

کلوین میک کینزی برطانوی اخبار ’دی سن‘ کے بہترین ایڈیٹر کی وجہ مشہور ہیں، وہ 1981 سے 1994 تک دی سن سے منسلک رہے۔ خیال رہے کہ 2012 سے فاطمہ مانجی نیوز بلٹین میں میزبانی کے فرائض انجام دے رہی ہیں، وہ لندن میں نیوز پروگرام میں جان سنو کی شریک میزبان تھیں، جان سنو فرانس سے ٹرک ڈرائیور کے 84 افراد کو ہلاک کرنے کی رپورٹ کررہے تھے۔ جان میک کنیزی کے بیان پر ٹی وی چینل 4 کے حکام نے بھی شدید احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ جان میک کنیزی کا بیان ناقابل قبول اور نفرت انگیز ہے، ان کا بیان مذہبی اور نسلی تعصب کو اکسانے پر مبنی ہے۔

ٹی وی چینل 4 کے حکام کا کہنا تھا کہ فاطمہ مانجی ایوارڈ یافتہ صحافی ہیں، ہمیں فخر ہے کہ وہ ہمارے چینل اور ٹیم کا حصہ ہیں، ہم ان کی حمایت کریں گے۔ انڈیپینڈنٹ پریس اسٹینڈرڈ آرگنائرزیشن (آئی پی ایس او) کا کہنا ہے کہ کلوین میک کینزی کے خلاف شکایت پر کارروائی کی جائے گی۔