Fascinating Facts about Jellyfish

Jellyfish or jellies  are the major non-polyp form of individuals of the phylum Cnidaria. They are typified as free-swimming marine animals consisting of a gelatinous umbrella-shaped bell and trailing tentacles. The bell can pulsate for locomotion, while stinging tentacles can be used to capture prey. Jellyfish are found in every ocean, from the surface to the deep sea. Scyphozoans are exclusively marine, but some hydrozoans live in freshwater. Large, often colorful, jellyfish are common in coastal zones worldwide. Jellyfish have roamed the seas for at least 500 million years,  and possibly 700 million years or more, making them the oldest multi-organ animal.
The English popular name jellyfish has been in use since 1796.  It has traditionally also been applied to other animals sharing a superficial resemblance, for example ctenophores (members from another phylum of common, gelatinous and generally transparent or translucent, free-swimming planktonic carnivores now known as comb jellies) were included as “jellyfishes”.  Even some scientists include the phylum ctenophora when they are referring to jellyfish.  Other scientists prefer to use the more all-encompassing term gelatinous zooplankton, when referring to these, together with other soft-bodied animals in the water column.

Anatomy

Most jellyfish do not have specialized digestive, osmoregulatory, central nervous, respiratory, or circulatory systems. The manubrium is a stalk-like structure hanging down from the centre of the underside, often surrounded by oral arms, which connects with the mouth/anus at the base of the bell.  This opens into the gastrovascular cavity, where digestion takes place and nutrients are absorbed. It is joined to the radial canals which extend to the margin of the bell, where tentacles are attached. Nematocysts, which deliver the sting, are located mostly on the tentacles; Scyphozoans also have them around the mouth and stomach. Jellyfish do not need a respiratory system since their skin is thin enough that the body is oxygenated by diffusion. They have limited control over movement, but can use their hydrostatic skeleton to navigate through contraction-pulsations of the bell-like body; some species actively swim most of the time, while others are mostly passive.  Depending on the species, the body contains between 95 and 98% water. Most of the umbrella mass is a gelatinous material — the jelly — called mesoglea which is surrounded by two layers of protective skin. The top layer is called the epidermis, and the inner layer is referred to as gastrodermis, which lines the gut.

Nervous system

Jellyfish employ a loose network of nerves, located in the epidermis, which is called a “nerve net”. Although traditionally thought not to have a central nervous system, nerve net concentration and ganglion-like structures could be considered to constitute one in most species.  A jellyfish detects various stimuli including the touch of other animals via this nerve net, which then transmits impulses both throughout the nerve net and around a circular nerve ring, through the rhopalial lappet, located at the rim of the jellyfish body, to other nerve cells.

Vision

Some jellyfish have ocelli: light-sensitive organs that do not form images but which can detect light and are used to determine up from down, responding to sunlight shining on the water’s surface. These are generally pigment spot ocelli, which have some cells (not all) pigmented. Certain species of jellyfish, such as the box jellyfish, have more advanced vision than their counterparts. The box jellyfish has 24 eyes, two of which are capable of seeing color, and four parallel information processing areas or rhopalia that act in competition, supposedly making it one of the few creatures to have a 360-degree view of its environment. The eyes are suspended on stalks with heavy crystals on one end, acting like a gyroscope to orient the eyes skyward. They look upward to navigate from roots in mangrove swamps to the open lagoon and back, watching for the mangrove canopy, where they feed.


Size

Jellyfish range from about one millimeter in bell height and diameter to nearly 2 metres (6.6 ft) in bell height and diameter; the tentacles and mouth parts usually extend beyond this bell dimension. The smallest jellyfish are the peculiar creeping jellyfish in the genera Staurocladia and Eleutheria, which have bell disks from 0.5 mm to a few millimeters in diameter, with short tentacles that extend out beyond this, which these jellyfish use to move across the surface of seaweed or the bottoms of rocky pools.  Many of these tiny creeping jellyfish cannot be seen in the field without a hand lens or microscope; they can reproduce asexually by splitting in half (called fission). Other very small jellyfish, which have bells about one millimeter, are the hydromedusae of many species that have just been released from their parent polyps;  some of these live only a few minutes before shedding their gametes in the plankton and then dying, while others will grow in the plankton for weeks or months. The hydromedusae Cladonema radiatum and Cladonema californicum are also very small, living for months, yet never growing beyond a few mm in bell height and diameter.  Another small species of jellyfish is the Australian Irukandji, which is about the size of a fingernail.

Taxonomy

Jellyfish belong to Medusozoa, the clade of cnidarians which excludes Anthozoa (e.g., corals and anemones). This suggests that the medusa form evolved after the polyps. The phylogenetics of this group are complex and evolving. The Medusozoa and Octocorallia are proposed as sister groups according to research published in 2012. That research also proposes coronate Scyphozoa and Cubozoa as a sister clade to Hydrozoa and discomedusan Scyphozoa, which are themselves sister groups. The hydroidolinans are a sister group to Limnomedusae, also called Trachylina. Semaeostomae is paraphyletic with Rhizostomeae. The class Storozoa was the earliest group of Medusozoa to diverge and the Limnomedusae were the earliest Hydrozoa to diverge.



Lifespan

Jellyfish lifespans typically range from a few hours (in the case of some very small hydromedusae) to several months; there are some indications that deep sea species may live on the order of years. Life span varies by species. Most large coastal jellyfish live 2 to 6 months, during which they grow from a millimeter or two to many centimeters in diameter. Aquarium jellyfish that are carefully tended, fed daily even when food might be seasonally rare in the wild, and sometimes treated with antibiotics if they develop infections, may live several years, though this would be very unusual in the wild.

An unusual species, Turritopsis dohrnii, formerly classified as T. nutricula,  might be effectively immortal because of its ability under certain circumstances to transform from medusa back to the polyp stage, thereby escaping the death that typically awaits medusae post-reproduction if they have not otherwise been eaten by some other ocean organism. So far this reversal has been observed only in the laboratory.  At least one professor at the Seto Marine Biological Laboratory at Kyoto University in Japan has concluded that there are three species of jellyfish that are immortal, and says their immortality may hold the key to immortality for human beings, as he says that genetically they are not that much different from humans.

NATO launches sea mission against migrant traffickers

 NATO ships are on their way to the Aegean Sea to help crack down on criminal networks smuggling refugees into Europe

NATO launches sea mission against migrant traffickers

Supporters of Faustin Archange rally during a sand storm

Supporters of Presidential candidate Faustin Archange Touadera rally during a sand storm in the streets of Bangui, Central African Republic. Two former prime ministers, Touadera and Anicet Georges Dologuele, are running neck-and-neck in the second round of presidential elections to end years of violence pitting Muslims against Christians in the Central African Republic.

درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہوجانا…وسعت اللہ خان

پاکستان میں موجود چھ بین الاقوامی دوا ساز کمپنیوں نے اپنی طبی مصنوعات کی قیمتوں میں پندرہ فیصد یکطرفہ اضافہ کردیا۔ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی کو بھی یہ اطلاع میڈیا ہی سے ملی کہ جس کا کام ہی دواؤں کی قیمتوں کو باقاعدہ اور دوا ساز کمپنیوں کو قابو میں رکھنا ہے۔کہتے ہیں دو ہزار تیرہ میں بھی دواساز کمپنیوں نے ایسے ہی پندرہ فیصد قیمت بڑھائی تھی۔

اب چند دن حسب ِ روائیت عوامی حلقے شور مچائیں گے ، بی کیٹگری کے پریس ریلیزی سیاستداں سنگل کالمی مذمت چھپوائیں گے ، دوا ساز کمپنیوں کے ترجمان خام مال کی مہنگائی کا رونا روتے ہوئے دیگر ممالک کے مقابلے میں پاکستان میں دواؤں کی سستائی ثابت کرنے والے جدول اور چارٹ دکھائیں گے ، پیچیدہ اصطلاحات کی جلیبی بنا کر ٹی بی زدہ شیدے ، ڈائلسس زدہ حمیدہ ، بائی پاس زدہ کمالو ، سردرد زدہ چمن علی اور رعشہ زدہ مختاراں کو سمجھائیں گے کہ جو کچھ بھی اضافہ ہوا وہ وقت کی اہم ضرورت ہے۔
آخر کو ہمیں بھی خدا کو منہ دکھانا ہے ، کیا ہمارے دل نہیں دکھتے ایسے فیصلے کرتے وقت ، کیا ہمارے بال بچے بیمار نہیں ہوتے وغیرہ وغیرہ۔اور ڈرگ کنٹرول اتھارٹی ایک بار پھر کندھے اچکا کے دیگر ضروری کاموں کی ریت میں گردن چھپا لے گی۔یوں سب کے سب دواؤں کی قیمتوں میں اگلے یکطرفہ اضافے تک ہنسی خوشی رہنے لگیں گے۔

مگر میرا مقدمہ کچھ اور ہے۔ بات دوا کے مہنگے سستے ہونے سے زیادہ یہ ہے کہ جن دواؤں کا اسٹاک ریٹ بڑھانے سے پہلے ہی سے بازار میں پڑا ہے کیا اسے پرانے ریٹ پر ہی رہنے دیا جائے گا یا بازار سے اٹھوا کر نئی قیمت کا ٹھپہ لگا کر پھر لایا جائے گا۔اس سوال کا سو فیصد جواب ہے کہ ہاں ایسا ہی ہوگا۔ ثبوت یہ ہے کہ جن دواؤں کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ، ان کی قلت پیدا ہوگئی ہے۔ جوں جوں اضافی قیمت کے ٹھپے لگتے جائیں گے توں توں وہ بازار میں دستیاب ہوتی چلی جائیں گی۔

میری بلا سے سردرد کی پیٹنٹ گولی دس روپے کی آئے کہ سو کی۔ مجھے تو کوئی بس یہ بتا دے کہ کیا دس روپے کی گولی بیس روپے کی ہونے کے بعد خالص ملے گی ؟ یہ سوال یوں آ رہا ہے کہ اس وقت پاکستان کی ڈرگ مارکیٹ میں جعلی دواؤں کا تناسب چالیس سے پچاس فیصد کے درمیان بتایا جاتا ہے۔ چند بڑے شہر چھوڑ کے قصبات اور دیہات دو نمبر بلکہ تین نمبر دواؤں کی سلطنت ہیں۔ورنہ جگہ جگہ کاہے کو سننا پڑے  کہ بس فلاں میڈیکل اسٹور سے دوائیں خریدنا اور کہیں سے مت لینا۔
میرا مسئلہ دواؤں کی قیمت آسمان چھونے سے زیادہ یہ ہے کہ مہنگی ہونے کے بعد کیا اسپتالوں کو ایکسپائرڈ دواؤں کی سپلائی کم ہو جائے گی۔ہوسکتا ہے دوا ساز کمپنیاں کہیں کہ ہم تو صرف دوائیں بناتے ہیں۔یہ ذمے داری تو ہول سیلرز کی ہے کہ وہ ایکسپائرڈ یا نان ایکسپائرڈ کا خیال رکھیں۔اور ہول سیلرز یہ کہیں گے کہ کمپنیاں ہم سے ایکسپائرڈ دوائیں واپس نہیں لیتیں تو ہم کیا کریں ؟
یہ بات تو طے ہے کہ دوائیں ایک خاص تاریخ کے بعد استعمال نہیں کی جاسکتیں۔مگر کوئی بتا سکتا ہے کہ پھر ان دواؤں کاآخر ہوتا کیا ہے ؟ میں نے منوں ٹنوں منشیات تلف ہونے یا سیکڑوں لیٹر شراب سے بھری بوتلیں بلڈوزروں سے کچلے جانے کی تصاویر تو بے شمار دیکھی ہیں لیکن آج تک حسرت ہی رہی کہ کوئی دوا ساز کمپنی ، کوئی ہول سیلر ، کوئی محکمہ صحت ، کوئی ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی یہ شایع تصویر بھی دکھا دے کہ ایکسپائرڈ دواؤں کے ذخیرے کو برسرِ عام تلف کیا جارہا ہے۔تو پھر یہ سب کہاں جاتی ہیں ؟ کہیں تو جاتی ہی ہوں گی اور وہاں سے ہمارے جسموں میں ہی آتی ہوں گی۔
کیا ڈرگ کنٹرول اتھارٹی کسی دوا ساز کمپنی کو طے شدہ میکنزم سے انحراف پر سزا دے سکتی ہے ؟ شائد سزا کا ڈھانچہ موجود ہے مگر اس ڈھانچے کو کتنی بار زحمت دی گئی۔
مان لیاڈرگ کنٹرول اتھارٹی سے بالا بالا دواؤں کی قیمت نہیں بڑھائی جاسکتی لیکن خود اتھارٹی کی منظوری سے بھی جو قیمت بڑھتی ہے اس میں کتنی شفافیت ہوتی ہے ؟ میں سن اسی کے عشرے کے آخری برسوں کے ایک وزیرِ صحت سے واقف ہوں جو ڈرگ کنٹرول اتھارٹی سے قیمتوں میں اضافہ کرانے کے چند دن بعد ملک سے ایسے چمپت ہوئے کہ زندگی میں واپس نہ لوٹے۔اس زمانے میں یہ بات زبان زدِ عام تھی کہ دس کروڑ روپے جس وزیر کو یکمشت ہاتھ آجائیں اسے پاکستان میں رہنے کی ضرورت ہی کیا۔ تو پچھلے ستر برس میں کیا اپنی نوعیت کا یہ ایک ہی کیس ہوا ہوگا ؟
چلیے گولی ماریں سردرد کی گولی بنانے والے گولی بازوں کو۔اس پاکستان میں کتنے کاروباری ہیں جو منافع کا موقع سامنے ہو اور وہ اس پر شبخون نہ ماریں ؟کیا پٹرول کی قیمتوں میں اضافے یا کمی کے بعد چوبیس گھنٹے کے لیے پٹرول پمپ بند نہیں ہوتے ؟ کیا پرانے پٹرولیم ، ڈیزل اور گیس اسٹاک کو پرانی قیمت پر ہی خالی کیا جاتا ہے ؟رمضان کے مہینے میں کیا ہوتا ہے ؟ کون کون مسلمان کاروباری روزے کے ثواب کو روزی کی چاندی سے نہیں بدلتا اور آخری دس روز میں عمرے کی فلائٹ نہیں پکڑتا ؟
یہ پی آئی اے کی ہڑتال تو ابھی کی بات ہے۔ اس ہڑتال کے ستائے ہزاروں پسنجروں کی دیگر ایرلائنز نے جس طرح مدد کی وہ ہماری تہذیبی و اخلاقی روایات کے پنے پر سونے کے پانی سے لکھے جانے کے قابل ہے۔ کراچی اسلام آباد ریٹرن ٹکٹ جو عام دنوں میں پندرہ سے پچیس ہزار روپے کے درمیان رہتا ہے ، ہڑتال کے پہلے دو دنوں میں چون ہزار روپے تک جا پہنچا۔ یعنی ایک عام پاکستانی مسافر کے کپڑے پی آئی اے کی ہڑتال نے اتار لیے اور کھال دیگر فضائی کمپنیوں کے ہاتھ آئی۔کیا کوئی مونو پلی کمیشن ، کوئی ایف آئی اے ، کوئی نیب ، کوئی محتسب ، کوئی حکومت حرکت میں آئی، صرف یہ بتانے کے لیے کہ ’’ کوئی شرم ہوتی ہے ، کوئی حیا ہوتی ہے ، کوئی تہذیب ہوتی ہے ‘‘۔
میرے پاس اس وقت کچھ نہیں بچا مزید سوچنے کو لکھنے کو علاوہ اس ہزار بار سنی پھٹیچر کہانی کے۔
’’ بادشاہ کے لشکر نے ایک گاؤں کے نزدیک پڑاؤ ڈالا۔ خیمے تن گئے۔گوشت چولہوں پے چڑھ گیا۔بادشاہ نے شاہی کارندے کو دوڑایا کہ گاؤں سے نمک خرید لاؤ۔کسی لال بھجکڑ  درباری نے پوچھا حضور نمک جیسی حقیر شے خریدنے کی کیا ضرورت۔ گاؤں والے ویسے ہی ڈلے کے ڈلے لے آئیں گے۔ آخر کو آپ ان کے بادشاہ اور وہ رعایا ہیں۔بادشاہ نے زیرِ لب مسکراتے ہوئے کہا اگر میں نے نمک جیسی بے قیمت شے بھی مفت حاصل کرنے کی اجازت دے دی تو اسے مثال سمجھ کے میرا لشکر پورے گاؤں کو مفت کا مال سمجھ کے اجاڑ ڈالے گا۔
مگر یہ پرانے دور کی کہانی ہے جب بادشاہ کی چلا کرتی تھی۔اب تو بادشاہ خود چابی سے چلتا ہے۔ان حالات میں دواؤں کا طالب مریض ہو ، کہ سستی کھاد کا منتظر کسان ، کہ موٹر سائیکل میں پٹرول ڈلوانے والا بے روزگار ، کہ اپنی تنخواہ میں ہی گذارہ کرنے والا صابر و سادہ پوش۔، ان سب کے لیے ایک ہی پیغام ہے۔اناللہ وانا الیہہ راجعون۔۔
وسعت اللہ خان

جب روس نے جلا وطن الاسد قبول کیا

سابق شامی نائب صدر فاروق الشرع کی حال ہی میں شائع ہونے والی کتاب میں انکشاف کیا گیا ہے کہ کس طرح روس نے ۱۹۸۴ میں شام کے صدر حافظ الاسد اور ان کے چھوٹے بھائی اور فوج کے سربراہ رفعت الاسد کے درمیان شدید تنازعہ کے باعث پیدا ہونے والے بحران کے خاتمے میں بنیادی کردار ادا کیا تھا۔

کتاب کے مطابق حافظ الاسد کی علالت کے دوران اقتدار پر جانشینی کے مسئلہ پر ان کے اور رفعت الاسد کے درمیان اختلافات شدید ہوگئے تھے، اس وقت روس نے رفعت الاسد کو بطور جلا وطن رہنما قبول کرنے پر آمادگی ظاہر کی تھی۔ اس انکشاف سے یہ مطلب بھی اخذ کیا جا رہا ہے کہ اگر روس ماضی کو دہراتے ہوئے حالیہ بحران میں بشار الاسد کو بھی جلاوطنی میں قبول کر لے تو یہ کوئی تعجب کی بات نہیں ہوگی۔
فاروق الشرع جو ۲۰۱۲ کے بعد سے منظر عام پر دکھائی نہیں دئے ہیں، کے مطابق تنازعہ اس کھڑا ہوا تھا جب رفعت الاسد نے دمشق انتظامیہ پر کنٹرول کی کوششیں کیں جس سے حکمران علوی خاندان تقسیم ہو گیا۔ مگر جب حافظ اور رفعت کے وفادار فوجی گروپوں میں لڑائی چھڑنے ہی والی تھی کہ حافظ الاسد کومے کی حالت سے جاگ گئے۔
سوویت حکومت نے مداخلت کرتے ہوئے اپنے اول نائب وزیر اعظم حیدر علیوف کو عجلت میں دمشق بھیجا جنہوں نے فوری طور پر رفعت الاسد سے ملاقات کا مطالبہ کیا۔ کتاب کے مطابق حافظ الاسد نے سوویت مداخلت کو مسترد نہیں کیا تاہم رفعت سے ملاقات کے لئے فاروق الشرع کو علیوف کے ساتھ بھیجا تاکہ ان کی گفتگو اور منصوبے سے آگاہ رہ سکے۔ بعد ازاں حافظ الاسد نے رفعت کو نائب صدر کے عہدے پر ترقی دے دی مگر ان کے اختیارات کم کر دئے۔

الشرع لکھتے ہیں کہ صدر کی درخواست پر انہوں نے اس تنازعے کا حل نکالا اور رفعت کے شام سے باعزت اخراج کا منصوبہ بنایا جس کے تحت فرانس کے سفیر سے درخواست کی گئی کہ وہ رفعت کے پیرس کے سرکاری دورے کا بندوبست کریں جس کے بعد وہ وہاں طویل قیام کر سکیں۔ مگر فرانس نے جلا وطن رفعت کو قبول کرنے سے انکار کردیا۔ کچھ عرصہ بعد فرانس سے پھر یہی درخواست کی گئی مگر پیرس حکام نے اپنا فیصلہ بدلنے سے انکار کردیا جس کے باعث دونوں ملکوں کے تعلقات میں تناؤ پیدا ہوگیا۔

پیرس سے مایوس ہو کر الشرع نے ماسکو سے رجوع کیا جہاں سے فوراً مثبت جواب آیا۔ پھر حافظ الاسد نے رفعت کو نائب صدر کی حیثیت سے ایک اعلی سطحی وفد کے ہمراہ ماسکو بھیجا۔ اپنے ۷۰ وفادار افسران کے ہمراہ یہ رفعت کا الوداعی دورہ تھا جس کے بعد انہوں نے تا حکم ثانی جلا وطن ہی رہنا تھا۔ رفعت نے تنازعہ کے حل کے لئے شام کو چھوڑنا منظور کر لیا تھا مگر حافظ الاسد حالات پر مکمل قابو رکھنا چاہتے تھے جس کے لئے انہوں نے الشرع کو بھی ان کے ساتھ ماسکو بھیجا۔ حافظ الاسد نے کئی سیکیورٹی افسروں کو بھی رفعت کے وفادار افسروں کے ساتھ ماسکو بھیج دیا جو ’لازمی تفریح اور دلبستگی‘ کے لئے روس بھیجے جا رہے تھے۔ الشرع کے مطابق ماسکو نے ان کی میزبانی بھی قبول کر لی تھی۔
الشرع لکھتے ہیں کہ سفر کے دوران جہاز میں رفعت اور تھرڈ ڈویژن کے کمانڈر شفیق فائد کے درمیان کسی بات پر جھگڑا ہو گیا جو اتنا بڑھ گیا کہ بندوقیں نکل آئیں۔ مگر فضائیہ انٹیلی جنس کے سربراہ محمد الخولی کی مداخلت پر معاملہ ٹھنڈا ہوا۔
کریملن نے پروٹوکول کے مطابق رفعت کا استقبال کیا اور دونوں حکومتوں کے درمیان سرکاری بات چیت بھی ہوئی۔ الشرع لکھتے ہیں کہ رفعت ماسکو حکام سے اپنی ملاقاتوں اور روسی میڈیا کو دئے بیانات سے حافظ الاسد کو آگاہ کرتے رہتے تھے۔ یہ بیانات الشرع کی مدد سے تشکیل دئے جاتے تھے۔ وہ مزید لکھتے ہیں کہ انہیں خطرہ تھا کہ رفعت کے کسی غیر محتاط بیان کو روسی حکام اپنے مفادات کے لئے استعمال نہ کر لیں یا رفعت شام کے بحران کے بارے میں کوئی نامناسب بات نہ کہ دیں۔
تب اور اب
ماضی میں روس کی مداخلت نے شام کو خانہ جنگی اور انتشار سے بچایا تھا۔ ان حالات کو یاد کرتے ہوئے یہ واضح دیکھا جاسکتا ہے کہ ماضی اور آج کے ماسکو اور پچھلے اسد اور موجودہ اسد میں کیا فرق ہے۔
مشرق وسطی کی بدترین سیاسی اور انسانی تباہی کی بنیادی وجہ بشار الاسد ہے۔ اس کو ہٹانا اب ناگزیر ہوچکا ہے کیونکہ اس نے قتل عام اور وسیع تباہی پھیلا کر مصالحت کے ذریعے شام کے بحران کے حل کے تمام امکانات کو بھی تباہ کر دیا ہے۔ بشار کے اقتدار میں رہنے سے دہشت گردی اور تباہی بڑھتی جائے گی جو سیاسی نظام، اس کے خاندان، فرقے، ملک، اور پورے خطے اور دنیا کے لئے ذیادہ بڑی تباہی کا باعث ہوگی۔
اگر روسیوں نے آج بھی وہی کیا ہوتا جو انہوں نے ۱۹۸۴ میں کیا تھا، اور اگر انہوں نے بشار سے مستعفی ہونے کے مطالبہ کی حمایت کی ہوتی، تو وہ خطے اور دنیا کو اس تباہی و بربادی سے بچا سکتے تھے۔ آخر میں سب یہ جان لیں گے کہ بشار اقتدار میں ذیادہ دیر نہیں رہ سکتا کیونکہ اس کی حکومت تباہ ہوچکی ہے۔ اگر روسی آج ایک مثبت کردار ادا کرتے ہیں اور بشار کو ہٹانے میں مدد کرتے ہیں، تو وہ نہ صرف اس انسانی المیے کو ختم کریں گے بلکہ شام اور اپنے امیج کی تعمیر نو بھی کریں گے۔
عبدالرحمان الراشد

Erdogan, tries to convince a woman to quit smoking

Turkish President Recep Tayyip Erdogan, tries to convince a woman to quit smoking in Istanbul’s Sultangazi district, Turkey’s forceful President Erdogan hosted a reception at his palace in Ankara for some 300 people who have quit smoking, including 18 people whom he has personally persuaded to give up. (AP)

Einstein’s gravitational waves detected by scientists

A bird’s eye view of Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) Hanford laboratory’s laser and vacuum equipment area (LVEA) which houses the pre-stabilized laser, beam splitter, input test masses, and other equipment near Hanford, Washington is shown in this June 26, 2014 photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016.
The collision of two black holes holes – a tremendously powerful event detected for the first time ever by the Laser Interferometer Gravitational-Wave Observatory, or LIGO – is seen in this still image from a computer simulation released in Washington. Scientists have for the first time detected gravitational waves, ripples in space and time hypothesized by Albert Einstein a century ago, in a landmark discovery announced on Thursday that opens a new window for studying the cosmos. 
Dr. David Reitze, Executive Director of the LIGO Laboratory at Caltech, speaks about gravitational waves, ripples in space and time hypothesized by physicist Albert Einstein a century ago, in Washington February 11, 2016. The waves were detected by twin Laser Interferometer Gravitational-wave detectors (LIGO) in Louisiana and Washington states in September 2015.
Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) technicians perform a Large optic inspection in this undated photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016. The twin detectors, a system of two identical detectors constructed to detect incredibly tiny vibrations from passing gravitational waves, are located in Livingston, Louisiana, and Hanford, Washington.
A Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) technician installs a mode cleaner tube baffle used to control stray light as a part of the Advanced LIGO auxiliary optics system in this December 24, 2010 photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016. Scientists said they have for the first time detected gravitational waves, ripples in space and time hypothesized by physicist Albert Einstein a century ago, in a landmark discovery that opens a new window for studying the cosmos. 
An artist’s illustration shows a supermassive black hole with millions to billions times the mass of our sun at the center, surrounded by matter flowing onto the black hole in what is termed an accretion disk in this NASA illustration released on February 27, 2013. Supermassive black holes are enormously dense objects buried at the hearts of galaxies. This disk forms as the dust and gas in the galaxy falls onto the hole, attracted by its gravity.
Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) technicians working at LIGO Livingston Observatory near Livington, Louisiana in this undated photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016. 
An aerial photo shows Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) Livingston Laboratory detector site near Livingston, Louisiana in this undated photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016.
A bird’s eye view of Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) Hanford laboratory’s laser and vacuum equipment area (LVEA) which houses the pre-stabilized laser, beam splitter, input test masses, and other equipment near Hanford, Washington is shown in this June 26, 2014 photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016. 
One of Laser Interferometer Gravitational-wave Observatory (LIGO) test masses installed as the 4th element in a 4-element suspension system is shown in this September 5, 2013 photo released by Caltech/MIT/LIGO Laboratory on February 8, 2016. “Test masses” are what LIGO scientists call the mirrors that reflect the laser beams along the lengths of the detector arms. The 40 kg test mass is suspended below the metal mass above by 4 silica glass fibers.

تبلیغ پر پابندی کیوں؟

حال ہی میں حکومت پنجاب نے دہشت گردوں کی طرف سے توجہ ہٹا کر ایک اور محاذ کھول لیا ہے۔ اس نے تعلیمی اداروں میں تبلیغ اور دروسِ قرآن پر پابندی اور منبر و محراب کے گرد گھیرا تنگ کرنے کے احکام جاری کردیے ہیں۔ یوں سودی معیشت پر اصرار کے بعد اللہ اور اس کے رسولﷺ کے خلاف ایک اور بغاوت کر دی ہے۔ اللہ کے نبی ؐ نے فرمایا تھا کہ میں تو مبلغ بنا کر بھیجا گیا ہوں اور ساتھ آپ نے یہ بھی فرمایا کہ مجھ سے جو بات بھی تم تک پہنچے ، اسے آگے پہنچاؤ۔ اسی نبیؐ کے ماننے والے حکمران تبلیغ کو ممنوع قرار دے کر یہ ثابت کر رہے ہیں کہ ان کے دعوے اور ہیں اور عمل اور۔
 تبلیغی پروگراموں میں کہاں دہشت گردی کی بات ہوتی ہے؟ لوگوں کو نماز کی طرف بلانا، قرآن کی تعلیم دینا اور ان کے عقائد درست کرنا، درحقیقت ان کی بدعملیوں اور بدکرداریوں کے خاتمے کا سبب بنتا ہے، جس کے نتیجے میں لاقانونیت اور دہشت گردی کا خاتمہ ہوتا ہے۔ اس کے برعکس اگر لوگوں کو ان مثبت سرگرمیوں سے بھی روک دیا جائے تو ردِ عمل میں کئی خام ذہن کے لوگ پٹری سے اتر جاتے ہیں۔

ہم ہر اس اقدام کی حمایت کرتے ہیں، جو خون ریزی،لاقانونیت اور دہشت گردی کے خاتمے کا سبب بنے۔ اسی طرح ہم ہر اس حکم کی مخالفت و مذمت کرتے ہیں، جو اسلام کے نام پر وجود میں آنے والے اس پاک وطن میں اسلام کی آواز دبانے کے لئے صادر کیاجائے ۔ حکمرانوں کے اس طرح کے اوچھے ہتھکنڈے مضحکہ خیز ہی نہیں ان کی ناکامی پر مہر تصدیق ثبت کرنے کا باعث بھی ہیں۔ اس افسوسناک سرکاری حکم کے خلاف جماعت اسلامی نے تو قومی اسمبلی اور سینیٹ کے علاوہ پنجاب اسمبلی میں بھی قراردادیں پیش کی ہیں۔
 ہم تحسین کرتے ہیں کہ جماعت کے علاوہ پنجاب اسمبلی میں حزب اختلاف سے تعلق رکھنے والی جماعت مسلم لیگ (ق )کے ایک ایم پی اے سردار وقاص حسن موکل نے بھی ایک قرار داد پیش کی ہے، جس میں اس پابندی کو ناروا قرار دیا ہے۔ ان کی اس قرار دادپر ہر محب وطن پاکستانی اور مخلص مسلمان سراپا تحسین ہے۔ اللہ کرے وہ اپنی قرارداد پر ثابت قدم رہیں اور ایوان میں بیٹھے ہوئے کلمہ گو ارکان کا ضمیر بھی بیدار ہوجائے ۔اس قرار داد کا جو متن ذرائع ابلاغ میں آیا ہے اس کے مطابق انہوں نے کہا ہے 
’’یہ ایوان حکومت کی جانب سے تعلیمی اداروں میں تبلیغی جماعتوں پر پابندی کی شدید مذمت کرتا ہے، جبکہ یہ تبلیغی جماعتیں فرقہ واریت سے پاک ہیں اور دہشت گردی سے روک کر امن کا درس دیتی ہیں اور ان کے کام میں کوئی متنازعہ بات نہیں۔ یہ پوری دنیا میں تعلیمی اداروں کے اندر دین کا کام کر رہی ہیں ،جس کا عملی مظاہرہ رائے ونڈکا اجتماع ہے ۔ اس کی وجہ سے لاکھوں انسانوں کی زندگی میں خوشگوار انقلاب کا آتا ہے۔ پنجاب کے تعلیمی اداروں میں یہ پابندی نہ صرف ناقابل فہم ،بلکہ مذہبی جذبات برافروختہ کرنے کے مترادف ہے۔ لہٰذا یہ ایوان مطالبہ کرتا ہے کہ مذکورہ پابندی کو فی الفور واپس لیا جائے۔  
یہ بہت مثبت سوچ ہے اور ہم صوبائی اسمبلی کے ممبر جناب موکل صاحب کی اس قرار داد پر انہیں مبارکباد دیتے ہیں۔ حکمرانوں کو ہوش کے ناخن لینے چاہییں اور ایسی اوچھی حرکتوں سے اپنے اور ملک کے نام پر دھبہ لگانے سے اجتناب برتنا چاہیے۔ ہمارے حکمرانوں کو معلوم ہونا چاہیے کہ ترکی میں مصطفی کمال پاشا نے بھی اسلامی اقدار کو عوام کے ذہنوں سے محو کرنے کے لئے اسی طرح کی حرکت کی اور وہاں خلافت کے خاتمے کے بعد سیکولر دستور نافذ کیا تھا۔ عربی زبان ، پردے اور دینی مدارس کو ممنوع قرار دے دیا گیاتھا، حتیٰ کہ حج پر بھی پابندی لگا دی گئی۔
حقائق گواہ ہیں کہ ترک قوم نے اس پابندی کے خلاف بغاوت کی، اگرچہ کئی سال بعد، اور وہ تمام پابندیاں ختم کرائی گئیں، جو اتاترک کے زمانے سے لاگو تھیں۔ ہر چند کہ سیکولر دستور ابھی تک تبدیل نہیں ہوسکا، مگر اس کی طرف بھی پیش رفت جاری ہے۔ پاکستان میں تواللہ کا شکر ہے کہ ملکی دستور اللہ کی حاکمیت اعلیٰ کا اقرار کرتا ہے اور قرآن و سنت کے خلاف کسی قانون کو جائز قرار نہیں دیتا۔ یہ الگ بات ہے کہ اب تک ملک میں پے در پے برسرِ اقتدار آنے والے سیاسی ٹولوں اور باوردی حکمرانوں نے اپنی من مانی کی ہے اور دستور کو پسِ پشت ڈالے رکھا ہے۔
اب موجودہ حکمران جو مسلم لیگ اور قائداعظم کے وارث ہونے کے مدعی بنتے ہیں، ایسی حرکتیں کر رہے ہیں کہ کبھی لبرل ازم کا نعرہ لگتا ہے اور کبھی سیکولرازم کا، کبھی مخلوط تعلیم اور انگریزی زبان کو ملک کا کلچر بنانے کے لئے سرکاری مشینری استعمال کی جاتی ہے تو کبھی صدرِ مملکت کی زبان سے یہ بھی کہلوایا جاتا ہے کہ علماء سود کے حلال کرنے کے لئے کوئی دلائل اور جواز فراہم کریں۔ ایسے تمام اقدامات پر انا للہ ہی پڑھا جاسکتا ہے۔ ہر شخص جانتا ہے کہ پاکستان میں دہشت گردی کے سوتے غیر ملکی قوتوں سے جا ملتے ہیں۔ آرمی چیف نے ٹھیک کہا ہے کہ’’ دہشت گردوں کو بیرونی مدد ملتی ہے۔
 بلوچستان عالمی اور علاقائی طاقتوں کی پراکسی وار کا گڑھ بن گیا ہے۔‘‘ جنرل صاحب نے یہ بات کوئٹہ میں خوشحال بلوچستان سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس بیان کی روشنی میں ان قوتوں کے خلاف حکومت کے تمام اداروں کو مشترکہ پالیسی اختیار کرنی چاہیے، جو پراکسی وار کے ذریعے وطن عزیز کو خون کے سمندر میں ڈبونے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اس عظیم مقصد کے حصول کی خاطر پوری قوم کو بھی اعتماد میں لینا ضروری ہے۔
ہم وقت کے حکمرانوں سے یہی کہیں گے کہ خدا کے لئے بدحواسی یا مایوسی کے عالم میں وہ ایسے اقدام نہ کریں، جو ملک و قوم کو نفع دینے کے بجائے الٹے نقصان دہ ثابت ہوں۔ ایسی حرکتوں سے وہ کہیں کے نہیں رہیں گے ۔نہ خدا ہی ملے گا،نہ وصال صنم ہو گا۔اسلام کے ساتھ وفاداری کے نتیجے میں دنیا اور آخرت دونوں میں بھلائی ملے گی ۔ہم یہ بات حکمرانوں کی خیر خواہی میں کہہ رہے ہیں اور پورے درد دل کے ساتھ بصد ادب عرض کرتے ہیں کہ خدا کے لئے ملک کا قبلہ تبدیل نہ کریں ۔ اسلام کی دعوت و تبلیغ کے لئے آسانیاں پیدا کریں ۔اسی کے نتیجے میں ان شاء اللہ دہشت گردی ختم کرنے میں آسانی ہو گی۔
حافظ ادریس