End of World War II

Members of military choir stand in formation at the Tiananmen Square before a military parade to mark the 70th anniversary of the end of World War Two, in Beijing, China. 
General Douglas MacArthur signs as Supreme Allied Commander during Japan’s formal surrender ceremonies on the battleship USS Missouri in Tokyo Bay in a September 2, 1945 file photo. A ceremony to mark the 70th anniversary of Japan’s formal surrender, marking the end of World War Two, is to be held Wednesday on the same battleship, now anchored at Pearl Harbor, Hawaii.
Japan’s delegation gather to sign the formal surrender document on the U.S. Navy battleship USS Missouri in Tokyo Bay in a September 2, 1945 file photo. 
A local resident watches Russian servicemen marching during a military parade to mark the 70th anniversary of the end of the World War Two in the Far Eastern city of Yuzhno-Sakhalinsk, Russia.
Russian military helicopters fly above servicemen standing in formation during a parade to mark the 70th anniversary of the end of the World War Two in the Far Eastern city of Yuzhno-Sakhalinsk, Russia. 
Soldiers of the People’s Liberation Army (PLA) of China march in formation past the Tiananmen Square before a military parade to mark the 70th anniversary of the end of World War Two, in Beijing, China. 
An honour guest with medals on his coat arrives to his seat to watch a military parade commemorating the 70th anniversary of the end of World War Two in Beijing, China.
Soldiers of China’s People’s Liberation Army (PLA) prepare in front of the Tiananmen Gate ahead of the military parade to mark the 70th anniversary of the end of World War Two, in Beijing, China

طالب علموں کی خود کشی، معاشرتی اقدار پر سوالیہ نشان

یکم ستمبر کی صبح کا آغاز اِس اندوہناک خبر کے ساتھ ہوئی کہ کراچی کے اسکول میں دسویں جماعت کے طالبِ علم نے اپنی ہم جماعت طالبہ کو گولی مار کر خودکشی کرلی۔ یہ خبر صرف خبر نہیں بلکہ پاکستان کے اربابِ اختیار، علماء، اساتذہ کرام اور ثقافت کے نام پر کام کرنے والی این جی اوز کے لئے ایک بڑا چیلنچ ہے۔
چیلنج اِس لیے کہ پاکستانی معاشرہ تیزی سے روبہ زوال ہے۔ یہ واقعہ سوال پوچھنے پر مجبور کرتا ہے کہ کیا اساتذہ علم کی ترسیل کرنے میں ناکام ہوچکے ہیں یا پھر علماء نے فقہاء پر کام کرنا چھوڑ دیا ہے؟ کیا اربابِ اختیار کا دھیان جنرل سیلز ٹیکس تک محدود ہوچکا ہے یا والدین بجلی کے نرخوں اور مہنگائی کی چکی میں پِس کر اپنے بچوں سے غافل ہوچکے ہیں، آخر مسئلہ ہے تو کہاں ہے؟
خودکشی کا مذکورہ واقعہ ہماری آئندہ نسل کی ذہنی کیفیت کا عکس لئے ہوئے ہے۔ اِس واقعہ کا منظر نامہ تو یہ ہے کہ دو محبت کرنے والوں نے پستول کے ذریعے خود کو گولی مار کر زندگی کا خاتمہ کرلیا، جبکہ اس واقعہ کا پسِ منظرمعاشرتی ناہمواری اور اجتماعی غفلت کو قرار دیا جاسکتا ہے۔
یہاں اس واقعہ میں قصور کس کا ہے اس کا تعین کرنا مشکل نہیں، اصل نکتہ اس واقعے میں انسانی حقوق کا غصب ہونا ہے۔ اسلام سے زیادہ انسانی حقوق کسی مذہب نے نہیں دئیے لیکن ان حقوق کے ساتھ اسلام نے کچھ فرائض بھی لازم کئے ہیں، ان حقوق و فرائض کی معرفت ہی تربیت کہلاتی ہے۔ سوال تو یہ ہے کہ اس تربیت کے فقدان میں کس کا کردار ہے؟ درسگاہوں میں استاد علم دینے کے بجائے مزدوری کررہا ہے اور  رٹے رٹائے اسباق، زبانی کلامی علم، عملی ترغیب کہیں نہیں۔ کیا اسکول کے نصاب میں عقائد سے متعلق اسباق نہیں؟ کیا بچوں کو یہ نہیں سکھایا جانا چاہیے تھا کہ زندگی سب سے عظیم نعمت ہے اور اس تحفہِ خداوندی کا شکر کس طرح ممکن ہے؟
اگر بات کی جائے فقہاء کی تو انہیں نئی نسل کے مسائل، معاشرتی ضروریات اور ان سے جڑے مسائل کا ادراک ہی نہیں۔ معذرت کے ساتھ، لیکن اگر علماء اور فقہا کی تفرقہ بازی اور سیاست سے توجہ ہٹے تو معاشرتی اقدار کی پامالی کا اندازہ ہوسکے۔ سب سے اہم ذمہ داری والدین کی ہے، اللہ نے اولاد کو آزمائش قرار دیا ہے اور اِسی لیے اِس کی تربیت ناگزیر ہے۔ حالاتِ زندگی کتنے ہی تلخ کیوں نہ ہوں، اگرچہ معاشی مسائل بھی ہوں لیکن انہیں ہر حال میں اپنی اولاد کی طرف توجہ رکھنی چاہئے، اور ان کی ضروریات، تقاضوں، سرگرمیوں کا خیال رکھنا چاہئے۔
ہمارے معاشرے میں فطرت انسانی پر اثر انداز ہونے والے پہلوؤں کا خیال نہیں رکھا جاتا، بچپن سے ہی مخلوط تعلیمی نظام میں بچوں کو تعلیم کے لئے داخل کرادیا جاتا ہے اور اس کے بعد پھر پیچھے مُڑکر ایک بار بھی نہیں دیکھا جاتا کہ ان تعلیمی اداروں میں کس انداز میں بچوں کی کردار سازی کی جاتی ہے۔ بھلا یہ کیسے ممکن ہے کہ لڑکا اور لڑکی جو کچی عمروں میں اتنا قریب رہتے ہوئے فطرت کے زیرِ اثر ایک دوسرے کی جانب متوجہ نہ ہوں؟ کیا بچپن ہی سے مخلوط تعلیمی نظام میں تعلیم دینی چاہیے یا پھر یہ عمل کالج اور جامعات میں آنے کے بعد ہی ہونا چاہئے، تاکہ طالبعلم شعور کی منزل پر پہنچتے ہوئے جذباتی فیصلوں کے بجائے عقل کا استعمال کرکے فطرت کا ادراک کرسکے۔
حکومت سے میں اس لئے مخاطب ہوں کیونکہ ثقافت کے ہر معاملے کو دیکھنے کے لئے حکومت میں با قاعدہ وزارتیں ہوتی ہیں جو ان معاملات کو دیکھتی ہیں۔ پھر ہمارے اُن اداکاروں کا ذکر کیوں نہ ہو جو سستی شہرت حاصل کرنے کے پاکستان مخالف بننے والی بھارتی فلم کی تو مخالفت کرتے ہیں مگر اُسی بھارت کی جانب سے رام لیلا، عاشقی، اور عشق ذادے جیسی فلموں سمیت وہاں کے کلچر کی پروموشن پر پابندی کی بات کبھی نہیں کرتے، شاید اُس کی وجہ یہ ہو کہ اگر وہ ایسا کریں گے تو عوام کی طرف سے گالیاں پڑیں گے۔ مگر جناب اگر نئی نسل کو بے راہ روی سے روکنے کے لیے گالی بھی کھانی پڑے تو کھا لیجیے کہ اِس طرح کم از کم کسی کی جانب ضائع ہونے سے بچائی جاسکتی ہے۔
اِس لیے اربابِ اختیار سے التماس ہے کہ تھوڑی توجہ اس طرف بھی کریں کہ ثقافتی یلغار کے نتیجے میں ہمارے گھروں میں چلنے والی فلموں کے ذریعے کیا پیغام پہنچ رہا ہے؟ کیا کہیں بھارتی فلموں سمیت ہمارے اپنے ملک میں بننے والے اشتہارات اور فحش قسم کے ڈراموں نے تو ان نوعمروں کو اس مقام پر لا کھڑا نہیں کردیا کہ اگر وہ زندگی میں نہ مل سکے تو کیا بعد از مرگ ملنے کی امید لیے وہ جلدی دوسرے جنم میں چلے گئے! اگر ہم نے آج نہیں سوچا تو خدشہ ہے کہ کل پھر کوئی ایسی ہی بریکنگ نیوز دیکھنا نصیب نہ ہوجائے۔
سید عون عباس

China WWII ‘Victory’ Parade Showcases Military Strength

People’s Liberation Army (PLA) aircraft and vehicles drive in formation past the Tiananmen Gate in Beijing. 
China has put on its biggest display of military might in a parade to commemorate the defeat of Japan in World War II. The event was shunned by many Western leaders but underscored Beijing’s growing confidence in its armed forces. In his opening speech, President Xi Jinping paid tribute to the Chinese people who “unwaveringly fought hard and defeated aggression” from Japan. He also announced that China would cut 300,000 personnel from the People’s Liberation Army, but he did not give a time frame for the troop reduction. 
More than 12,000 troops, mostly Chinese but with contingents from Russia and elsewhere, marched through Beijing’s central Tiananmen Square. They were accompanied by a range of ballistic missiles, tanks and armoured vehicles, many never seen in public before, as advanced fighter jets and bombers flew overhead. For Xi, who presided over China’s biggest event of the year, the parade was a welcome distraction from the country’s plunging stock markets, slowing economy and recent blasts at a chemical warehouse that killed 145 people.

Migrant crisis? No, Europe is facing a moral crisis

Migrants enter Macedonia near Gevgelija after crossing the border with Greece. 
Migrants fall as they rush to cross into Macedonia after Macedonian police allowed a small group of people to pass through a passageway, as they try to regulate the flow of migrants at the Macedonian-Greek border September 2, 2015. Up to 3,000 migrants are expected to cross into Macedonia every day in the coming months, most of them refugees fleeing war, particularly from Syria, the United Nations said last week. 
Migrants enter Macedonia near Gevgelija after crossing the border with Greece.
Macedonian special police forces try to bring order as they regulate the flow of migrants crossing the Greek border into Macedonia, near the village of Idomeni. 
Migrants fall as they rush to cross into Macedonia after Macedonian police allowed a small group of people to pass through a passageway, as they try to regulate the flow of migrants at the Macedonian-Greek border.
A migrant collapses from heat while waiting to cross Greece’s border with Macedonia, near the village of Idomeni. 

 Migrants wait to cross Greece’s border with Macedonia, near the village of Idomeni.

Migrants rush to cross into Macedonia after Macedonian police allowed a small group of people to pass through a passageway, as they try to regulate the flow of migrants at the Macedonian-Greek border. 
A policeman assists a family as migrants try to enter Macedonia near Gevgelija near the border with Greece.
Migrants rush to cross into Macedonia after Macedonian police allowed a small group of people to pass through a passageway, as they try to regulate the flow of migrants at the Macedonian-Greek border. 
A policeman carries a baby to safety as migrants try to enter Macedonia near Gevgelija after crossing the border with Greece. 

Heartbreaking Images of Drowned Syrian Refugee Boy

A young Syrian refugee boy found lying face-down on a beach near Turkish resort of Bodrum was one of at least 12 Syrians who drowned attempting to reach Greece.

Migrants disembark from the passenger ship “Tera Jet”

Refugees and migrants disembark from the passenger ship “Tera Jet”, following their trip from the island of Lesbos to the port of Piraeus, near Athens, Greece. The International Organization for Migration (IOM) says 1,500-2,000 are taking the route through Greece, Macedonia and Serbia to Hungary every day and that there is “a real possibility” the flow could rise to 3,000 daily. 

An African migrant rests after arriving on a fishing boat

An African migrant rests after arriving on a fishing boat at Las Carpinteras beach in the Canary Island of Gran Canaria, Spain. Around 60 people, including six women and a two-year-old child, were aboard the fishing boat, according to local authorities.

پانچ 5 سال بعد غزہ رہائش کے قابل نہیں رہے گا، اقوامِ متحدہ کی رپورٹ……

اقوامِ متحدہ کی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ اگرموجودہ صورتِ حال جاری رہی تو 2020 تک غزہ کا علاقہ رہائش کے قابل نہیں رہے گا۔
اقوامِ متحدہ کے تحت تجارت اور ترقی کی کانفرنس میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ 6 برسوں میں غزہ پر 3 جنگیں مسلط کی گئیں اور 8 سال سے معاشی اور امدادی پابندیوں سے غزہ کا علاقہ شدید متاثر ہوا ہے۔ یہ تباہی انسانوں کی وجہ سے ہوئی اور ان کو دور کرنے کے لیے بھی انسانوں کی تیار کردہ پالیسیوں کی ضرورت ہے۔
کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فلسطینی مرکز برائے انسانی حقوق کے نائب صدر حمدی شکورا نے بتایا کہ گزشتہ سال ایک ماہ سے زائد رہنے والی اسرائیلی جنگ اور حملوں سے 5 لاکھ لوگ اب بھی بے گھر ہیں اور غزہ کے علاقے تباہی کا منظر پیش کررہے ہیں کیونکہ اس کا بہت سا حصہ برباد ہوکر کھنڈر کا منظر پیش کررہا ہے۔
رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غزہ میں متوسط طبقے کے پاس جو کچھ بچا تھا وہ مکمل طور پر تباہ ہوچکا ہے اور پوری آبادی کا انحصار غیرملکی امداد پر رہ گیا ہے۔ غزہ کی مجموعی قومی آمدنی 15 فیصد رہ گئی ہے اور بیروزگاری کی شرح 44 فیصد تک جاپہنچی ہے اور 72 فیصد گھرانے غذائی قلت کے شکار ہیں۔
جنگ کی وجہ سے غزہ اپنی مصنوعات باہر نہیں بھیج سکتا اور گھر بنانے کے لیے سیمنٹ اور اینٹیں تک دستیاب نہیں اور یوں غزہ ترقی کے بجائے پستی کی طرف جارہا ہے یعنی اس کی بحالی کا پہیہ الٹا گھوم رہا ہے۔ 2007 میں حماس کی جانب سے غزہ میں حکومت بنانے کے بعد مصر اور اسرائیل کی جانب سے غزہ شدید پابندیوں اور معاشی ناکہ بندی کا شکار ہے۔
شکورا کے مطابق بین الاقوامی برادی کی جانب سے مدد ’بہت مفید‘ ہے لیکن ان کا ’اصل سیاسی پالیسیوں‘ کے ساتھ عمل کرایا جائے تو غزہ کے لوگوں کی بہت مؤثر انداز میں مدد کی جاسکتی ہے۔ بہت ذیادہ پیسہ دینا مسئلے کا حل نہیں بلکہ ان اسرائیلی اقدامات کو ختم کرنا ضروری ہے جن کی وجہ سے غزہ کی ترقی رکی ہوئی ہے اور غزہ کو ضروری اشیا کی صرف 2 فیصد مقدار ہی فراہم کی جارہی ہے۔
واضح رہے کہ مصر سے خفیہ سرنگوں کے ذریعے غزہ کو تمام ضروری اشیا فراہم کی جاتی تھیں لیکن مصری افواج نے تمام سرنگوں کو بند کرنے کے علاوہ کئی سرنگوں میں پانی چھوڑ دیا ہے جس سے صورتحال مزید خراب ہوگئی ہے۔

Migrants protest as Hungary shutters Budapest train station …

Migrants gesture as they stand in the main Eastern Railway station in Budapest, Hungary. The vast majority of refugees fleeing violence and other migrants escaping poverty first arrive on Europe’s southern and eastern edges but are determined to press on and seek asylum in richer and more generous countries further north and west.
A girl walks past a line of Hungarian police at the main Eastern Railway station in Budapest, Hungary. Hungary is on a major overland transit route from the Middle East and Africa through Greece and the Balkans to Germany. More than 140,000 people have crossed into Hungary from Serbia this year alone. 
Hungarian police officers watch migrants outside the main Eastern Railway station in Budapest, Hungary. “For those refugees who are being persecuted or have fled war, there should be a fair distribution in Europe based on the economic strength, productivity and size of each country,” she told a joint news conference in Berlin with Spanish Prime Minister Mariano Rajoy. 
Migrants rest in an underground station near the main Eastern Railway station in Budapest, Hungary, . For now, however, there is no mechanism in place to distribute refugees or to enforce the so-called “Dublin rules”, which require asylum seekers to apply in the first EU country where they arrive. 
Migrants wave their train tickets and lift up children outside the main Eastern Railway station in Budapest, Hungary. Government spokesman Zoltan Kovacs, when asked why the railway terminus was closed, said Hungary was trying to enforce EU law, which requires anyone who wishes to travel within Europe to hold a valid passport and a Schengen visa.
Migrants wave their train tickets outside the main Eastern Railway station in Budapest, Hungary.